آسمان آپکا مُستقبِل کا گھر ؟

آپکا  مُستقبِل  کیسا  ہو گا  ؟

کون  اپنے  مُستقبِل  کے  بارے  سوچ  سکتا  ہے  بغیر  اِس  بات  کو   خاطِر  میں  لاۓ  کہ  کیا  موت  کے  بعد  بھی    حیّات  ہے  ؟  اِنسان  اپنے  ذہن  سے  موت  کے  بعد  کے  مُمکِنہ  احوال  کے  خیالات   سے  چھُٹکارا  نہیں  پا   سکتا  لیکِن  اُسکی  کوشِش  ضروُر   ہوتی  ہے  کہ  وُہ  اِن  خیالات  کو  اپنے  ذہن  سے  نِکال  باہر  کرے  ۔   وُہ  موت  ،  جنت  اور  جہنم   کے   خیالات  کو   کہیں  دُور  مُستقبِل  میں  ڈال  کر   اپنے  آپ  کو  اِس  زِندگی  کے  مُعاملات  میں  مصروُف  کر  لیتا  ہے  ۔  (  متیؔ  ۲۴      ۴۸   ؛  واعظ ؔ  ۸      ۱۱    )  لیکِن  سچائی  تو   یہ  ہے  کہ   بہ دیر  یا  جلد  ہمیں  ایک  اِنتخاب  تو  کرنا   ہی  ہے  ۔  اگر  ہم  اِس  سوال  کے  بارے  نہیں  سوچتے  تو  ہم  یقیناً  ہمیشہ  کے  لِۓ  بھٹک  چُکے  ہیں  ۔

 

  منزلیں   صِرف  دو   ہی  ہیں   

  آسمان  کا  جلال  اور  دوزخ  کی  دہشت  ہمیں  قائل  کرتی  ہے  کہ  ہم  آسمان  کو  اپنی  ابدی  منزل  بنائیں  ۔  اگر  ہمیں  اِس  اِنعام  کو  پانا  ہے  تو  پھِر  ہمیں  ایک  اِنتخاب  اور  ایک  فیصلہ  کرنا  ہو گا  ۔   یہ  تو  یقینی  بات  ہے  کہ  گُناہ  دوزخ  میں  داخِل  نہیں  ہو  سکتا  ۔  اُن  سب  کے  لِۓ  دوزخ  میں  ہمیشہ  کی  سزا  ہوگی  جو  اِس  زِندگی  میں  اپنے  گُناہوں  کی  معافی  کے   طلبگار  نہیں  ہوتے  ۔   ’’  اور  یہ  ہمشہ  کی  سزا  پائیں  گے  مگر  راستباز   ہمیشہ  کی زِ ندگی  ۔  (  متیؔ  ۲۵      ۴۶   ) 

آسمان  ۔  تمام  نجات  یافتہ  لوگوں  کا  گھر  

.... ڪا مکمل متن یا حوال آسمان آپکا مُستقبِل کا گھر ؟

نجات  یافتہ  لوگوں  کے  لِۓ  جو  کہ  مسیح ؔ  کے   خوُن  سے  دھوۓ  گۓ  ہیں  ،  آسمان  ایک  خاص  مقام  ہے  ۔  (  مُکاشفہ  ۷   باب   ۱۳   اور   ۱۴   آیات  )  یہ  اُنکا  گھر  ہے  ۔  اِس  آسمانی  گھر  کی  خواہش  زبوُر  نویس  کی  آرزُو   جیسی  ہے  ۔  (  زبُور   ۶۳       ۱   )   ’’  خُشک  اور  پیاسی  زمین  میں  میری  جان  تیری  پیاسی  اور  میرا  جِسم  تیرا  مُشتاق  ہے  ۔ ‘‘   لیکِن  وُہ  جو  جسمانی  اور  دُنیاوی  سوچ  کے  مالک   ہیں  ،  اُنکے  لِۓ  آسمان  ایک  بُہت  ہی  دُور  دراز  کی  چیز ہے  ۔  جو  شخص   خُدا  کے  پاک  روُح  پاک  سے  پیدا  ہُوا  ہے   اُسکے  لِۓ   آسمان   بُہت  ہی  نزدیک  اور  ایک  حقیقت  ہے  ۔  وُہ  دُنیا  میں  ہی  اپنے   ابدی  آسمانی  گھر  جیسا  احساس  پا  لیتا  ہے  ۔

