درُست فیصلے کرنے کی للکار

زِندگی  کئی  بار  اِنسان  کو  ایسے  مقام  پر  لے  آتی  ہے  جہاں  اُسے   کوئی  بڑا  اہم  فیصلہ  کرنا  ہوتا  ہے  ۔  حقیقت  تو  یہ  ہے  کہ  ہمیں  ہر  روز   کئی  فیصلے  کرنا  پڑتے  ہیں  ۔  کُچھ  فیصلے  زیادہ  سوچ  و  بچار  کے  بغیر  ہی  کر  لِۓ  جاتے  ہیں  ۔  تاہم  کُچھ  فیصلوں  کے  لِے  بُہت  غور  و  فِکر  درکار  ہوتا  ہے  اور   بڑے  فیصلے  کرنے  میں  بڑا  احتیاط  برتا  جاتا  ہے  ۔  اب  سوال  یہ  اُٹھتا  ہے  کہ   کوئی  فیصلہ  کرتے  وقت  کِس  بات  کو  سب  سے  زیادہ  اہم  سمجھا  جانا  چاہۓ  ؟

 

خُدا  نے  جب  اِنسان  کو  خلق  کیا  تو  اُسے  حقِ  اِنتخاب   بھی  دِیا  ۔  ہم  اِس  ذِمہ داری  سے  روُپوشی  اِختیار  نہیں  کر  سکتے  اور  نہ  ہی  اپنے  اِنتخاب  اور  فیصلوں  کے  نتائج  سے  خوُد  کو  بری الزمہ  قرار  دے  سکتے  ہیں  کیوُنکہ  بُہت  سے  نتائج  دائمی  و  ابدی  اثرات  پیدا  کرنے  کا  باعث  بنتے  ہیں  ۔

 

آئیے  ہم   بائبل  کے  کُچھ  کِرداروں  پر  نظر  کریں  جِن  میں  سے  کُچھ  نے  اچھے  اور  کُچھ  نے  بُرے  اِنتخاب  اور  فیصلے  کِۓ  ۔   مُوسیٰ ؔ  مردِ  خُدا  نے   ’’  گُناہ  کا  چند  روزہ  لُطف  اُٹھانے  کی  نِسبت  خُدا  کی  اُمت  کے  ساتھ  بد  سلوُکی  برداشت  کرنا  زیادہ  پسند  کِیا  ۔  ‘‘   (  عبرانیوں  ۱۱   باب  ۲۵   آئت  )

 

اُس  نے  اُس  اِنعام  پر  نظر  رکھی  جو  اِ س  زِندگی  میں   نہیں  بلکہ  آئندہ  کی  زِندگی  میں  حاصِل  ہونا  ہے  ۔  مسیِحی  اِیمانداروں  کی  صُحبت  یقیناً  دانائی  پر  مبنی  اِنتخاب  ہے  ۔  طُوفان  سے  پہلے    ’’  خُدا   کے  بیٹوں  نے  آدمی  کی  بیٹیِوں  کو  دیکھا  کہ  وُہ  خُوبصوُرت  ہیں  اور  جِن  کو  اُنہوں  نے  چُنا  اُن  سے  بیاہ  کر  لِیا  ۔ ‘‘  ( پیدائش  ۶      ۲  )    اُنہوں  نےاپنی  نفسانی  خواہشوں  پر  مبنی  اِنتخاب  کِیا  جو  بعد  میں  اُنکے  لِۓ  بربادی  کا  سبب  بنا  ۔

 

’’ سو   لُوط ؔ  نے  یردن ؔ  کی  ساری  ترائی  کو  اپنے  لِۓ  چُن  لیا  ۔  ۔  ۔  اور  سدوُم ؔ  کی  طرف  اپنا  ڈیرا  لگایا  ۔  ( پیدائش  ۱۳      ۱ا  ،  ۱۲  )   زمیِن  زرخیز  تھی  اور  لوُطؔ   معُاشی  طور  پر  بڑا  خُوشخال  ہو  گیا  ۔  لیکِن  جب  سدوُؔم  برباد  کِیا  گیا  تو  لوُطؔ  کا  سارا  مال  و  اسباب  بھی  غارت  ہو  گیا  ۔

 

بحیثیت ِ  ایک  نوجوان  ،  یوُسفؔ   نے  اِخلاقی  طور  پر  کامِل  اور  دیانتدار  رہنے  کا   ا ِنتخاب  کِیا  اور   مِصر ؔ  کی  سلطنت  میں  اُسے  اعلیٰ  تریِن  اعزازوں  سے  نوازا  گیا  ۔   (  پیدائش  ۴۱      ۴۱ )

 

خُدا  کے  خادم  یشوُعؔ  نے  بنی  اِسرائیل  کو  دو  ٹوک  الفاظ  میں  خبردار  کِیا  کہ  ،  ’’  آج  ہی  تُم  اُسے  جِسکی   پرستِش  کرو  گے  چُن  لو  (   یشوُعؔ   ۲۴      ۱۵   ،  ۱۶   )   اب  رہی  میری  اور   میرے  گھرانے  کی  بات   سو  ہم  تو  خُداوند  کی  پرستِش  کریں  گے  ۔  ‘‘  تب  لوگوں  نے  جواب  دِیا  ،   کہ  خُدا  نہ  کرے  کہ  ہم  خُداوند  کو  چھوڑ  کر  اور  معبوُدوں  کی  پرستِش  کریں  ۔ ‘‘   جب  تک  بنی  اِسرائیل   خُداوند  کے  ساتھ  وفادار  رہے  وُہ  ترقی  و  خو شخالی  کی  زِندگیاں  گُزارتے  رہے  ۔

 

ایلِیاہؔ  نبی  کے  وقت  میں  لوگ  وُہ  سارے  عظیم  کام جو  خُدا  نے  اُنکے  لِۓ  کِۓ  تھے  بھوُل  گۓ  اور  بُہت  سے  لوگ  بعلؔ   دیوتا   کی  پُوجا  کرنے

 

