مسائل سے بھری دُنِیا میں ذہنی سکوُُن

Peace

  ؟  ‘‘  یہ  گھمبِیر  آہ  و  نالہ  ہم  زمانوں  سے  سُنتے  آ  رہے  ہیں  ۔   اور  یقیناً  آپ  کے  دِل  کی  آہ  و  پُکار  بھی  یہی  ہو گی  ۔ 

لوگ  تھکے  ماندے  اور  پریشان  حال  ہیں ۔  بِلا شُبہ  اِنہیں  صحیح  سِمت  ،  مشورے  ،  تحفُظ  ،  راہنُمائی  اور  اعتماد  کی  ضروُرت  ہے  ۔  ہم  سبھی  ذہنی  سکُون  کے  متلاشی  ہیں  اور  ہمیں  اِس  کی  ضروُرت  بھی  ہے  ۔ 

ذہنی  سکوُن  ،  ہاں   ،  یہ  کیا  ہی  بیش قیمت  خزانہ  ہے  !  کیا  یہ  خزانہ  ایسی  دُنیا  میں  مُیّسر  ہو  سکتا  ہے  جو  اِس  قدر  جنگ  و  جدل  ، نا  اُمیدی  ،  ابتری  اور  مُصیبتوں  میں  گھِری  ہوُئی ہے  ؟    

 

یہ  عظِیم  جُستجوُ  اب  بھی  جاری  ہے  !  بُہت  سے  لوگ  حصُولِ  دولت  اور  شُہرت  میں  سکُون  تلاش  کر  رہے  ہیں  ۔  دِیگر  اِسے  آسا ئشوں  ،  طاقت  ،  اِختیار  ،  تعلیِم  و  عِلم  یا  پھِر  اِنسانی  رِشتوں  اور  شادی  بیاہ  سے  حاصِل  کرنے  میں  کوشاں  ہیں  ۔  لوگ  چاہتے  ہیں  کہ  اُن  کے  دماغ  عِلم  سے  اور  اُن  کے  بینک  اکاوُنٹ  پیسوں  سے  بھر  جائیں  مگر  اُن  کی  روُحیں  خالی  کی  خالی  ہی  رہتی  ہیں  ۔  بُہت  سے  اور   لوگ  زِندگی  کے  حقائق  سے  چھُپنے  کے  لِیۓ  شراب  اور   منشیِات کا  سہارا  لیتے  ہیں ۔  لیکِن  وُہ  بھی  جِس  سکُون  کی  تلاش   میں  ہیں  وُہ  اُنہیں  مِلتا  نہیں  ۔  وُہ  پھِر  بھی  خُود  میں  خالی  خالی  اور  تنہائی  کا  شِکار  بنے  طرح  طرح  کی  مُصیِبتوں میں  گھِرے  رہتے  ہیں ۔  

  ٓاِنسان  افراتفری میں  

جب  خُدا  نے   اِنسان  کو  خلق   کِیا  تو  اُسے  کامِل  سکوُن  ،  مُسرت  اور  خوُشی  سے  لُطف  اندوز  ہونے  کے  لِۓ  ایک  خوُبصوُرت  باغ  میں  رکھا  ۔  لیکِن  جب   آدم ؔ  اور  حوّاؔ  نے  گُنا ہ  کر  لِیا  تو  وُہ  فوراً   احساسِ  جُرم  میں  مُبتلا  ہو 

  ہو  گئے  ۔  جہاں  پہلے  وُہ  خُدا  کی  حضُوری   کے  مُنتظر رہتے  تھے  ،  اَب  اُنہوں  نے  خُود  کو  شرم  سے  چِھپا  لِیا  ۔  وُہ  جِس  سکوُن  اور  خُوشی  سے  پہلے  سرشار  تھے  ،  اَب  اُس  کی  جگہ  احساسِ  جُرم  اور  خوف نے لے  لی ۔  اِنسان  کا  گُناہ  ہی  افراتفری  سے  بھری  ہُوئی  دُنیا  اور  اِنتشا ر  زدہ   ذہن  کا  آغاز  تھا  ۔

بے  شک  ہماری  رُوح  خُدا  کے  لِۓ  ترستی  ہے  لیکِن  ہماری  گُنہگار  فِطرت   اُس  کی  راہوں  سے  بغاوّت  کر  دیتی  ہے  ۔  یہ  باطنی کشمکش  ہمارے  اندر  تناؤ  اور  ابتری  پیدا  کر  دیتی  ہے  ۔ جب  ہم  آدمؔ  اور  حوّاؔ  کی  طرح  اپنی  خواہشات  اور   اپنے  اِرادوں  میں  خُود  مرکزئیت  کا  شِکار   ہو  جاتے  ہیں  تو  ہم  بے  چینی   اور  خوف  میں  مُبتلا  ہو  جاتے  ہیں  ۔  جِتنی  زِیادہ  ہم  اپنے  آپ  پر  توجہ  دیتے  ہیں  ،  اُتنا  ہی  زیادہ  ہم  پریشان  ہوتے  چلے  جاتے   ہیں  ۔  زِندگی  کی  غیر  یقِینیاں  اور  مسلسل  بدلتی   ہُوئی  یہ   گلتی  سڑھتی  دُنیا  ہمارے  احساسِ  تحفُظ  کو  ہِلا  دیتی  ہیں  اور  ہمارے   سکوُن کو  تہ  و  بالا  کر  دیتی  ہے  ۔ 

یسوُعؔ  مسِیح ،  امن  و  اِطمِینان  کا  شہزادہ 

جب  تک  زِندگی  کے  تمام  پہلُو  اُس  ذات  اقدس  کے  ساتھ  مطابقت  میں  نہیں  لاۓ  جاتے  جِس نے  ہمیں  بنایا  ہے  ،  اور  جو  ہمیں  سمجھتا ہے  ،   ہمیں  کوئی  سکُون  نہیں  حاصِل  ہو  سکتا  ۔  کِیونکہ  ایسا   صِرف  مسِیح  کو  مکمل  طور  پر  سپُردگی  سے  ہی  مُمکِن  ہے  ۔  دہ  نہ  صِرف  دُنیا  کا  مالِک  ہے  بلکہ  وُہ  ہماری  زِندگی  کو  شُروع  سے  لے  کر  آخِر   تک  جانتا  بھی  ہے  ۔    وُہ  اِس  دُنیا  میں  آیا  تاکہ  اُنکو  جو  اندھیرے  اور  موت  کے  سایہ  میں  بیٹھے  ہیں     اُنہیں  روشنی  بخشے  اور  ہمارے  قدموں  کو  سلامتی  کی  راہ  پر  ڈالے  (  لوُقا  ۱   باب  کی  ۷۹   آئت  )  کے  مُطابِق  جب  وُہ  دُنیا  میں  آیا  تو   وُہ  ہمارے  مُتعلق  ہی  سوچ رہا  تھا  ۔ 