سچائی  ،  اِنکساری  ،  پاکیزگی   اور  مُحبّت  جیسی  خُوبیاں  جو  مسیحؔ  نے  عملی   نموُنے  کے  طور  پر  پیش  کیں  ،  خُدا  کے   فرزند  ہونے  کے  ناطے  سے  ہمارے  لِۓ  بڑی  بیش  قیمت  بن  جاتی  ہیں  ۔  ہمارا  دِل  اِن  مسیحی  فضائل   کی  کاملِیّت  اور  اور پاکیزگی  کے  لِۓ  تڑپتا  ہے  ۔  (  ۲   کرنتھیوں  ۵      ۱   ) 

 

آسمان  ۔  ایک  نُورانی  مقام  

ہماری  زمینی  زِندگی   میں  بُہت  سے  اُتار  چڑھاؤ  آتے  ہیں  ۔  ہم  بُہت  سی  ایسی  چیزوں  کا  سامنا  کرتے  ہیں  جو  ہماری  سمجھ  سے  باہر  ہوتی  ہیں  ۔  ہماری  خواہش  ہوتی  ہے  کہ  ہم  اپنے  مُستقبِل  میں  جھانک  سکیں  لیکِن  ہم  ایسا  کر  نہیں  پاتے  ۔   نتیجتاً   ہم  مایُوسیوں  میں  گھِر  جاتے  ہیں  ۔  یہ  سب   باتیں  تاریکی  سے  تاویل  کی  جا سکتی  ہیں   ۔

آسمان  صِرف  روشنی  کا  مسکن  ہے  ۔  یہ  وُہ  مقام  ہے  جہاں  خُدا  موجوُد  ہے  ۔   ’’  خُدا  نُور  ہے  اور  اُس  میں  ذرا بھی  تاریکی  نہیں  ۔  ‘‘   (  ۱   یوُحنا ؔ  ۱      ۵   )  اُسکی  روشنی  میں  کامِل  فہم  ہے  ۔  اُسی  میں  ہمارا  عِلم  تکمیل  پاتا  ہے ۔  اُس  میں  ہمارے  ماضی  کی  تمام  خطائیں  اور  گُناہ  مِٹ   جاتے  ہیں  ۔  اِس  روشنی  میں  باپ  اور  وُہ  سب  جو  اُس  میں  قیام  کرتے  ہیں   ،  کے  درمیان  مکمل  رفاقت  ہو  جاتی  ہے  ۔ 

 

آسمان  کو   ’’  نُور  کے  ساتھ  مُقدسوں  کی  میراث  ‘‘   قرار  دیا  گیا  ہے  ۔  (  کُلسیوں  ۱      ۱۲   )  کلامِ ِ  مُقدس

میں  روشنی  یا  نُور  کی  صفات  یا  اوصاف   میں  عِلم  ،  پاکیزگی  اور  مُسّرت  نُمایاں  طور  پر  بیان  کِۓ  گۓ  ہیں  ۔   اِس    آسمانی  روشنی  یا  نُور  میں  کبھی  کوئی  خلل  نہیں  آتا  بلکہ  یہ  ہمیشہ  جاری  و  ساری  رہتی  ہے  ۔    ’’  اور  وہاں  کبھی   رات  نہ  ہوگی  ۔‘‘   (  مُکاشفہ  ۲۱      ۲۵   ) 

 

 ٰآسمان  ۔  خوف  اور  گُناہ  سے  پاک  مقام   

 

’’  اور  اُس  میں  کوئی  ناپاک  چیز  یا  کوئی  شخص  جو  گھنونے  کام  کرتا  ہے  یا  جھُوٹی  باتیں  گھڑتا  ہے  ہر  گِز   داخِل  نہ  ہو  گا  ۔  (  مُکاشفہ   ۲۱       ۲۷   ) 