لگے  ۔  یہ  بات  خُداوند   کے  نزدیک  نہائت  ہی  ناپسندیدہ    اور  افسوسناک  تھی  ۔  اِس  اہم  صوُرتِحال  میں  خُداوند  نے  ایلِیاہ ؔ  کو   اِستعمال  کِیا  تاکہ  اُسکے  ذریعہ   وُہ  اپنی  قُوت  اور  قُدرت  کا  اِظہار  کر  سکے  ۔  کوہِ  کرمِلؔ  پر  اُس  نے  آسمان  سے  آگ  کے  لِۓ  پُکارا  اور  آسمان  سے  آگ  نازِل  ہوُئی  جِس  نے  اُسکی  قُربانی  کو  بھسم  کر  دِیا  ۔  اِس  طرح  سے  اُس  نے  ثابِت  کِیا  کہ  خُداوند  ہی  سچّا  خُدا  ہے  ۔  پھِر  اُس  نے  لوگوں  سے  پوُچھا  ،  ’’  تُم کب  تک  دو  خیالوں  میں  ڈانواں  ڈول  رہو  گے  ؟  اگر خُداوند  ہی  خُدا  ہے  تو  اُسکے  پیرو  ہو  جاؤ  اور  اگر  بعل ؔ  ہے   تو  اُسکی  پیروی  کرو  ۔  ‘‘  جب  لوگوں  نے  دیکھا  کہ  آسمان  سے   آگ  نازل   ہوئی  ہے  تو  وہ    ’’  مُنہ  کے  بل  گِرے  اور  کہنے  لگے  ،  خُداوند  ،  وُہی  خُدا ہے  !   خُداوند  ،  وُہی  خُدا ہے  !  پہلا  سلاطِین  ۱۸   باب  ۔

 

دانی ایلؔ  ،   وُہ  نوجوان   جِس نے  اپنے  دِل  میں   نیک  عہد  کِیا  کہ   وُہ  بادشاہ  کے  گوشتیِن اور  مُرّغن  کھانوں  سے  اور  اُسکی  مے َ  سے   خُود  کو    ناپاک  نہیں  کرے  گا  ۔  (  دانی ایل ؔ  ۱      ۸   )   نتِجتاً   ،  وُہ   اور  اُسکے  تین  دوست  جنہوں  نے  اِس  بات  میں   ا ُ س  کا  ساتھ   دِیا  ،  بادشاہ  اور  خُدا  کی  نظر  میں  مقبُول  ٹھہرے  ۔  اگر  اُنہوں  نے  یہ  فیصلہ  اور  یہ  اِنتخاب  نہ  کِیا  ہوتا  تو  دانی ایلؔ  کی  شیروں  کی  ماند  میں  پھینکے  جانے  اور  اُسکے  تین  دوستوں  کے  آگ  میں  ڈالے  جانے  کی  سبق  آموز  اِمثال  بائبل  میں  درج  نہ  کی  جاتیں  ۔

 

یسوُعؔ  نے  ایک  آدمی  کے  بارے   جِسکے  دو  بیٹے  تھے  تمثیل  بیان  کی   ۔  دونوں  میں سے  ایک  بٰٹے  نے  باپ  سے    وِراثت  کا   اپنا  حِصّہ  طلب  کیا   اور  دوُردراز  مُلک  (  گُناہ  کی   سر زمین  )  کو  سدھا ر  گیا  ۔  اُس  کا  فیصلہ  اور  اِنتخاب  درُست  نہ  تھا  ۔  جب  وُہ  اپنا  سارا  مال  و  اسباب  لُٹا  چُکا  تو  اُسے  احساس  ہُوا  کہ  اُس  سے  کِتنی  بڑی  غلطی  سر زد   ہوُئی  ہے  ۔  اُس  نے  اپنے  باپ  کے  گھر  واپس  جانے  کا   فیصلہ  کِیا  ۔  تصّور  کریں  کہ   باپ  اور  بیٹے  کے  مِلاپ  کی  وُہ  گھڑی  کِس  قدر  خُوبصورت  ہو گی  ۔  (  لوُقا  ۱۵    باب  ۱۱   سے  ۳۲   آیات  )

 

یسوُعؔ  کو  گرِفتار  کر  کے  پلاطُس ؔ  کے  سامنے  پیش  کِیا  گیا  ۔  یہوُدِیوں  نے  چِلاّ  چِلاّ  کر  کہا  ۔  ’’  اگر  تُو  اُسے  چھوڑ  دیتا  ہے  تو  قیصرؔ  کا  خیر  خواہ  نہیں  ۔  ‘‘   پیلاطُسؔ  نے  اپنے  سا منے  درپیش  صُورتِحال  پر  غور  کیا  ۔  اُس  نے  قیصرؔ   (   دُنیاوی  مصلحتیں  )   اور  پھِر  جلال  کا  خُداوند  جو  اُسکے  سامنے  کھڑا  تھا  کے  بارے  سوچا  ۔  آخِر  اُس  نے  اپنا   فیصلہ  اور  اِنتخاب  کِیا    اور  یسوُع ؔ  کو  مصلوُب  ہونے  کے  لِۓ  اُنکے  حوالے  کر  دِیا  ۔   (  یوُحناؔ   ۱۹    باب  )

 

دُنیا   اور  اِسکی  آسائشوں  کا  اِنتخاب  آخِر کار  بربادی  ہی  کا  باعث  بنے  گا  ۔  (  ۲   پطرس   ۳    با ب   ۱۰   سے  ۱۱    آیا ت)  دُنیا  اور  اِسکی  آسائشوں  کی  جُستجو  کی  بجاۓ    خُدا  کے  بچوّں  کا  ساتھ  دینا  دانائی  پر  مبنی  اِنتخاب  ہے  ۔  مسیح  کی  صُحبت  میں  وقت  سرف  کرنا  ایک  عاقِل  دوست  جو  زِندگی کے  ہر   فیصلے  میں   ہماری   راہنُمائی  میں   کرتا  ہے  ،   کے  ساتھ   رہنے  کے  مُترادف  ہے   ۔

 

عزیز   قارئین  اور  دوستو  ،  کیا  آپ  نے  مسیح  کی  پیروی  کرنے  کا   فیصلہ  کر  لِیا  ہے  ؟   کیا  آپ  نے  اُسے  اپنی  زِندگی  میں  سب  سے  زیادہ  عزیز  بنا  لیا  ہے  ؟   کیا  اُسکے  بتاۓ  ہوُۓ  زِندگی  کے  اصوُلوں  کو  آپ  نے  اپنا  لِیا  ہے  ؟  کیا  آپ  نے  اپنی  زِندگی  اُسکے  سپرد کر  دی  ہے   اور  اُسکے  سامنے  اپنے  گُناہوں  کا  اِقرار  کرنے  اور  اُن  سے  کِنارا کش  ہونے  کا  اِرادہ  کر  لِیا  ہے  ؟   کیا  آپکے  لِۓ  اُسکا  کلام   بیش  قیمتی    اور  ہر  کِسی  دوُسری  کِتاب  سے  زیادہ  پُرتاثیر  ہے  ؟  کیا  آپ  نے  اپنے  گھر  میں  یا  کمرے  میں   یا  کہیں  اور  کوئی  ایسی  جگہ  الگ  کر  رکھی   ہے  جہاں   آپ  اپنے  خُداوند  کے  سامنے  دُعا  یا  اپنی  زِندگی  پر  گہرے  غوروفِکر  کی  غرض  سے    اور  اُسکے  ساتھ  گُفتگوُ   کرنے  کے  لِۓ  جا  سکیں  ۔    اگر  آپ  نے  اپنی  زِندگی  کو  خُدا  کی  نذر  کر دِیا  ہے   اور  اُسے  اپنا  مالِک  بنا  لِیا  ہے  تو  آپ  ایک  نہائت  ہی  مُبارک  زِندگی  گُزار  رہے