یسُوعؔ  تاریکی  کے  بدلے   نُور   ،  جنگ  و  جدل  کی  جگہ  امن  ، غم  کی  جگہ  خوُشی  ،  نا اُمیدی  کی  جگہ  اُمِید  اور  موت  کی  جگہ  زِندگی  بخشتا  ہے  ۔  یوحنا  ۱۴      ۲۷   میں  وہ  فرماتا   ہے    ’’  مَیں  تُمہیں  اِطمینان  دِیے  جاتا  ہُوں  ،  جِس  طرح   دُنیا  دیتی  ہے  ،  مَیں   تُمہیں  اُس  طرح  نہیں  دیتا  ۔  تُہارا  دِل  نہ   گھبراۓ اور  نہ   ڈرے  ۔  

توبہ  ذہنی  سکُون  دِلاتی  ہے  ۔

جب  آپ  خُود  کو  گُناہ  کے  بھاری  بوجھ  تلے  دبا  محسُوس  کرتے  ہیں  تو  اِس  کا  عِلاج  یہ  ہے  ۔  ’’  پَس  توبہ  کرو  اور  رجُوع   لاؤ   تاکہ  تُمہارے  گُناہ  مِٹاے ٔ  جائیں 

 (  اعمال  ۳      ۱۹  )    یسُوعؔ  آپ  کو  یہ  معنی  خیز  اور  زِندگی  بدل  دینے   والا  تجربہ   حاصِل  کرنے  کی  دعوت  دیتا  ہے  ۔  وُہ  فرماتا   ہے     ’’  اے  محنت  اُٹھانے  والو   اور  بوجھ  سے  دبے  ہُوۓ  لوگو  ،  سب  میرے  پاس   آؤ  ، 

مَیں  تُم  کو  آرام  دُوں  گا  ۔  (  متی ؔ  کی  اِ نجیل  اا   باب  ۲۸    آئت  )  نیِز  پہلا  یُوحنا ؔ  ۱   باب  ۹   آئت  میں  اُس  نے  وعدہ  کِیا  ہے    ’’  اگر  ہم  اپنے  گُناہوں  کا  اِقرار  کریں  تو  وُہ  ہمارے  گُناہوں  کو  مُعاف  کرنے   اور ہمیں  ہماری  ساری  ناراستی  سے  پاک  کرنے  میں  سچّا  اور  عادِل  ہے  ۔ ‘‘  کیا  آپ  اِس  دعوت  کو  قبُول  کرنے  کے  لیۓ  تیار  ہیں  ؟ 

جب  آپ  یسُوعؔ  کے  پاس  آئیں  گے  تو  اپنے  گُناہوں  کی  مُعافی  اور  حقیقی  آزادی  پائیں  گے  ۔  نفرت  اور   بُغض  کی  بجاۓ   آپ  کا  دِل  مُحبّت  سے  بھر  جاۓ  گا  ۔  جب  یسُوع ؔ  آپ  کے  دِل  میں  ہو  گا  آپ  اپنے  دُشمنوں  سے  بھی  پیار  کرنے  لگیں  گے  ۔  یہ  سب  مسِیح ؔ کے  نجات بخش  خُون  کی  بدولت  ہی  مُمکِن  ہے  ۔ 

دائمی  سکوُن 

 مسیحی  ہوتے  ہُوے ٔ  خُدا  پر  اِیمان  اور  اُس  کے  تحفُظ  پر  بھروسہ  ہی  خوف  اور  پریشانی  کا  مؤثر  تریاق  ہے  ۔  خُدا  پر  بھروسہ  رکھنا  ، جو  ازل  تا   ابد  لا تبدل  ہے  ،  کِس  قدر  اِطمینان  بخش  ہے  ۔  وُہ  ہم  سے  مُحّبت  رکھتا  ہے  اور  ہماری  حفاظت  و  نِگہبانی  کرتا   ہے  ۔  تو  پھِر  ہم  کیوں  ڈریں  یا  گھبرائیں  ؟  کیوُں  نہ  ہم  ویسا  کرنا  سیکھیں  جیسا  کہ  ہم  ۱   پطرس  ۵      ۷    میں  پڑھتے  ہیں      ’’  اور  اپنی  ساری  فِکر  اُسی  پر  ڈال  دو  کیونکہ  اُس  کو  تُمہاری  فِکر  ہے  ‘‘  ہمارے  پاس  یہ  خُوبصُورت  وعدہ  بھی  ہے   

’’  جِس  کا  دِ ل  کا قائم  ہے  تُو  اُسے  سلامت  رکھے  گا  ،  کِیوُنکہ  اُس  کا  توّکل  تُجھ  پر  ہے  ۔   یُسعیا ہؔ  ۲۶      ۳ 

آپکے  دِل  میں  یسُوع ؔ  کی  موجُودگی  نے  آپکی  سکُون  کی  تلاش  ختم  کر  دی  ہے  ۔  وُہ  آپکو  ایسا  سکُون   بخشے  گا  جو  آپکو  صِرف  اُس  پر  بھروسہ 

کرنے  سے  ہی  مِل  سکتا  ہے  ۔  اِس  شخصی  تجربہ  کے  بعد   آپ  بھی  کہہ  سکیں  گے    مَیں  نے  ایسا  سکوُن  پا  لیِا  ہے  جیسا  مُجھے  پہلے  کبھی  حاصِل  نہ  تھا  ۔  اب میں  ایک  ایسے  مقام  پر  ہُوں  جہاں  چاہے  آندھِیا ں  چلیں  یا  طُوفان  آئیں   ،  مُجھے  کُچھ  فرق  نہیں  پڑنے  کا  کیونکہ  اب  مَیں  ہمیشہ  اپنے  مالِک  کے  ساتھ  کامِل  اِطمینان  میں  رہتا  ہُوں  ۔ 