حوصلہ  شِکنیاں   ،   مایوُسیاں   ،  آزمائیش  اور  گُناہ  سب  زمینی  زِندگی  کا  حِصہ  بخرہ  ہیں  ۔  یہ  کبھی  بھی  آسمان  کے  خُوبصُورت  مقاموں  میں  داخِل  نہیں  ہو  پائیں  گے  ۔ 

 

مُکاشفہ  ۲۱      ۴   میں  ہم  پڑھتے  ہیں  ،  ’’  اور   وُہ  اُنکی  آنکھوں  کے  سب  آنسوُ  پونچھ  دے  گا  ۔  اور  اِسکے  بعد  نہ  موت  رہے  گی   اور  نہ  ماتم  رہے  گا   ۔  نہ  آہ  و  نالہ  نہ  درد  ۔  پہلی  چیزیں  جاتی  رہیں  ۔‘‘    ایک  مسیحی  کے  لِۓ  آسمان  ہمارے  آرام  کی  تکمیل  ہے  ،  اور  ہمارے  سفر  کا  اختتام  ۔  ایک  مسیحی  جانتا  ہے  کہ  جیسے  خُدا  نے   اُسکے  دُنیا  میں  آنسوُ  پونچھ  دِۓ  ہیں  اُسی  طرح   آسمان  کی   کامِل  بادشاہی  میں  اُسکے  سب  دُکھ  درد  مِٹ  جائیں  گے  ۔ 

 

بچاۓ  جانے  والوں  کی  حیاّتِ  جاوِدانی    

 

اِس  زمین  پر  اِنسانی   رِشتے  ہم   سب  کے  لِۓ  بڑی  اہمیت  رکھتے  ہیں  ۔  دُوسروں  کی  خُوشیاں  اور  غم  ہمارے  جذبات  کو   مُتاثر  کِۓ  بغیر  نہیں  رہتے  ۔    خاندنی  رِشتے   ہمارے  لِۓ  بڑے معنی  رکھتے  ہیں  اور  اپنوں  سے  جُدائی  بڑی  ہی  درد ناک  ثابت  ہوتی  ہے  ۔  لیکِن  یہ  سب  ہمارے  اِنسانی  وجوُد  کا  لازمی  حِصہ  ہیں  ۔ 

 

جب  یسوُع ؔ  عدالت  کے   لِۓ  دوبارہ   آۓ  گا  تو  سب  چشمِ  زدن  میں  بدل  جائیں  گے  ۔   مُردے  زِندہ  ہو  جائیں  گے  ۔  فانی  بدن  جو  بدی  اور   گُناہ  کی  بدولت  گلنے  سڑنے  سے  بچ  نہیں  سکتا  تب  لافانی  بن  جاۓ  گا ۔  ’’  اور  مُردے  غیر  فانی  حالت  میں  اُٹھیں  گے  اور  ہم  بدل  جائیں  گے    کیونکہ  ضروُر  ہے  کہ  یہ  فانی  جِسم  بقا  کا  جامہ  پہنے  اور  یہ  مرنے  والا  جِسم  حیاتِ  ابدی  کا جامہ  پہنے  ۔ ‘‘  (  ا  کرنتھیوں  ۱۵       ۵۲   ،  ۵۳    )   

  

اِس  نئی  حالت  میں  خاندانی  رِشتے  ہمارے  لِۓ  پہلے  جیسے  معنی  نہیں  رکھیں  گے  ۔  یسوُعؔ  نے  سِکھایا  کہ  آسمان  پر  اُزدواجی  رِشتے  نہیں  ہونگے  ۔  (  متی ؔ  ۲۰   باب   ۳۰    آئت  )  اِس  دُنیاوی   زِندگی  کے  جذبات  خُدا  کی   حضُوری  میں  پائی  جانے  والی  خُوشیوں  کے  سامنے   ماند   پڑ  جائیں  گے  ۔  نجات  پانے  والوں  اور  خُدا  کے  برّے  کے  درمیان  ایسا  کُچھ  نہیں  آۓ  گا  جو   اُنکے  رِشتے  کو  مُتاثر   کر  سکے  ۔   