 

ہیں  ۔   یہ  آسمانی  بادشاہی  کا  پیش منظر  ہے  اور   ہر  روز  صحیح  اور  راست  فیصلے  بلآخِر  ہمیں  ابدی  خوُشیوں  کی  سر زمِین  پر  لے  جائیں  گے  ۔  ضُدا آپکو  برکت  دے

0
0
0
0

کیا آپ مُعافی پا چُکے ہیں؟

کیا   آپ  مُعافی  پا  چُکے  ہیں  ؟   آپکا  ابدی  مُستقبِل  اِسی   نہائت  ہی  اہم  اور  سنجِیدہ  سوال  کے  جواب  پر  مُنحصِر  ہے  ۔  بائبل  ہمیں  بتاتی  ہے  کہ  ’’  کوئی  راسباز  نہیں  ،  ایک  بھی  نہیں  ۔ ‘‘  (  رُومیوں  ۳      ۱۰   )  اِسی  باب  کی  ۲۳    آئت  میں  یوُں  لِکھا  ہے    ’’  اِس  لِۓ  کہ  سب  نے  گُناہ  کِیا  اور  خُدا  کے  جلال  سے  محروُم  ہیں  ۔‘‘

اگر  ہم  گُناہ  کے  نتائج  بھُگتنے  سے  بچنا  چاہتے  ہیں  تو  ہمیں  خُدا  کی  مخلصی  اور  مُعافی  کے  متلاشی  و  طلبگار  ہونا  ہوگا  ۔  ’’  کِیونکہ  ضروُر  ہے  کہ  مسیحؔ  کے  تختِ  عدالت  کے  سامنے  جا  کر  ہم  سب  کا  حال  ظاہِر کِیا  جاۓ  تاکہ  ہر  شخص  اپنے  کاموں  کا  بدلہ  پاۓ  جو  اُس  نے  بدن  کے  وسیلِہ  سے  کِۓ  ہوں  ۔  خواہ  بھلے  ہوں  یا  بُرے   ۔ ‘‘  (  ۲    کرنتھیِوں  ۵      ۱۰    ) 

ہم  ابدیت  کا  سامنا  کر رہے  ہیں   اور  یہی   حقیقت  اِس   بات  کو  اور  بھی  زیادہ  اہم  اور  ضرُوری  بنا  دیتی  ہے  کہ  ہم  جانیں  کہ  کیا  ہم  معافی  اور  مخلصی  پا  چُکے  ہیں  ؟  اگر  مُعافی  پا  چُکے  تو  ہم  آسمان  کی بادشاہت  میں  داخِل  ہو سکیں  گے  لیکِن  اگر  نہیں  تو  ہم  ابلِیسؔ  اور  اُسکے  ساتھی  فرِشتوں  کے  ہمراہ  جہنم  کے  سزاوار  ٹھہراۓ  جا  ئیں  گے  ۔   ’’  جب  اِبنِ  آدم  اپنے   جلال  میں  آۓ  گا  اور  سب  فرِشتے  اُس  کے  ساتھ  آئیں  گے  تب  وُہ  اپنے  جلال  کے  تخت  پر   بیٹھے  گا  ۔  اور  سب  قومیں  اُسکے  سامنے  جمع  کی  جائیں  گی  اور  وُہ  ایک  کو  دوُسرے  سے  جُدا  کرے  گا   جیسے  چرواہا  بھیڑوں  کو  بکریوں  سے  جُدا  کرتا  ہے  ۔  اور  بھیڑوں  کو  اپنے  دہنے  اور بکریوں  کو  بائیں  کھڑا  کرے  گا  ۔  اُس  وقت  بادشاہ  اپنے  دہنی  طرف  والوں  سے  کہے  گا  آؤ  میرے  باپ   کے  مُبارک  لوگو    جو  بادشاہی  بِنایِ  عالم  سے  تُمہارے  لِۓ  تیار  کی  گئی  ہے  اُسے  میراث  میں  لو  ۔  ‘‘  (  متیؔ  کی  اِنجیل  ۲۵   باب    ۳۱    سے  ۳۴   آیات  )    پھِر  وُہ  بائیں  طرف  والوں  سے  کہے  گا   اَے  معلُونو  میرے  سامنے  سے  اُس  ہمیشہ  کی آگ  میں  چلے  جاؤ  جو  ابلیِسؔ  اور  اُس کے  فرِشتوں  کے  لِۓ  تیا ر  کی  گئی  ہے  ۔  ‘‘  (  ۴۱   آئت  )  

 

مسیح ؔ  کے  خوُن  سے  مُعافی 

 

تو  پھِر  ہم  اپنی  روُحوں  کو  کیسے  بچا  سکتے  ہیں  ؟  ہم  خوُد  تو  اپنے  آپ  کو  نہیں  بچا  سکتے   لیکِن  اگر  ہم  خُدا  کے   مُہیا  کردہ  منصُوبہ  کو   قبوُل  کر  لیں   تو  یہ  مُمکِن  ہے  ۔ 

 

ہم  اِس  منصوُبہ  کو  بہتر  طور  پر  سمجھ  سکتے  ہیں  جب  ہم  غور   کرتے  ہیں  کہ  کِس  طرح  خُدا  نے  اِسے   مسیحؔ  کے  دُنیا  میں  آنے  سے  پہلے   بنی  اِسرائیل  پر  ظاہِر  کِیا  ۔   خُدا  نے  اُنہیں  کُچھ  خاص  جانوروں  کی  قُربانِیاں  دینے  کا  حُکم  دِیا  ۔  جو  برّے  قُربان  کِۓ  جاتے  وُہ  دراصل  خُدا  کے  کامِل  اور  بے  عیب  برہّ  خُداوند  یسوُع المسیح  کی  قربانی  کی  طرف  اِشارہ   کرتے  تھے  جِس  کی  بدولت  تمام  بنی  نوع  اِنسان   کو  گُناہوں  کی  مخلصی  اور  مُعافی  مِلنی  تھی  ۔  خُون  کا  بہایا  جانا  درحقیقت  لوگوں  کو  گُناہ  کے  بھیانک  نتائج   کی  آگاہی  بھی  دیتا  ۔  اِفسیوں  ۱   باب  ۷ آئت  بتاتی  ہے     ’’  ہم  کو  اُس  کے  خُون  کے  وسیلہ  سے  مخلصی  یعنی  قصوُروں  کی  مُعافی   اُس  کے  اُس  فضل  کی  دولت  کے  مُوافِق  حاصِل  ہے  ۔  ‘‘ 