افراتفری  سے  بھری  اِس  دُنیا   میں  آپ  کو  ذہنی  سکُون  مُیّسر  ہو  جاۓ  گا   ۔  اپنے  دِل  کا   دروازہ  مسیح ؔ  کے  لِۓ  کھول  دیں  ۔  ابھی  اور  اِسی  وقت  !   اور  وُہ  ایک  دِن  آپ  کے  لِۓ  آسمان  کے  دروازے  کھول  دے  گا  ،   جہاں  کامِل  سکُون  کی  دائمی  حُکمرانی  ہو  گی  ۔   خُدا  آپکو  برکت  دے  ۔ آمِین    

آپکی روُح کی جنگ

A shield and sword

فرانس  کے  بڑے  شہر  پیرس  میں  جنرل  نپولین  کی  یاد  میں  اُس  کا   ایک  عالی  شان   مُجسمہ  نصب  کِیا  گیا  ہے  ۔   اٹھارویں  صدی  کے  اختتام  اور  اُنیسویں  صدی  کے  آغاز  میں  وُہ  یورپ   میں  دہشت  اور  خوف  کی  علامت  بن  چُکا  تھا  ۔  اُسکی   مشہوُور ِ  زمانہ  فتوُحات  اِس  حد  تک  پُہنچ  گئیں  کہ  سِواۓ  اِنگلستان  کے  تقریباً  تمام  یورپ 

اُسکے  ماتحت ہو  چُکا تھا  ۔   یہ  بُلند  نظر  جنرل  ساری  دُنیا  کو  اپنے  زیرِ  اثر  لانے  کے  خواب  دیکھ  رہا  تھا  ۔ 

پیرس ؔ  میں  ’’  محراب  الفتوُحات  ‘‘   نامی  ایک  یادگار  ہے  جِس  پر  اُن  تمام  جنگوں  اور  فتوُحات  کی  فہرست   درج ہے  جو  نپولین ؔ  نے  اپنی  زِندگی  میں  حاصِل  کیں  ۔   تاہم  اِس  فہرست  میں  سے  ایک  معرکے  کا   ذِکر  نہیں  اور  وُہ  ہے  جنگِ  واٹرلُوؔ  ۔  کیوں  ؟  اِس  لِۓ  کیونکہ  نپولین ؔ  یہ  جنگ  ہار  گیا  تھا  ۔    حالات  بدل  چُکے  تھے  ۔  اُسکے  تمام  منصوُبے  خاک  میں  مِل  گۓ  کیونکہ  وُہ  اپنی  زِندگی  کا  سب  سے  اہم  معرکہ  ہار  گیا  تھا  ۔  اِس  کے  بعد  اُسے  جلاوطن  کر  دِیا  گیا   اور  وُہ    ایک  نہائت  ہی  ناپسندیدہ  شخص  کی  طرح  مرا  ۔

 

نپولین ؔ  کو   ساری  دُنیا   فتح  کر  کے  بھی  کیا  حاصِل  ہوتا  اگر  آخِر  میں  واٹرلُو ؔ  پر  اُسے   اپنا  سب  کُچھ  ہارنا  ہی  تھا  ۔   اُسکی  شان  و  شوکت  ،  شُہرت   اور  مال  و  دولت  سب  گھڑی  بھر  میں  جاتے  رہے  ۔  یہ  عِبرتناک  شکست   اُسکے  ماضی  کی  تمام  فتوُحات  پر  بھاری  ثابت  ہوُئی  ۔  یہ  معرکہ  ہارنے  کی  وجہ  سے  وُہ  اپنا  کُچھ  سب  ہار  گیا  ۔ 

 

ہر  ذِمہ  دار  روُح   زندگی  میں  بڑے  بڑے  مُشکِل  اِمتحانوں  اور  مرحلوں  میں  سے  گُزرتی  ہے  ۔  اِن  اِمتحانوں  اور  مرحلوں  کے  نتائج  بڑے  ہی  گمبھیر  اور  بڑی  ہی  اہمیت  کے  حامِل  ہوتے  ہیں  ۔  واٹڑلُو  کی  شکست  نپولینؔ  کے  لِۓ  اِس  دُنیاوی  زِندگی  میں ہی  بڑی  ذِلت  و  رُسوائی  لانے  کا  سبب  بن  گئی  ۔  آپکی  روُح  کی  جنگ  کی  شکست  آپکے  لِۓ  ابدی  رنج  و  الم   اور  اذیت  کا  باعث  بن  سکتی  ہے  ۔   کیا  آپ  نے  کبھی  خُود  مرکزیت  کی  شکار  مسیحؔ  سے  الگ  زِندگی  کے  نتائج  پر  غور  کِیا  ہے  ؟ 

 

 

کیا  آپ  نے  کبھی  سوچا  ہے  کہ  کہیں  آپ  بھی  اپنی  زِندگی  کی  جنگ   تو  ہارنے  نہیں  جا رہے  ہیں  ؟  یعنی  زِندگی  اور  موت  کی  جنگ  ؟  آسمان  اور  دوزخ  کی  جنگ  ۔  خُودی   اِنکاری  اور  خُود  پرستی  کی  جنگ  ۔  آپکی  رُوح  اور  ابلیسؔ  کی  جنگ  ۔   یسوُعؔ  نے  فرمایا  ۔ 

 

ــ’’  اور  آدمی  اگر  ساری  دُنیا  کو  حاصِل  کرے  اور  اپنی  جان  کا  نُقصان  اُٹھاۓ  تو  اُسے  کیا  فائدہ  ہو  گا  ؟  (مرقس  ؔ  ۸   باب  ۳۶   آئت  ) 

 