 

مُقدسین  وُہ  وُہ  مناظر   دیکھیں  گے  جو  فانی  آنکھوں  نے  کبھی  نہ  دیکھے  ہوں  نہ  اُنکا  تصوّر  کیا  ہو   ۔  وُہ  ایسی  نئی  نئی  باتیں  سُنیں  گے  جو  فانی  سماعت  نے  پہلے  کبھی  نہ  سُنی  ہوں  ۔  اور  وُہ   ایسا  حیرت  انگیز  عِلم  حاصِل  کریں  گے  جِو  کبھی  کِسی  کے  دِل   یا  وہم  و  گُمان  میں   بھی  نہ  گُزرا  ہو  ۔  

 

یسوُعؔ  اور  اُسکے  لوگ  جلال  پائیں  گے    

 

   وُہ  دِن  دُور  نہیں    جب  خُداوند  یسوُعؔ  المسیح  دُنیا  پر  بسنے  والے  تمام  لوگوں  پر  ظاہِر  ہوں  گے ۔  ہر  بشر  اُس  کے   سامنے  اپنی  اپنی  عدالت  کے  لِۓ  کھڑا  ہو  گا  ۔  (  متی ؔ   ۲۵       ۳۱    تا   ۳۴    )  اُس  کے  سچّے  پیروکار  اگرچہ  کہ  اِس   دُنیاوی  زِندگی  میں   ا ُن  سے  نفرت  اور  حقارت  سے  پیش  آیا  گیا  ایک  دِن  آسمانی جلال  میں  اُٹھائیں  جائیں  گے  ۔  وہاں  وُہ  ہمیشہ   ہمیشہ  کے  لِۓ  خُدا  کی  حمد  و  ثنا  کر  سکیں  گے  ۔  فنا  لافانیت   سے  بدل   جاۓ  گی  ۔  ’’  اور  جب  یہ  فانی  جِسم  بقا  کا  جامہ  چُکے  گا  تو  یہ  مرنے  والا  جِسم  حیاتِ  ابدی  کا  جامہ  پہن  چُکے  گا  تو  وُہ  قول  پُورا  ہو  گا  جو  لِکھا  ہے  کہ  موت  فتح  کا  لُقمہ  ہو  گئی  ۔‘‘  (  ا  کرنتھیوں  ۱۵      ۵۴   )   ۲   کرنتھیِوں  ۵      ۱    بھی   دیکھیں  ۔ 

       

  اِس  زمینی  زِندگی  میں  مسیحی  یمانداروں  کو  بُہت  سی  آزمایشوں  ،  مُشکلات   اور  مصائب  کا  سامنا  کرنا  پڑتا  ہے  ۔  لیکن  جِن  ایماندروں  نے  فضل  کی  بدولت   نجات  دہندہ  پر  ایمان   اور  اِستقلال  کا  مظاہرہ  کیا  ہے  وُہ  آسمانی  بادشاہی  کے  وارِث  ہونگے  ۔  زمین  کے  ہر  خِطہ سے  اور  ہر  زبان  بولنے   والے  لوگ  جنہوں  نے  اِیمان  کو  قائم  رکھا  سب  وہاں  ہوں  گے  ۔  یہ  عظیم  اور  شمار  سے  باہر  جمِ  غفیر  جِسے  گناہوں  کی  مُعافی  اور  مسیح  کے  خوُن  سے  پاکیزگی  حاصِل  ہو  چُکی   ہو  گی  ،  آسمان  کی  بادشاہی  کا  وارِث  ہو   گا  ۔    (  مُکاشفہ  ۱۹      ۷    تا   ۹   )  

 

وُہ  سب  روُحیں  جو  اِس  زِندگی  میں  نجات  پا  چُکی  ہیں  آسمان  پر  جلال  پائیں  گی  ۔  یہ  کِس  قدر  خُوبصوُرت  بات  ہو گی  جب  خُدا  کی  کلیسیا  کی  شادی  خُدا  کے  برہّ  سے   ہو  گی  ۔  یہ  وُہ  جلالی  منظر  ہو  گا  جو  بیان  سے  باہر  ہے  ۔  (  مُکاشفہ   ۱۹      ۷   تا  ۹   )  