’’  کیوُنکہ  تُم  جانتے  ہو  تُمہارا   نکما   چال  چلن  جو  باپ  دادا  سے  چلا   آتا  تھا  اُس  سے  تُمہاری  خلاصی  فانی  چیزوں  یعنی  سونے  چاندی  کے  ذریعہ  سے  نہیں  ہوُئی  ۔  بلکہ  ایک  بے  عیب  اور بے  داغ  برّے  یعنی  مسیح ؔ  کے  بیش  قیمت  خوُن  سے  ۔  (  ا  پطرس  ۱      ۱۸   تا  ۱۹   )  ہماری  مخلصی  اور  مُعافی  یسوُع  ؔ  کی  موت  اور  اُس  کے  خُون  بہانے  سے   حاصِل  ہوتی  ہے  ۔  (  عبرانیوں  ۹      ۲۲   )  اِس  بات  کو  ذہن  میں  رکھیں  کہ  ہمارے 

 

گُناہوں  کے  سبب  سے  ہم  ابد ی  موت  کے  سزاوار  ہوتے  ۔  لیکِن  اپنی  مُحّبت  اور  رحم  کی   بدولت  جو  وُہ  ہمارے  لِۓ  رکھتا   ہے  ،  یسُوع  ہماری 

خاطِر  مُوا  تاکہ  ہمارے  گُناہ  مُعاف  ہوں  اور  ہماری  خطائیں  ڈھانپی  جائیں  ۔

 

مُعافی  کے  بغیر  صِرف  غُلامی  ہے    

 

  جب  ہم  مسیحؔ  کی  عطا  کردہ   رحم  سے  بھری  مُعافی  پا  لیتے  ہیں   تو  ہمیں  دِلی  اِطمینان  اور  سکوُن  حاصِل  ہو  جاتا  ہے  ۔   اِس  اِطمینان  اور  سکوُن کو  برقرار  رکھنے  کے  لِۓ  ہمیں  دوُسروں  کو  بھی  مُعاف  کرنے  کے  لِۓ  تیار  رہنا  چاہیۓ  ۔  متی  ۶   باب  کی  ۱۴   اور   ۱۵   آیات  میں  یسوُعؔ  ہمیں  بتاتا  ہے     ’’ اِس  لِۓ  کہ  اگر  تُم  آدمیوں  کے  قصوُر  مُعاف  کرو  گے  تو  تُمہارا  آسمانی  باپ  بھی  تُم کو  مُعاف  کرے  گا  ۔  اور  اگر  تُم  آدمیوں  کے  قصُور  مُعاف  نہ  کرو  گے  تو  تُمہار ا  باپ  بھی  تُمہارے  قصوُر  مُعاف  نہ  کرے  گا  ۔  ‘‘ 

 

یسوُعؔ  ہمیں  مُعاف  نہ  کرنے  کے  خوفناک  نتائج  سے  آگاہ  کرتا  ہے  ۔  ’’  پس  آسمان  کی  بادشاہی  اُس  بادشاہ  کی مانند  ہے  جِس  نے  اپنے   نوکر وں  سے  حِساب  لینا  چاہا  ۔  اور  جب  حِساب  لینے  لگا  تو  اُس کے  سامنے  ایک  قرضدار  حاضِر  کیا  گیا  جِس  پر  اُسکے   دس  ہزار  توڑے  آتے  تھے  ۔  مگر  چُونکہ  اُس  کے  پاس  ادا  کرنے  کو  کُچھ  نہ  تھا  اِس  لِۓ  اُسکے  مالِک  نے  حُکم  دِیا  کی  یہ  اور  اِس کی  بیوی  بچّے  اور  جو  کُچھ  اِس  کا  ہے  سب  بیچا  جاۓ  اور  قرض  وصوُل  کر  لِیا  جاۓ  ۔  پس  نوکر  نے  گِر  کر  اُسے  سجدہ  کِیا   اور  کہا  ،   اے  خُداوند  مُجھے  مُہلت  دے  ۔  میں  تیرا  سارا  قرض  ادا  کر وُں  گا  ۔  اُس  نوکر  کے  مالِک  نے  ترس  کھا کر  اُسے  چھوڑ  دِیا   اور  اُس  کا  قرض  بخش  دِیا  ۔  

جب  وُہ  نوکر  باہر  نِکلا  تو  اُس  کے  ہم  خِدمتوں  میں  سے  ایک  اُس  کو   مِلا  جِس پر  اُس  کے  سو  دِینار  آتے  تھے  ۔  اُس  نے  اُس  کو  پکڑ  کر  اُس  کا  گلا  گھونٹا  اور  کہا  جو  میرا  آتا  ہے  ادا  کر  دے  ۔  پس  اُس  کے  ہم  خِدمت  نے  اُسکے  سامنے  گِر  کر  اُسکی  مِنت  کی  اور  کہا  مُجھے  مُہلت  دے  ۔  میںَ  تُجھے  ادا کر  دُوں  گا  ۔  اُس   نے  نہ  مانا  بلکہ  جا  کر  اُسے  قیدخانہ  میں  ڈال  دِیا  کہ  جب  تک  قرض  ادا  نہ  کر  دے  قید  رہے  ۔  پس  اُس کے  ہم  خِدمت  یہ  حال   دیکھ  کر  بُہت  غمگین  ہوُۓ   اور  آکر  اپنے  مالِک  کو  سب  کُچھ   جو   ہُوا  تھا  سُنا  دِیا  ۔  اِس  پر  اُسکے  مالِک   نے  اُس  کو  پاس  بلُا کر   اُس  کہا  ،  اے  شریر  نوکر  میں  نے  وُہ  سارا   قرض  تُجھے  اِس  لِۓ  بخش   دِیا  کہ  تُو  نے  میری  مِنت  کی  تھی  ۔  کیا  تُجھے  لازم  نہ  تھا  کہ  جیسا  میں  نے  تُجھ  پر  رحم  کِیا  تُو  بھی  اپنے  ہم  خِدمت  پر  رحم  کرتا  ۔  اور   اُس  کے  مالِک  نے  خفا  ہو  کر  اُس  کو  جلادوں  کے  حوالہ  کِیا  کہ  جب  تک  تمام  قرض  ادا  نہ  کر  دے  قید  رہے  ۔ 