اِس  فِطری  دُنیا  کا  بُہت  کم  یا  بُہت  زیادہ  مال  ہمارے  پاس  ہو  اور  ہم  اپنی  روُح  کو  کھو  دیں  تو  یہ کیسی  ہی  المناک   بات  ہو گی  ۔  ہماری  ابدی  تقدیر  کا  فیصلہ  ہو  جاۓ  گا  ۔  بُہت  سے  لوگوں  کو  اِس  بات  کا  احساس  نہیں  کہ  ہمیں  ایک  سخت  اور  کٹھن  روُحانی  جنگ  کا  سامنا  ہے  ۔  ابلیسؔ  اور  دُنیاوی  آسائشوں  نے  اُنکی  سمجھ  کو  موقُۡوف  کر  کے  رکھ  دیا  ہے   اور  وُہ   گُناہ  کے  خِلاف   اِس  جنگ  کی  سنگینی  سے  غافل  ہیں  ۔  بائبل  مُقدس  میں  لِکھا  ہے    ’’  اے  سونے  والے  جاگ  اور  مُردوں  میں  سے  جی  اُٹھ  ،  تو  مسیح ؔ  کا  نُور  تُجھ  پر  چمکے  گا  ۔  ‘‘   (  اِفسیوںؔ  ۵      ۱۴   )

  گُناہ  اور  ابلیس  ؔ   کے  بندھنوں  کو  اُتار  پھینکیں  ۔  ہمیں  اِس  جنگ  کو   ہر  قیمت  پر  جیتنا  ہے  ۔   ہم  فِطری  و  جسمانی   موت  سے  تو  بھاگ  نہیں  سکتے  لیکِن  ابدی  موت  سے  خُود  کو  بچا  سکتے  ہیں  ۔  ’’  پھِر  موت   اور  عالمِ  ارواح  آگ  کی  جھیل  میں  ڈالے  گۓ  ۔  ‘‘  (  مُکاشفہ  ۲۰      ۱۴   )  ’’  جہاں  اُنکا  کِیڑا  نہیں  مرتا  اور  آگ   نہیں  بُجھتی  ۔  ‘‘  (  مرقس  ؔ  ۹      ۴۴    )  اگر  آپ  اپنی  روُح  کی   نجات  کی  جنگ   ہار  جاتے  ہیں  تو  پھِر  سامنے  صِرف  ابدی  بربادی  اور  جہنم  کی  اذیت  ہے  ۔  

 

کیا  آپ  نے  کبھی  سوچا  ہے  کہ  آپ کے  اور  آپکی   موت  کے  درمیان  صِرف  ایک  قدم  کا   فاصلہ  ہے  ؟  کیا  آپ  وقت  کی  اِس  دہلیز  کو  پار  کر  کے  ابدیت  میں  داخِل  ہونے  کے  لِۓ  تیار  ہیں  ؟  وُہ  فتح  حاصِل  کرنے  کے  لِۓ  جو  ہمیں  ہمارے  آسمانی  گھر  تک  لے  جاۓ  گی  آپکو  مسیحؔ  کے  پاس  آنا  ہوگا  جو   ’’   گُنہگاروں  کو   نجات  دینے  کے  لِۓ  دُنیا  میں  آیا   ۔  ‘‘  خُدا  سب  آدمیوں  کو  ہر  جگہ  حُکم  دیتا  ہے  کہ  توبہ  کریں  ‘‘ َ  ۔  ( ۱عمال  ۱۷       ۳۰   )  ابھی  !  کل  نہیں  یا  پھِر  کِسی  اور   مُناسب  وقت  ۔  ’’  دیکھو   اب  قبوُلیت  کا

 

وقت   ہے  ۔  دیکھو  یہ  نجات  کا  دِن  ہے  ‘‘   (  ۲   کرنتھیوں  ۶      ۲    )  اگر  ابھی  تک  آپکے  دِل  میں  مسیح  ؔ نہیں  ،  اگر  آپکا  ماضی  آپکو  ملامت  کرتا  ہے  ،  اگر  آپ  نے  ابھی  تک  نئے  سِرے  سے  پیدا  ہونے  کا  تجربہ       حاصِل  نہیں  کِیا   (  یوُحناؔ  ۳      ۳    )   تو   بے  فِکر  ہو  کر   بیٹھے  نہ  رہیں  ،  توبہ  کریں  ،  جِس  حال   میں  بھی   ہیں  جیسے  بھی  ہیں  مسیحؔ  کے  پاس  آئیں  ۔   ابھی  جبکہ  وُہ  آپ  کے  دِل   کے  دروازے  پر  کھڑا  دستک  دے  رہا   ہے  ۔  اُس  نے  کہا  ،  ’’  اگر  کوئی  میری  آواز  سُن  کر  دروازہ  کھولے  گا  تو   مَیں  اُس  کے  پاس  اندر  جا  کر 

اُس  کے  ساتھ   کھانا  کھاؤں  گا  اور  وُہ  میرے  ساتھ  ‘‘   (  مُکا شفہ  ۳      ۲۰   )  آپ  پوُچھیں  گے  ،  ’’  کیا  کوئی  گُنہگار  واقعی  بچایا  جا  سکتا  ہے  ؟  ‘‘   ہاں  !  اِیمان  رکھتے  ہوُۓ  اپنے  پوُرے  دِل  کے  ساتھ  اُس  کے  پاس  آئیں  اور  اُسے  اپنا  شخصی  نجات  دہیندہ  کے  طور  پر  قبُول  کریں  ؛  اپنے  گُناہوں   سے  توبہ  کریں   اور  پاک  روُح  کی  آواز   کے  شِنوا  ہوں  ۔  تبھی  آپ  اپنی  روُح  کی  جنگ  جیت  سکیں  گے  ۔  یوُں  آپ  نہ  صِرف  اِس  زِندگی  میں  اِطمینان  اور  خوُشی  حاصِل  کریں  گے  بلکہ  اپنے  نجات  دہِندہ  کے  ساتھ  ابدی  حیات  کی  خُوشیوں   اور   اُس کے  جلال  میں  شامِل  ہوں  گے  ۔  

 

ہزاروں  سال  پہلے  حِزقی  ایل ؔ  نبی  نے  فرمایا    ’’  لیکِن  اگر شریر  اپنے  تمام  گُناہوں  سے  جو  اُس   نے  کِۓ  ہیں  باز  آۓ  اور  میرے  سب  آئین  پر  چل  کر  جو  جائز  اور  روا  ہیں  کر  تو  وُہ  یقیناً  زِندہ  رہے  گا  ۔  وُہ  نہ  مرے  گا  ۔  ‘‘   (  حِزقی  ایل   ۱۸      ۲۱   ) 