 

آسمان    اِنسانی  فہم  سے  بعید  

 

 ’’  اب  ہم  کو  آئینہ  میں  دُھندلا  سا  دِکھائی  دیتا  ہے  مگر  اُس  وقت   روُبروُ   دیکھیں  گے  ۔  اِس  وقت  میرا  عِلم  ناقص  ہے  مگر  اُس  وقت  ایسے 

 

پوُرے  طور  پر  پہچانوں  گا   جاؤں  جیسے  میں  پہچانا  گیا  ہوں  ۔  ‘‘   (  ۱   کرنتھیوں  ۱۳        ۱۲   ) 

 

آسمان  کا  جاہ  و جلال  نہ  کُلی  طور  پر  سمجھا  جا سکتا ہے  اور  نہ  ہی  بیان  کیا  جا سکتا  ہے  ۔  ہمارے  ذہین  صِرف  اُن  چیزوں  کو  سمجھنے  کی  صلاحیت  رکھتے  ہیں   جِن  کو  ہم  دیکھ  سکتے  ہیں  اور  محسوُس  کر  سکتے  ہیں  ۔  جبکہ  ہم  یہ  تو  جانتے  ہیں  کہ  آسمان  میں  ہم  خُدا  کی  حضوُری  میں  رُوحانی  وجوُد  رکھیں  گے  ،  خُدا  نے  ہم  پر  ہمارے  اُس  ابدی  گھر  کے  بارے  سب  کُچھ  ظاہر  نہیں  کیا  ۔ 

 

پہلے  مسیحی  شہید  ،  ستِفنس ؔ  کو  آسمان  کی  ایک  جھلک   دِکھائی  گئی  ۔   جب  اُسے  اُسکے  ایمان  کے  سبب  سے  سنگسار  کیا  جا رہا  تھا  ،   ’’  اُس  نے  روُح  القُدس  سے  معموُر  ہو  کر  آسمان  کی  طرف  غور  سے  نظر  کی  اور  خُدا  کا  جلال  اور  یسوُعؔ  کو  خُدا  کی  دہنی  طرف  کھڑا  دیکھا   ۔  ‘‘  (  اعمال  ۷       ۵۵   ) 

 

اگر چہ  آسمان  کے  بارے  بہت  کُچھ  وضاخت  سے  بیان  نہیں  کِیا  جا  سکتا  ،  ہم  یہ   ضروُر  جانتے  ہیں  کہ  ماضی  کے  مُختلف  ادوار  کے  ایمانداروں  کی  طرح  خُدا  کے  بناۓ  ہوُۓ  شہر  میں  ہم  بھی  ہمیشہ  ہمیشہ  کے  لِۓ  رہنا  چاہیں  گے  ۔  عبرانیوں  ۱۱   باب   کی  ۱۰   آئت  میں  ہم  پڑھتے  ہیں   کہ  ابرہام ؔ  ’’  اُس  پائیدار  شہر  کا  اُمیدوار  تھا  جِس  کا   معمار  اور  بنانے  والا  خُدا  ہے  ۔  ‘‘   عبرانیوںؔ   ۱۱   باب  ۱۳   تا   ۱۶    آیات  بھی  پڑھیۓ  ۔ 

 

کیا  ہم  بھی  وہاں  ہونگے  ؟ 

  

   اِس  زِندگی  کے  احتتام  پر  ہم  کہاں  جائیں  گے  ؟   کیا  ہم  آسمان  پر  جائیں  گے  ؟   خُدا  کا  روُح  ہمارے  دِلوں  پر  بڑی  نرمی  سے  دستک  دیتا  ہے  اور  ہمیں  یاد  دِلاتا  ہے  کہ  ہم  خُود  کو  اُس  ابدی  مُستقبِل  کے  لِۓ  تیار  کریں  ۔ 

 