میرا  آسمانی  باپ  بھی  تُمہاے  ساتھ  اِسی  طرح  کرے  گا  اگر  تُم  میں  سے  ہر  ایک  اپنے  بھائی  کو  دِل  سے  مُعاف  نہ  کرے  ۔  ‘‘    (  متیؔ  کی  اِنجیل  ۱۸   باب  ۲۳   سے  ۳۵   آیات  ) 

 

کِسی  سے  نفر ت  کرنا  ،  کِسی  کو  ضرر  پُہنچاننے  کی  خواہش  رکھنا  یا  دِل  میں  کِسی  کے  خِلاف  بُغض  رکھنا  ہمارے  اندر  بُہت  سے  منفی   جذبات  پیدا  کرتا  ہے  ۔  جو   شخص  اپنے  اندر  ایسے  روّیوں  کو  پروان  چڑھنے  دیتا  ہے  اُسکی  زِندگی  میں  خُوشیوں  کی  بجاۓ  کڑواہٹ  بھر  جاتی  ہے  ۔  نتیِجتاً  نہ  صِرف   اُسکی  اپنی  صحت  مُتاثر  ہوُے  بغیر  نہیں  رہتی  بلکہ  اُسکے  دوُسروں  کے  ساتھ  سماجی  تعلُقات  بھی  بُری  طرح  مُتاثر  ہوتے  ہیں  ۔

 

جب  ہم  دُوسروں  کو  مُعاف  نہیں  کر  پاتے  تو  ہماری  رُوحیں  غُلامی  کی  ایسی  زنجیروں  میں  جکڑی  جاتی  ہیں  جو  ہمیں  غلط  طرح  کی  صُحبت  اِختیار  کرنے  پر  مجبوُر  کر  دیتی  ہے  یا   پِھر نشہ  آور  اشیا  کے  اِستعمال  کی  طرف  مائل  کر دیتی  ہے  ۔   اکثر  دِل  کی  یہ  کڑواہٹ  ہمیں  اپنے  اندر  ہی  قید  کر  کے  رکھ  دیتی  ہے  ۔  یہ  ہمارے  دِل  میں  دُکھ  ،  غُصہ  اور  لڑائی  جھگڑے  جیسے  منفی  جذبات  ڈال  دیتی  ہے  اور  خُوشی  ،   مُحّبت  اور  میل 

 

مِلاپ  جیسے  مُثبت  اور  نیک  جذبات  دِل  سے  نِکال  باہر  کرتی  ہے  ۔   دِل  کی  یہ  کڑواہٹ  غروُر  اور  تکبّر   کا  نتیجۃ  ہے  جو   ہمارے  اندر  تب  پیدا  ہوتا  ہے  جب  ہم  دوُسروں  کو  مُعاف   نہیں  کر  پاتے  اور  دِل  میں  بدلہ  لینے  کی  ٹھانے  رکھتے  ہیں  ۔  اگر  ہم  اپنے  اندر  کے  دبے  ہوُۓ 

 

منفی  جذبات  کو   دِل  سے  نہیں  نِکالیں  گے  تو  بلآخِر  یہ  ہمیں  پوُری  طرح  سے  اپنی  گرِفت  میں  لے  لیں  گے ۔  یوُں  ہم  نہ  صِرف  اِن  منفی  جذبات  کے  بلکہ  خُدا  کے  نزدیک  گُناہ  کے  بھی  اسیر  بن  جائیں  گے  ۔ 

 

غیر مشروُط  مُعافی  

 

یسوُع ؔ  نے  ہمیں  سِکھایا   کہ  دوُسروں  کو  مُعاف  کرنے  کا  صِرف  ایک  ہی  راستہ  ہے  جو  خُود  یسُوع ؔ  نے  ہمیں  مُعاف   کر  کے  دِکھایا  ۔    ہمیں  مُعافی  کو  جُرم   یا  زیِادتی  کی  حد  یا   اُسکے  شُمار  یا  ظُلم  و  زیادتی  کرنے  والے  شخص  کی  فِطرت   سے  مشروُط  نہیں  کرنا  چاہۓ۔  ہمیں  دوُسروں  کی  طرف  غیر  مشروُط  رحم  کا  ہاتھ  بڑھانا  چاہِۓ  اُسی  طرح  جیسے   خُدا  نے  ہماری  طرف  بڑھایا  ۔  جب  ہم   حلیِم  بن  کر   دوُسروں  کو  مُعاف   کرنے  کے  لِۓ  تیار   ہو  جاتے  ہیں  تو  خُدا  ہماری   راہنُمائی  کرتا  ہے  کہ  ہم   اپنی   بھی  خطاؤں  اور   گُناہوں   کی  مُعافی  کے  طلبگار    ہوں  ۔    خُدا  ہر  ایک  کو  جو  حلیمی  کی  روُح  کے  ساتھ  توبہ  کرتا  ہے  مُعاف  کرتا  اور  قبُول  کرتا  ہے  ۔ 

جب  ہم  رُوح  کی  راہنُمائی  میں  چلیں  گے  تو  ہم  سچائی  کو  جانیں  گے  اور  سچائی  ہی  ہمیں  آزادی  اور  رہائی  بخشے  گی  ۔  (  یوُحناؔ  ۸   باب  ۳۲   )  آئت  ۳۶    میں  یوُں  بیان  ہوتا  ہے    ’’  پس  اگر   بیٹا  تُمہیں  آزاد  کرے  گا  تو  تُم  واقعی  آزاد  ہو  گے  ۔  ‘‘

’’  اگر  آج  تُم  اُسکی  آواز  سُنو  تو  اپنے  دِلوں  کو  سخت  نہ  کرو  ۔ ‘‘  (  عبرانیوں  ۳       ۱۵   )   متیؔ  ۱۱      ۲۸    میں  یسُوع ؔ  نے  کہا   ’’   میرے  پاس  آؤ  ،  مَیں  تُم  کو  آرام  دوُں  گا  ۔  ‘‘  جب  ہم  اِس  تعلیم  پر  عمل  کریں  گے  تو  ہم  خُود  بھی  مُعافی  پائیں  گے   اور  دوُسروں  کو  بھی  مُعاف  کر  پائیں  گے  ۔ 

 

 خُدا  کے  پاس  آنا 

 