 

اگر  آپ  صِرف   اِس  گُنہگا ر  دُنیا  کی  لُزتیں  حاصِل  کرنا  چاہتے  ہیں  تو  واٹر  لوُؔ  میں   نپولینؔ   کی   شکست  کی  طرح  آپ  بھی  آخِر  میں  اپنی  روُح  کی  شکست  سے  دوچار  ہوں  گے  ۔   بغیر   نجات  دہِندہ  کے  آپ  اُس  ڈوُبتے  ہوُے  شخص  کی  طرح  ہیں  جِس  کا  کوئی  یار  و  مدد گار  نہیں  اور  جو   یقیناً  برباد ی  کی  راہ  پر  گامزن  ہے      ۔  کیا  ہی  بدنصیبی  کی  بات  ہوگی  کہ  کوئی  شخص  آخِر  میں  ہمیشہ  کی  زِندگی  کی  جنگ  ہار  جاۓ  اور  دوذخ  کا  سزاوار  ٹھہرے  ۔    پس  بغیر   مذید   دیر  کِے ٔ   مسیحؔ  کا  ہاتھ  تھام  لیں  جو  کہ  آپکی  زِندگی   کا  سب  سے  بڑا   ضامن  ہے  ۔  وُہی  آپ  کو  ہر  طرح  سے  محفوُظ  رکھے  گا  ۔  (  عبرانیوں  ۷    باب  ۲۵   آئت )  ۔  تصًور کریں  ،   آسمان  پر  ابدیت  !   پِھرآپ  بھی   آخری  معرکے  کے  بارے  پولوُس ؔ  رسوُل  کی  طرح  کہہ  سکیں  گے   ’’  خُدا  کا  شُکر  ہے  جو  ہمارے  خُداوند  یسوُع ؔ  مسیح  کے  وسیلہ  سے  ہم کو  فتح  بخستا  ہے  ۔‘‘ 

 

اے  روُح   !  تیرے  پاس  فتح  یا  شکست  کا  اِنتخاب  ہے  ،  آسمان  کا  یا   جہنم  کا  ،  زِندہ   خُدا  کا  یا  ابلیس ؔ  کا  ؛  ہمیشہ  کی  خُوشیوں  بھری  جلالی  حیات  یا  پِھر  کبھی  نہ  ختم  ہونے  والے  دُکھ  اور  اذیتیں  ۔      ’’  میںَ  نے   زِندگی  اور  موت  کو  اور   برکت  اور  لعنت  کو  تیرے  آگے  رکھا   ہے  پس   توُ  زِندگی  کو   اِختیار  کر   کہ  تُو  بھی  جیتا  رہے  اور  تیری  اولاد   بھی  ۔  (  اِستشنا   ۳۰    باب  ۱۹   آئت  )  مسیحؔ  کا  اِنتخاب  کریں  ،  آج  ہی  ۔               

آسمان آپکا مُستقبِل کا گھر ؟

آپکا  مُستقبِل  کیسا  ہو گا  ؟

کون  اپنے  مُستقبِل  کے  بارے  سوچ  سکتا  ہے  بغیر  اِس  بات  کو   خاطِر  میں  لاۓ  کہ  کیا  موت  کے  بعد  بھی    حیّات  ہے  ؟  اِنسان  اپنے  ذہن  سے  موت  کے  بعد  کے  مُمکِنہ  احوال  کے  خیالات   سے  چھُٹکارا  نہیں  پا   سکتا  لیکِن  اُسکی  کوشِش  ضروُر   ہوتی  ہے  کہ  وُہ  اِن  خیالات  کو  اپنے  ذہن  سے  نِکال  باہر  کرے  ۔   وُہ  موت  ،  جنت  اور  جہنم   کے   خیالات  کو   کہیں  دُور  مُستقبِل  میں  ڈال  کر   اپنے  آپ  کو  اِس  زِندگی  کے  مُعاملات  میں  مصروُف  کر  لیتا  ہے  ۔  (  متیؔ  ۲۴      ۴۸   ؛  واعظ ؔ  ۸      ۱۱    )  لیکِن  سچائی  تو   یہ  ہے  کہ   بہ دیر  یا  جلد  ہمیں  ایک  اِنتخاب  تو  کرنا   ہی  ہے  ۔  اگر  ہم  اِس  سوال  کے  بارے  نہیں  سوچتے  تو  ہم  یقیناً  ہمیشہ  کے  لِۓ  بھٹک  چُکے  ہیں  ۔

 

  منزلیں   صِرف  دو   ہی  ہیں   

  آسمان  کا  جلال  اور  دوزخ  کی  دہشت  ہمیں  قائل  کرتی  ہے  کہ  ہم  آسمان  کو  اپنی  ابدی  منزل  بنائیں  ۔  اگر  ہمیں  اِس  اِنعام  کو  پانا  ہے  تو  پھِر  ہمیں  ایک  اِنتخاب  اور  ایک  فیصلہ  کرنا  ہو گا  ۔   یہ  تو  یقینی  بات  ہے  کہ  گُناہ  دوزخ  میں  داخِل  نہیں  ہو  سکتا  ۔  اُن  سب  کے  لِۓ  دوزخ  میں  ہمیشہ  کی  سزا  ہوگی  جو  اِس  زِندگی  میں  اپنے  گُناہوں  کی  معافی  کے   طلبگار  نہیں  ہوتے  ۔   ’’  اور  یہ  ہمشہ  کی  سزا  پائیں  گے  مگر  راستباز   ہمیشہ  کی زِ ندگی  ۔  (  متیؔ  ۲۵      ۴۶   ) 