ہمیں  یہ  بات  سمجھنے  کی  ضروُرت  ہے  کہ  ہمیں  خُدا  کی  ضروُرت  ہے  ۔  اِبتدا  ہی  سے  گُناہ  میں  پڑنے  کی  وجہ  سے  اِنسان  نے  خُدا  کی  خوُشنوُدی  کھو  دی  ۔  اپنے  گُناہوں  سے  توبہ  کرنے  اور  مسیح ؔ   کے  پاک  خوُن  کی بدولت  مُعافی  کے  ذریعے  ہم  خُدا  کے  ساتھ  یہ  رِشتہ  دوبارہ  بحال  کر  سکتے  ہیں  ۔  تب  ہی  خُدا  ہمیں  قبوُل  کرتا  اور  مُعاف  کرتا  ہے  ۔   یوُں  ہم  خُدا  کے  کلام  اور  اُسکے   پاک  روُح  کی  بدولت  خُدا  کے  فرزند  بنتے  ہیں  ۔  (     (  یوُحناؔ  ۳      ۵    ؛   ۱      ۱۲   )  جو  اِطمینان  اور  خوُشی  ہمیں  حاصِل  ہو  گی  وُہ  اُس  آسمانی  گھر  کی   خُوشیوں  کا  پیش  خیمہ   ثابت   ہو  گی   ۔ 

ہر   روُح   اور  ہر   بشر   اپنے  دِل  میں  اِس  بات  کا  مکمل  یقین  کر  سکتا  ہے  کہ   اُس  کے  لِے ٔ   آسمان  پر  ایک  گھر  تیار  کِیا  گیا  ہے  ۔  (  یوُحنا ؔ  ۱۴     ۲  تا  ۳    )        

ایک خُوشگوا ر گھرانہ گھر پیارا گھر

گھر  پیارا  گھر 

بائبل  مُقدس  ہمیں  ایک  خُوبصُورت  گھر  کا  نمُونہ  اور  خاکہ  پیش  کرتی  ہے  ،  جو  کہ  ساخت  میں  مظبُوط  ہے  اور  اِسکا  ماحول  نہائت  ہی  خُوشگوار  ہے  ۔  گھر   ہم  آہنگی  اور  سکوُن  و  اِطمینان  کا  مقام  ہو  سکتا  ہے  یا  یہ  ذہنی  اذِیئت  اور   لڑائی  جھگڑے   کا   نمُونہ  بن  سکتا  ہے  ۔  کیا  آپکا  گھرانہ  خُوشخال  اور  پُرمُسرت    ہے  ؟  اور  کیا  یہ  مُشکِل  اور  نامساعد  حالات  کا  مُقابلہ  کر  سکتا  ہے  ؟       

 گھرانہ  ایک  اہم  سماجی  اَکائی  ہے  ۔  اور  یہ  ہماری  روحانی  تعمیر  ،  جزباتی  خُوشیوں  اور  مادی  و  جسمانی  ضروُرِیات  کی  تکمیل  کے  لِۓ  خُدا   کی  طرف  سے  قائم  کیا  گیا   ہے  ۔  خُدا  کا   ہمیشہ  سے  یہ  منصُوبہ   رہا  ہے   کہ  خاندان  کے  تمام  ا فراد    ایک  دوسرے  کے  لِۓ  خُوشی  کا  باعث  بنیں  اور  ایک  دُوسرے  کے  ساتھ  ہم  آہنگی  کے  ساتھ  رہیں  ۔  