اب  سوال  یہ  پیدا  ہوتا  ہے  کہ  ہم  خُدا  کے  پاس  کیسے  آ  سکتے  ہیں  ؟  اِس  کا  جواب  ہمیں  بائبل  مقُدس  میں  مِلتا  ہے  ۔    ’’  کوئی  میرے  پاس  نہیں  آ سکتا  جب  تک  باپ  جِس  نے  مُجھے  بھیجا  ہے  اُسے  کھینچ  نہ  لے  اور  میں  اُسے  آخری  دِن  پھِر  زِندہ  کروُں  گا  ۔‘‘  (  یوُحناؔ  ۶      ۴۴    )  اپنے  پاک  روُح  کے  ذریعہ  خُدا  ہمیں  یہ  احساس   دِلاتا  ہے  کہ  ہم  گُنہگار  ہیں  اور   ہمیں  ایک  نجات  دہِندہ  کی  ضروُرت  ہے  ۔  کھبی   کبھی  ہم  خُدا  کی  بُلاہٹ  کو  سمجھ  نہیں  پاتے  ۔  ہم  اپنے  اندر  ایک  خالی  پن  اور   احساسِ  تنہائی   اور  یہ   محسوُس  کرنا   شروع  کر  دیتے  ہیں  کہ  میرے  ساتھ  کُچھ  ٹھیک  نہیں  اور  یہ  یقین  کر  لیتے   ہیں  کہ  میں  تو  کھو  چُکا  ہوں  اور   پوری  طرح  سے  بھٹک  ہو  چُکا  ہوں  ۔ 

جب  ہم  اپنے  اندر  اِس  طرح  کی  بے  چینی  اور  کشمکش  محسوُس  کریں  تو  ہمیں  اپنے  دِل  کا  حال  خُدا  کے   سامنے  کھول  دینا  چاہۓ  تاکہ  وُہ  ہماری  راہنُمائی  کر سکے  ۔  ہماری  گُزری  ہوُئی  گُناہ  آلوُدہ   زِندگی  کی  وجہ  سے  ہمارا   دِل  بوجھل  ہو  جاتا  ہے   اور  ہم  ندامت  اور  شرمِندگی  کے  بوجھ  تلے  دب  جاتے  ہیں  ۔   خُدا  چاہتا  ہے  کہ    ہم  سچّے  دِل  سے  توبہ  کر کے  اپنی  زِندگیوں  کو  اُس  کی  مرضی  کے  ماتحت  کر  دیں  ۔  جب  خُدا  دیکھتا  ہے  کہ  ہم  نے  سچّائی  سے  اپنے   شکستہ  اور  نادم  د ِل  سے  توبہ  کی  ہے   اور  ہم  اپنی  زِندگی  میں  اُسکے  مرضی  پوُری  کرنے کے  لِۓ  تیار  ہیں  تو   وُہ   ہماری  ماضی  کی  گُناہ  آلوُدہ  زِندگی  کی  خطاؤں  کو  بخش  دیتا  ہے  اور  ہم  اپنی  زِ ندگی  میں  مُعافی  اور  اِطمینان  حاصِل  کرتے  ہیں  ۔  (  زبوُر   ۳۴       ۱۸   ؛  زبوُر  ۵۱      ۱۶   تا  ۱۷   )  یہ  ہمارے  لِۓ  کِس  قدر  خوُشی  کی  بات  ثابت  ہوتی  ہے  اور  ہم  چاہتے  ہیں  کہ  دوُسروں  کے 

 

ساتھ  بھی  اِس  تجربہ  کا  بیان کریں  کہ  کِس  طرح  خُدا وند  یسوُع ؔ  نے  ہمارے  دِل  کو  بدل  کر   رکھ   دِیا  ہے  ۔          

 یہ  تجربہ  محض  عقلی  اور  ذہنی  تبدیلی  کے  طور  پر  نہیں    بلکہ  یہ  روُح  القُدس  کا  کام  ہے  جو  ہمارے  دِل  کو   بد ل   کر  ہماری  زِندگی  کو  ایک 

نیا   روُپ  دے  دیتا  ہے  ۔    روُح  القُدس  کی  یہ  طاقت    خُدا  میں  ہمارے  اِیمان  کو  مضبوُط  کرتی  ہے  اور  اِسکی  بدولت  ہم  اپنی  مرضی  اور  انا  کو  پس  پُشت  ڈال  کر  دُوسروں  کو  معاف  کرنے  کے  قابِل  بنتے  ہیں  ۔  ۲   کرنتھیوں  ۵      ۱۷   میں  یوُں  لِکھا  ہے    ’’  اِس  لِۓ  اگر  کوُئی  مسیحؔ  میں  ہے  تو  وُہ  نیا  مخلوُق  ہے  ۔  پُرانی  چیزیں  جاتی  رہیں  ۔  دیکھو  وُہ   نئی  ہو  گئیں  ۔  ‘‘

 

بائبل  کا  سِکھایا   ہُوا  مُعافی  کا   راستہ  ایک  خُوبصوُرت  راستہ  ہے  ۔  مسیحؔ  کی  قُربانی  پر  ایمان  اور  اِسکے  ساتھ  خُدا  اور  اُسکی  مرضی  کی  مکمل  طور  پر  قبوُلیت   ،  پوُری  طرح  سے    ہمارے  دِلوں  سے  احساسِ  گُناہ  کو  ختم  کر  دیتی  ہے  ۔  ہمارے  سب  گُناہ  یسوُعؔ  المسیح  کے   پاک  خوُن  میں  ڈھانپے  جاتے  ہیں  ۔  خُدا  کی  عطا  کردہ  مُعافی  ہمارے  دِل  سے  دوُسروں  کی  طرف   سے  لگاے  ہوُ  ۓ  زخموں  اور  ہماری  اپنی  خطاؤں  کے  بوجھ  کو  دُور  کر  دیتی  ہے  ۔  خُدا  ہماری  خطاؤں  اور  کوتاہیوں  کی  تختی  کو  بالکل  صاف  کر  دیتا  ہے  ۔ وُہ  فرماتا  ہے  ’’  اور  اُنکے  گُناہوں  کو  پھِر  کبھی  یاد  نہ  کروں  گا  ۔ ‘‘  کیا  ہی  بھلا   اور  خُوبصُورت  ہے  آزادی  کا  یہ  تجربہ   جب  خُدا   ہمیں  مُعاف   کر  دیتا  ہے  اور  ہم  دوُسروں  کو  مُعاف  کرنے  کے  قابِل  بنتے  ہیں  ۔  آپ  بھی  یہ  تجربہ   اپنے  دِل  میں  اور  اپنی  زِندگی  میں  حاصِل  کر سکتے  ہیں  ۔  آج  ہی  خُدا  کے  پاس  آ ئیں  اور  معافی  و  مخلصی  پائیں 