آسمان  ۔  تمام  نجات  یافتہ  لوگوں  کا  گھر  

نجات  یافتہ  لوگوں  کے  لِۓ  جو  کہ  مسیح ؔ  کے   خوُن  سے  دھوۓ  گۓ  ہیں  ،  آسمان  ایک  خاص  مقام  ہے  ۔  (  مُکاشفہ  ۷   باب   ۱۳   اور   ۱۴   آیات  )  یہ  اُنکا  گھر  ہے  ۔  اِس  آسمانی  گھر  کی  خواہش  زبوُر  نویس  کی  آرزُو   جیسی  ہے  ۔  (  زبُور   ۶۳       ۱   )   ’’  خُشک  اور  پیاسی  زمین  میں  میری  جان  تیری  پیاسی  اور  میرا  جِسم  تیرا  مُشتاق  ہے  ۔ ‘‘   لیکِن  وُہ  جو  جسمانی  اور  دُنیاوی  سوچ  کے  مالک   ہیں  ،  اُنکے  لِۓ  آسمان  ایک  بُہت  ہی  دُور  دراز  کی  چیز ہے  ۔  جو  شخص   خُدا  کے  پاک  روُح  پاک  سے  پیدا  ہُوا  ہے   اُسکے  لِۓ   آسمان   بُہت  ہی  نزدیک  اور  ایک  حقیقت  ہے  ۔  وُہ  دُنیا  میں  ہی  اپنے   ابدی  آسمانی  گھر  جیسا  احساس  پا  لیتا  ہے  ۔

سچائی  ،  اِنکساری  ،  پاکیزگی   اور  مُحبّت  جیسی  خُوبیاں  جو  مسیحؔ  نے  عملی   نموُنے  کے  طور  پر  پیش  کیں  ،  خُدا  کے   فرزند  ہونے  کے  ناطے  سے  ہمارے  لِۓ  بڑی  بیش  قیمت  بن  جاتی  ہیں  ۔  ہمارا  دِل  اِن  مسیحی  فضائل   کی  کاملِیّت  اور  اور پاکیزگی  کے  لِۓ  تڑپتا  ہے  ۔  (  ۲   کرنتھیوں  ۵      ۱   ) 

 

آسمان  ۔  ایک  نُورانی  مقام  

ہماری  زمینی  زِندگی   میں  بُہت  سے  اُتار  چڑھاؤ  آتے  ہیں  ۔  ہم  بُہت  سی  ایسی  چیزوں  کا  سامنا  کرتے  ہیں  جو  ہماری  سمجھ  سے  باہر  ہوتی  ہیں  ۔  ہماری  خواہش  ہوتی  ہے  کہ  ہم  اپنے  مُستقبِل  میں  جھانک  سکیں  لیکِن  ہم  ایسا  کر  نہیں  پاتے  ۔   نتیجتاً   ہم  مایُوسیوں  میں  گھِر  جاتے  ہیں  ۔  یہ  سب   باتیں  تاریکی  سے  تاویل  کی  جا سکتی  ہیں   ۔

آسمان  صِرف  روشنی  کا  مسکن  ہے  ۔  یہ  وُہ  مقام  ہے  جہاں  خُدا  موجوُد  ہے  ۔   ’’  خُدا  نُور  ہے  اور  اُس  میں  ذرا بھی  تاریکی  نہیں  ۔  ‘‘   (  ۱   یوُحنا ؔ  ۱      ۵   )  اُسکی  روشنی  میں  کامِل  فہم  ہے  ۔  اُسی  میں  ہمارا  عِلم  تکمیل  پاتا  ہے ۔  اُس  میں  ہمارے  ماضی  کی  تمام  خطائیں  اور  گُناہ  مِٹ   جاتے  ہیں  ۔  اِس  روشنی  میں  باپ  اور  وُہ  سب  جو  اُس  میں  قیام  کرتے  ہیں   ،  کے  درمیان  مکمل  رفاقت  ہو  جاتی  ہے  ۔ 

 

آسمان  کو   ’’  نُور  کے  ساتھ  مُقدسوں  کی  میراث  ‘‘   قرار  دیا  گیا  ہے  ۔  (  کُلسیوں  ۱      ۱۲   )  کلامِ ِ  مُقدس

میں  روشنی  یا  نُور  کی  صفات  یا  اوصاف   میں  عِلم  ،  پاکیزگی  اور  مُسّرت  نُمایاں  طور  پر  بیان  کِۓ  گۓ  ہیں  ۔   اِس    آسمانی  روشنی  یا  نُور  میں  کبھی  کوئی  خلل  نہیں  آتا  بلکہ  یہ  ہمیشہ  جاری  و  ساری  رہتی  ہے  ۔    ’’  اور  وہاں  کبھی   رات  نہ  ہوگی  ۔‘‘   (  مُکاشفہ  ۲۱      ۲۵   ) 

 

 ٰآسمان  ۔  خوف  اور  گُناہ  سے  پاک  مقام   

 

’’  اور  اُس  میں  کوئی  ناپاک  چیز  یا  کوئی  شخص  جو  گھنونے  کام  کرتا  ہے  یا  جھُوٹی  باتیں  گھڑتا  ہے  ہر  گِز   داخِل  نہ  ہو  گا  ۔  (  مُکاشفہ   ۲۱       ۲۷   ) 

حوصلہ  شِکنیاں   ،   مایوُسیاں   ،  آزمائیش  اور  گُناہ  سب  زمینی  زِندگی  کا  حِصہ  بخرہ  ہیں  ۔  یہ  کبھی  بھی  آسمان  کے  خُوبصُورت  مقاموں  میں  داخِل  نہیں  ہو  پائیں  گے  ۔ 

 

مُکاشفہ  ۲۱      ۴   میں  ہم  پڑھتے  ہیں  ،  ’’  اور   وُہ  اُنکی  آنکھوں  کے  سب  آنسوُ  پونچھ  دے  گا  ۔  اور  اِسکے  بعد  نہ  موت  رہے  گی   اور  نہ  ماتم  رہے  گا   ۔  نہ  آہ  و  نالہ  نہ  درد  ۔  پہلی  چیزیں  جاتی  رہیں  ۔‘‘    ایک  مسیحی  کے  لِۓ  آسمان  ہمارے  آرام  کی  تکمیل  ہے  ،  اور  ہمارے  سفر  کا  اختتام  ۔  ایک  مسیحی  جانتا  ہے  کہ  جیسے  خُدا  نے   اُسکے  دُنیا  میں  آنسوُ  پونچھ  دِۓ  ہیں  اُسی  طرح   آسمان  کی   کامِل  بادشاہی  میں  اُسکے  سب  دُکھ  درد  مِٹ  جائیں  گے  ۔ 