0
0
0
0

مسائل سے بھری دُنِیا میں ذہنی سکوُُن

Peace

  ؟  ‘‘  یہ  گھمبِیر  آہ  و  نالہ  ہم  زمانوں  سے  سُنتے  آ  رہے  ہیں  ۔   اور  یقیناً  آپ  کے  دِل  کی  آہ  و  پُکار  بھی  یہی  ہو گی  ۔ 

لوگ  تھکے  ماندے  اور  پریشان  حال  ہیں ۔  بِلا شُبہ  اِنہیں  صحیح  سِمت  ،  مشورے  ،  تحفُظ  ،  راہنُمائی  اور  اعتماد  کی  ضروُرت  ہے  ۔  ہم  سبھی  ذہنی  سکُون  کے  متلاشی  ہیں  اور  ہمیں  اِس  کی  ضروُرت  بھی  ہے  ۔ 

ذہنی  سکوُن  ،  ہاں   ،  یہ  کیا  ہی  بیش قیمت  خزانہ  ہے  !  کیا  یہ  خزانہ  ایسی  دُنیا  میں  مُیّسر  ہو  سکتا  ہے  جو  اِس  قدر  جنگ  و  جدل  ، نا  اُمیدی  ،  ابتری  اور  مُصیبتوں  میں  گھِری  ہوُئی ہے  ؟    

 

یہ  عظِیم  جُستجوُ  اب  بھی  جاری  ہے  !  بُہت  سے  لوگ  حصُولِ  دولت  اور  شُہرت  میں  سکُون  تلاش  کر  رہے  ہیں  ۔  دِیگر  اِسے  آسا ئشوں  ،  طاقت  ،  اِختیار  ،  تعلیِم  و  عِلم  یا  پھِر  اِنسانی  رِشتوں  اور  شادی  بیاہ  سے  حاصِل  کرنے  میں  کوشاں  ہیں  ۔  لوگ  چاہتے  ہیں  کہ  اُن  کے  دماغ  عِلم  سے  اور  اُن  کے  بینک  اکاوُنٹ  پیسوں  سے  بھر  جائیں  مگر  اُن  کی  روُحیں  خالی  کی  خالی  ہی  رہتی  ہیں  ۔  بُہت  سے  اور   لوگ  زِندگی  کے  حقائق  سے  چھُپنے  کے  لِیۓ  شراب  اور   منشیِات کا  سہارا  لیتے  ہیں ۔  لیکِن  وُہ  بھی  جِس  سکُون  کی  تلاش   میں  ہیں  وُہ  اُنہیں  مِلتا  نہیں  ۔  وُہ  پھِر  بھی  خُود  میں  خالی  خالی  اور  تنہائی  کا  شِکار  بنے  طرح  طرح  کی  مُصیِبتوں میں  گھِرے  رہتے  ہیں ۔  

  ٓاِنسان  افراتفری میں  

جب  خُدا  نے   اِنسان  کو  خلق   کِیا  تو  اُسے  کامِل  سکوُن  ،  مُسرت  اور  خوُشی  سے  لُطف  اندوز  ہونے  کے  لِۓ  ایک  خوُبصوُرت  باغ  میں  رکھا  ۔  لیکِن  جب   آدم ؔ  اور  حوّاؔ  نے  گُنا ہ  کر  لِیا  تو  وُہ  فوراً   احساسِ  جُرم  میں  مُبتلا  ہو 

  ہو  گئے  ۔  جہاں  پہلے  وُہ  خُدا  کی  حضُوری   کے  مُنتظر رہتے  تھے  ،  اَب  اُنہوں  نے  خُود  کو  شرم  سے  چِھپا  لِیا  ۔  وُہ  جِس  سکوُن  اور  خُوشی  سے  پہلے  سرشار  تھے  ،  اَب  اُس  کی  جگہ  احساسِ  جُرم  اور  خوف نے لے  لی ۔  اِنسان  کا  گُناہ  ہی  افراتفری  سے  بھری  ہُوئی  دُنیا  اور  اِنتشا ر  زدہ   ذہن  کا  آغاز  تھا  ۔

بے  شک  ہماری  رُوح  خُدا  کے  لِۓ  ترستی  ہے  لیکِن  ہماری  گُنہگار  فِطرت   اُس  کی  راہوں  سے  بغاوّت  کر  دیتی  ہے  ۔  یہ  باطنی کشمکش  ہمارے  اندر  تناؤ  اور  ابتری  پیدا  کر  دیتی  ہے  ۔ جب  ہم  آدمؔ  اور  حوّاؔ  کی  طرح  اپنی  خواہشات  اور   اپنے  اِرادوں  میں  خُود  مرکزئیت  کا  شِکار   ہو  جاتے  ہیں  تو  ہم  بے  چینی   اور  خوف  میں  مُبتلا  ہو  جاتے  ہیں  ۔  جِتنی  زِیادہ  ہم  اپنے  آپ  پر  توجہ  دیتے  ہیں  ،  اُتنا  ہی  زیادہ  ہم  پریشان  ہوتے  چلے  جاتے   ہیں  ۔  زِندگی  کی  غیر  یقِینیاں  اور  مسلسل  بدلتی   ہُوئی  یہ   گلتی  سڑھتی  دُنیا  ہمارے  احساسِ  تحفُظ  کو  ہِلا  دیتی  ہیں  اور  ہمارے   سکوُن کو  تہ  و  بالا  کر  دیتی  ہے  ۔ 

یسوُعؔ  مسِیح ،  امن  و  اِطمِینان  کا  شہزادہ 

جب  تک  زِندگی  کے  تمام  پہلُو  اُس  ذات  اقدس  کے  ساتھ  مطابقت  میں  نہیں  لاۓ  جاتے  جِس نے  ہمیں  بنایا  ہے  ،  اور  جو  ہمیں  سمجھتا ہے  ،   ہمیں  کوئی  سکُون  نہیں  حاصِل  ہو  سکتا  ۔  کِیونکہ  ایسا   صِرف  مسِیح  کو  مکمل  طور  پر  سپُردگی  سے  ہی  مُمکِن  ہے  ۔  دہ  نہ  صِرف  دُنیا  کا  مالِک  ہے  بلکہ  وُہ  ہماری  زِندگی  کو  شُروع  سے  لے  کر  آخِر   تک  جانتا  بھی  ہے  ۔    وُہ  اِس  دُنیا  میں  آیا  تاکہ  اُنکو  جو  اندھیرے  اور  موت  کے  سایہ  میں  بیٹھے  ہیں     اُنہیں  روشنی  بخشے  اور  ہمارے  قدموں  کو  سلامتی  کی  راہ  پر  ڈالے  (  لوُقا  ۱   باب  کی  ۷۹   آئت  )  کے  مُطابِق  جب  وُہ  دُنیا  میں  آیا  تو   وُہ  ہمارے  مُتعلق  ہی  سوچ رہا  تھا  ۔ 

یسُوعؔ  تاریکی  کے  بدلے   نُور   ،  جنگ  و  جدل  کی  جگہ  امن  ، غم  کی  جگہ  خوُشی  ،  نا اُمیدی  کی  جگہ  اُمِید  اور  موت  کی  جگہ  زِندگی  بخشتا  ہے  ۔  یوحنا  ۱۴      ۲۷   میں  وہ  فرماتا   ہے    ’’  مَیں  تُمہیں  اِطمینان  دِیے  جاتا  ہُوں  ،  جِس  طرح   دُنیا  دیتی  ہے  ،  مَیں   تُمہیں  اُس  طرح  نہیں  دیتا  ۔  تُہارا  دِل  نہ   گھبراۓ اور  نہ   ڈرے  ۔  

توبہ  ذہنی  سکُون  دِلاتی  ہے  ۔

جب  آپ  خُود  کو  گُناہ  کے  بھاری  بوجھ  تلے  دبا  محسُوس  کرتے  ہیں  تو  اِس  کا  عِلاج  یہ  ہے  ۔  ’’  پَس  توبہ  کرو  اور  رجُوع   لاؤ   تاکہ  تُمہارے  گُناہ  مِٹاے ٔ  جائیں 

 (  اعمال  ۳      ۱۹  )    یسُوعؔ  آپ  کو  یہ  معنی  خیز  اور  زِندگی  بدل  دینے   والا  تجربہ   حاصِل  کرنے  کی  دعوت  دیتا  ہے  ۔  وُہ  فرماتا   ہے     ’’  اے  محنت  اُٹھانے  والو   اور  بوجھ  سے  دبے  ہُوۓ  لوگو  ،  سب  میرے  پاس   آؤ  ، 

مَیں  تُم  کو  آرام  دُوں  گا  ۔  (  متی ؔ  کی  اِ نجیل  اا   باب  ۲۸    آئت  )  نیِز  پہلا  یُوحنا ؔ  ۱   باب  ۹   آئت  میں  اُس  نے  وعدہ  کِیا  ہے    ’’  اگر  ہم  اپنے  گُناہوں  کا  اِقرار  کریں  تو  وُہ  ہمارے  گُناہوں  کو  مُعاف  کرنے   اور ہمیں  ہماری  ساری  ناراستی  سے  پاک  کرنے  میں  سچّا  اور  عادِل  ہے  ۔ ‘‘  کیا  آپ  اِس  دعوت  کو  قبُول  کرنے  کے  لیۓ  تیار  ہیں  ؟ 

جب  آپ  یسُوعؔ  کے  پاس  آئیں  گے  تو  اپنے  گُناہوں  کی  مُعافی  اور  حقیقی  آزادی  پائیں  گے  ۔  نفرت  اور   بُغض  کی  بجاۓ   آپ  کا  دِل  مُحبّت  سے  بھر  جاۓ  گا  ۔  جب  یسُوع ؔ  آپ  کے  دِل  میں  ہو  گا  آپ  اپنے  دُشمنوں  سے  بھی  پیار  کرنے  لگیں  گے  ۔  یہ  سب  مسِیح ؔ کے  نجات بخش  خُون  کی  بدولت  ہی  مُمکِن  ہے  ۔ 

دائمی  سکوُن 

 مسیحی  ہوتے  ہُوے ٔ  خُدا  پر  اِیمان  اور  اُس  کے  تحفُظ  پر  بھروسہ  ہی  خوف  اور  پریشانی  کا  مؤثر  تریاق  ہے  ۔  خُدا  پر  بھروسہ  رکھنا  ، جو  ازل  تا   ابد  لا تبدل  ہے  ،  کِس  قدر  اِطمینان  بخش  ہے  ۔  وُہ  ہم  سے  مُحّبت  رکھتا  ہے  اور  ہماری  حفاظت  و  نِگہبانی  کرتا   ہے  ۔  تو  پھِر  ہم  کیوں  ڈریں  یا  گھبرائیں  ؟  کیوُں  نہ  ہم  ویسا  کرنا  سیکھیں  جیسا  کہ  ہم  ۱   پطرس  ۵      ۷    میں  پڑھتے  ہیں      ’’  اور  اپنی  ساری  فِکر  اُسی  پر  ڈال  دو  کیونکہ  اُس  کو  تُمہاری  فِکر  ہے  ‘‘  ہمارے  پاس  یہ  خُوبصُورت  وعدہ  بھی  ہے   

’’  جِس  کا  دِ ل  کا قائم  ہے  تُو  اُسے  سلامت  رکھے  گا  ،  کِیوُنکہ  اُس  کا  توّکل  تُجھ  پر  ہے  ۔   یُسعیا ہؔ  ۲۶      ۳ 

آپکے  دِل  میں  یسُوع ؔ  کی  موجُودگی  نے  آپکی  سکُون  کی  تلاش  ختم  کر  دی  ہے  ۔  وُہ  آپکو  ایسا  سکُون   بخشے  گا  جو  آپکو  صِرف  اُس  پر  بھروسہ 

کرنے  سے  ہی  مِل  سکتا  ہے  ۔  اِس  شخصی  تجربہ  کے  بعد   آپ  بھی  کہہ  سکیں  گے    مَیں  نے  ایسا  سکوُن  پا  لیِا  ہے  جیسا  مُجھے  پہلے  کبھی  حاصِل  نہ  تھا  ۔  اب میں  ایک  ایسے  مقام  پر  ہُوں  جہاں  چاہے  آندھِیا ں  چلیں  یا  طُوفان  آئیں   ،  مُجھے  کُچھ  فرق  نہیں  پڑنے  کا  کیونکہ  اب  مَیں  ہمیشہ  اپنے  مالِک  کے  ساتھ  کامِل  اِطمینان  میں  رہتا  ہُوں  ۔ 

افراتفری  سے  بھری  اِس  دُنیا   میں  آپ  کو  ذہنی  سکُون  مُیّسر  ہو  جاۓ  گا   ۔  اپنے  دِل  کا   دروازہ  مسیح ؔ  کے  لِۓ  کھول  دیں  ۔  ابھی  اور  اِسی  وقت  !   اور  وُہ  ایک  دِن  آپ  کے  لِۓ  آسمان  کے  دروازے  کھول  دے  گا  ،   جہاں  کامِل  سکُون  کی  دائمی  حُکمرانی  ہو  گی  ۔   خُدا  آپکو  برکت  دے  ۔ آمِین    

0
0
0
0