 

بچاۓ  جانے  والوں  کی  حیاّتِ  جاوِدانی    

 

اِس  زمین  پر  اِنسانی   رِشتے  ہم   سب  کے  لِۓ  بڑی  اہمیت  رکھتے  ہیں  ۔  دُوسروں  کی  خُوشیاں  اور  غم  ہمارے  جذبات  کو   مُتاثر  کِۓ  بغیر  نہیں  رہتے  ۔    خاندنی  رِشتے   ہمارے  لِۓ  بڑے معنی  رکھتے  ہیں  اور  اپنوں  سے  جُدائی  بڑی  ہی  درد ناک  ثابت  ہوتی  ہے  ۔  لیکِن  یہ  سب  ہمارے  اِنسانی  وجوُد  کا  لازمی  حِصہ  ہیں  ۔ 

 

جب  یسوُع ؔ  عدالت  کے   لِۓ  دوبارہ   آۓ  گا  تو  سب  چشمِ  زدن  میں  بدل  جائیں  گے  ۔   مُردے  زِندہ  ہو  جائیں  گے  ۔  فانی  بدن  جو  بدی  اور   گُناہ  کی  بدولت  گلنے  سڑنے  سے  بچ  نہیں  سکتا  تب  لافانی  بن  جاۓ  گا ۔  ’’  اور  مُردے  غیر  فانی  حالت  میں  اُٹھیں  گے  اور  ہم  بدل  جائیں  گے    کیونکہ  ضروُر  ہے  کہ  یہ  فانی  جِسم  بقا  کا  جامہ  پہنے  اور  یہ  مرنے  والا  جِسم  حیاتِ  ابدی  کا جامہ  پہنے  ۔ ‘‘  (  ا  کرنتھیوں  ۱۵       ۵۲   ،  ۵۳    )   

  

اِس  نئی  حالت  میں  خاندانی  رِشتے  ہمارے  لِۓ  پہلے  جیسے  معنی  نہیں  رکھیں  گے  ۔  یسوُعؔ  نے  سِکھایا  کہ  آسمان  پر  اُزدواجی  رِشتے  نہیں  ہونگے  ۔  (  متی ؔ  ۲۰   باب   ۳۰    آئت  )  اِس  دُنیاوی   زِندگی  کے  جذبات  خُدا  کی   حضُوری  میں  پائی  جانے  والی  خُوشیوں  کے  سامنے   ماند   پڑ  جائیں  گے  ۔  نجات  پانے  والوں  اور  خُدا  کے  برّے  کے  درمیان  ایسا  کُچھ  نہیں  آۓ  گا  جو   اُنکے  رِشتے  کو  مُتاثر   کر  سکے  ۔   

 

مُقدسین  وُہ  وُہ  مناظر   دیکھیں  گے  جو  فانی  آنکھوں  نے  کبھی  نہ  دیکھے  ہوں  نہ  اُنکا  تصوّر  کیا  ہو   ۔  وُہ  ایسی  نئی  نئی  باتیں  سُنیں  گے  جو  فانی  سماعت  نے  پہلے  کبھی  نہ  سُنی  ہوں  ۔  اور  وُہ   ایسا  حیرت  انگیز  عِلم  حاصِل  کریں  گے  جِو  کبھی  کِسی  کے  دِل   یا  وہم  و  گُمان  میں   بھی  نہ  گُزرا  ہو  ۔  

 

یسوُعؔ  اور  اُسکے  لوگ  جلال  پائیں  گے    

 

   وُہ  دِن  دُور  نہیں    جب  خُداوند  یسوُعؔ  المسیح  دُنیا  پر  بسنے  والے  تمام  لوگوں  پر  ظاہِر  ہوں  گے ۔  ہر  بشر  اُس  کے   سامنے  اپنی  اپنی  عدالت  کے  لِۓ  کھڑا  ہو  گا  ۔  (  متی ؔ   ۲۵       ۳۱    تا   ۳۴    )  اُس  کے  سچّے  پیروکار  اگرچہ  کہ  اِس   دُنیاوی  زِندگی  میں   ا ُن  سے  نفرت  اور  حقارت  سے  پیش  آیا  گیا  ایک  دِن  آسمانی جلال  میں  اُٹھائیں  جائیں  گے  ۔  وہاں  وُہ  ہمیشہ   ہمیشہ  کے  لِۓ  خُدا  کی  حمد  و  ثنا  کر  سکیں  گے  ۔  فنا  لافانیت   سے  بدل   جاۓ  گی  ۔  ’’  اور  جب  یہ  فانی  جِسم  بقا  کا  جامہ  چُکے  گا  تو  یہ  مرنے  والا  جِسم  حیاتِ  ابدی  کا  جامہ  پہن  چُکے  گا  تو  وُہ  قول  پُورا  ہو  گا  جو  لِکھا  ہے  کہ  موت  فتح  کا  لُقمہ  ہو  گئی  ۔‘‘  (  ا  کرنتھیوں  ۱۵      ۵۴   )   ۲   کرنتھیِوں  ۵      ۱    بھی   دیکھیں  ۔ 

       

  اِس  زمینی  زِندگی  میں  مسیحی  یمانداروں  کو  بُہت  سی  آزمایشوں  ،  مُشکلات   اور  مصائب  کا  سامنا  کرنا  پڑتا  ہے  ۔  لیکن  جِن  ایماندروں  نے  فضل  کی  بدولت   نجات  دہندہ  پر  ایمان   اور  اِستقلال  کا  مظاہرہ  کیا  ہے  وُہ  آسمانی  بادشاہی  کے  وارِث  ہونگے  ۔  زمین  کے  ہر  خِطہ سے  اور  ہر  زبان  بولنے   والے  لوگ  جنہوں  نے  اِیمان  کو  قائم  رکھا  سب  وہاں  ہوں  گے  ۔  یہ  عظیم  اور  شمار  سے  باہر  جمِ  غفیر  جِسے  گناہوں  کی  مُعافی  اور  مسیح  کے  خوُن  سے  پاکیزگی  حاصِل  ہو  چُکی   ہو  گی  ،  آسمان  کی  بادشاہی  کا  وارِث  ہو   گا  ۔    (  مُکاشفہ  ۱۹      ۷    تا   ۹   )  

 

وُہ  سب  روُحیں  جو  اِس  زِندگی  میں  نجات  پا  چُکی  ہیں  آسمان  پر  جلال  پائیں  گی  ۔  یہ  کِس  قدر  خُوبصوُرت  بات  ہو گی  جب  خُدا  کی  کلیسیا  کی  شادی  خُدا  کے  برہّ  سے   ہو  گی  ۔  یہ  وُہ  جلالی  منظر  ہو  گا  جو  بیان  سے  باہر  ہے  ۔  (  مُکاشفہ   ۱۹      ۷   تا  ۹   )  

 

آسمان    اِنسانی  فہم  سے  بعید  

 

 ’’  اب  ہم  کو  آئینہ  میں  دُھندلا  سا  دِکھائی  دیتا  ہے  مگر  اُس  وقت   روُبروُ   دیکھیں  گے  ۔  اِس  وقت  میرا  عِلم  ناقص  ہے  مگر  اُس  وقت  ایسے 

 

پوُرے  طور  پر  پہچانوں  گا   جاؤں  جیسے  میں  پہچانا  گیا  ہوں  ۔  ‘‘   (  ۱   کرنتھیوں  ۱۳        ۱۲   ) 

 

آسمان  کا  جاہ  و جلال  نہ  کُلی  طور  پر  سمجھا  جا سکتا ہے  اور  نہ  ہی  بیان  کیا  جا سکتا  ہے  ۔  ہمارے  ذہین  صِرف  اُن  چیزوں  کو  سمجھنے  کی  صلاحیت  رکھتے  ہیں   جِن  کو  ہم  دیکھ  سکتے  ہیں  اور  محسوُس  کر  سکتے  ہیں  ۔  جبکہ  ہم  یہ  تو  جانتے  ہیں  کہ  آسمان  میں  ہم  خُدا  کی  حضوُری  میں  رُوحانی  وجوُد  رکھیں  گے  ،  خُدا  نے  ہم  پر  ہمارے  اُس  ابدی  گھر  کے  بارے  سب  کُچھ  ظاہر  نہیں  کیا  ۔ 

 

پہلے  مسیحی  شہید  ،  ستِفنس ؔ  کو  آسمان  کی  ایک  جھلک   دِکھائی  گئی  ۔   جب  اُسے  اُسکے  ایمان  کے  سبب  سے  سنگسار  کیا  جا رہا  تھا  ،   ’’  اُس  نے  روُح  القُدس  سے  معموُر  ہو  کر  آسمان  کی  طرف  غور  سے  نظر  کی  اور  خُدا  کا  جلال  اور  یسوُعؔ  کو  خُدا  کی  دہنی  طرف  کھڑا  دیکھا   ۔  ‘‘  (  اعمال  ۷       ۵۵   ) 

 

اگر چہ  آسمان  کے  بارے  بہت  کُچھ  وضاخت  سے  بیان  نہیں  کِیا  جا  سکتا  ،  ہم  یہ   ضروُر  جانتے  ہیں  کہ  ماضی  کے  مُختلف  ادوار  کے  ایمانداروں  کی  طرح  خُدا  کے  بناۓ  ہوُۓ  شہر  میں  ہم  بھی  ہمیشہ  ہمیشہ  کے  لِۓ  رہنا  چاہیں  گے  ۔  عبرانیوں  ۱۱   باب   کی  ۱۰   آئت  میں  ہم  پڑھتے  ہیں   کہ  ابرہام ؔ  ’’  اُس  پائیدار  شہر  کا  اُمیدوار  تھا  جِس  کا   معمار  اور  بنانے  والا  خُدا  ہے  ۔  ‘‘   عبرانیوںؔ   ۱۱   باب  ۱۳   تا   ۱۶    آیات  بھی  پڑھیۓ  ۔ 

 

کیا  ہم  بھی  وہاں  ہونگے  ؟ 

  

   اِس  زِندگی  کے  احتتام  پر  ہم  کہاں  جائیں  گے  ؟   کیا  ہم  آسمان  پر  جائیں  گے  ؟   خُدا  کا  روُح  ہمارے  دِلوں  پر  بڑی  نرمی  سے  دستک  دیتا  ہے  اور  ہمیں  یاد  دِلاتا  ہے  کہ  ہم  خُود  کو  اُس  ابدی  مُستقبِل  کے  لِۓ  تیار  کریں  ۔ 

 

ہمیں  یہ  بات  سمجھنے  کی  ضروُرت  ہے  کہ  ہمیں  خُدا  کی  ضروُرت  ہے  ۔  اِبتدا  ہی  سے  گُناہ  میں  پڑنے  کی  وجہ  سے  اِنسان  نے  خُدا  کی  خوُشنوُدی  کھو  دی  ۔  اپنے  گُناہوں  سے  توبہ  کرنے  اور  مسیح ؔ   کے  پاک  خوُن  کی بدولت  مُعافی  کے  ذریعے  ہم  خُدا  کے  ساتھ  یہ  رِشتہ  دوبارہ  بحال  کر  سکتے  ہیں  ۔  تب  ہی  خُدا  ہمیں  قبوُل  کرتا  اور  مُعاف  کرتا  ہے  ۔   یوُں  ہم  خُدا  کے  کلام  اور  اُسکے   پاک  روُح  کی  بدولت  خُدا  کے  فرزند  بنتے  ہیں  ۔  (     (  یوُحناؔ  ۳      ۵    ؛   ۱      ۱۲   )  جو  اِطمینان  اور  خوُشی  ہمیں  حاصِل  ہو  گی  وُہ  اُس  آسمانی  گھر  کی   خُوشیوں  کا  پیش  خیمہ   ثابت   ہو  گی   ۔ 

ہر   روُح   اور  ہر   بشر   اپنے  دِل  میں  اِس  بات  کا  مکمل  یقین  کر  سکتا  ہے  کہ   اُس  کے  لِے ٔ   آسمان  پر  ایک  گھر  تیار  کِیا  گیا  ہے  ۔  (  یوُحنا ؔ  ۱۴     ۲  تا  ۳    )