کُچھ  گھرانے  آخِر   ناخُوش  کیوں  ہیں  ؟

تو  پھِر  ایسا  کیِٔوں  ہے کہ  بیشمار  خاندان  ناخُوش  ہیں  ۔  وُہ  کِیٔوں  ٹُوٹ  پھُوٹ  ،  علیحدگیوں  ،  ناچاکیؤں  اور  تلاق  کا  شِکار  ہیں  ۔  یہ  سب  اِس  لِۓ  ہے  کہ  ہم  نے  خُدا  کا  منصُوبہ  رد  کر  دِیا  ہے  ۔  خُدا  کے  کلام  میں  ایک  خُوشخال  خاندان  کے  قیام  کے  لِۓ  تمام   ضروُری   لوازمات  کا  ذِکر  ہے  ۔   وُہ  خاندان  اور  گھرانے  جو  خُدا  کے  کلام  کی  تعلیم  کے  مُطابِق   تعمیر  ہوتے  ہیں  ،  وُہ  مُحبّت  ،  اعتماد  ، باہمی  مفادات  اور  بے  لوث  و  بے غرض   خِدمت  اور  پیار کے  بندھن  میں  بندھے  رہتے  ہیں  ۔    ایسے  ہی  گھرانے  ہماری  زِندگیوں  میں  ،  ہمارے  معُاشروں   اور  ہمارے  سماج  میں  خُوشیاں  بھرنے  کا  سبب  بن  سکتے  ہیں  ۔   کیا  آپ  خُدا  کے  منصوُبہ  پر  عمل پیرا  ہیں  ،  خُدا  جو  کہ  معمارِ  کامِل  ہے  ۔  خُدا  کے  پاک  کلام  میں  مرقوُم  ہے  کہ    ’’  اگر  خُدا  ہی  گھر  نہ  بناۓ  تو  بنانے  والوں کی  محنت  عبث  ہے  ۔‘‘   زبوُر  ۱۲۷   باب  کی  ۱   آئت  ۔

 نوجوانی  میں  اِنسان  کے  مُستقبِل  کے  گھر  کی  بُنیاد  پڑتی  ہے  ۔   خُدا کے  سامنے  ہماری  کامِل  زندگی   شادی  بیاہ  کی  تیاری  کے  لِۓ  ایک  ضروری  جُزو  ہے  ۔  شادی  سے  پہلے  گُناہ  آلُودہ  زِندگی    مُستقبِل  کی  گھریلوُ   ز ِندگی  کو  برباد  کر  نے  کا  باعث  بن  جاتی  ہے  ۔  نوجوانی  کی  خُود مرکزیت  ،  خُودغرضیاں  اور  اپنی  ہر  خواہش  اور  خُوشی  کو  پُورا  کرنے  کی  دُھن   آنے  والی  اُزدواجی  زِندگی  میں  بے  شُمار  مسائل  اور  مُشکلات  پیدا کرنے  کا  سبب  بن  جاتی  ہیں    ۔  طلاق   اور  علیحدگیوں  کی  بڑھتی  ہوئی   شرح  اِن  حقائق   کا   مُنہ بولتا   ثبوُت  ہے  ۔   اِس  سے  پہلے  کہ  ہم  مسیح  میں  ایک  نئی  زِندگی  کا  آغاز  کریں  ،  ہمیں  اِن  تمام  گُناہوں  اور بُرائیوں  سے  پُوری  طرح  کِنارہ کش  ہونا  پڑے  گا  اور  اِن  سے  توبہ  کرنا  ہو گی  ۔  تب  ہی  ہم  ماضی  کو  اپنے  پیچھے  ڈال  سکیں  گے  اور  پھِر  خُدا  ہماری  زِندگیوں  میں  اپنی  برکات  کے ساتھ  داخِل  ہو سکے  گا  ۔

  گھرانہ  تب   بنتا  ہے  جب  ایک  آدمی  اور  عورت  شادی  کے  بندھن  میں  بندھ  جاتے  ہیں  ۔  بائبل  مُقّد س  میں  لِکھا  ہے  کہ  ہمیں  بیاہ  ’’  صِرف  خُداوند  میں  ‘‘   ہی  کرنا  ہے  ۔  (  ۱  کرنتھِیؤں  ۷   باب  ۳۹    آئت  )   اِ س  کا  مطلِب  یہ  ہُوا  کہ  مرد  اور  عورت   دونوں  نے  اپنی  زِندگیاں  اور  اپنی  مرضی  خُدا وند  کے  ماتحت  کر  دی  ہیں  ۔  زِندگی  کے  ہر  مُعاملہ  میں  خُدا  کو  پہلا   درجہ  حاصِل  ہونا  چاہِۓ  ۔  جب  آدمی   اور  عورت  دونوں  ہی  خُود 

.... ڪا مکمل متن یا حوال ایک خُوشگوا ر گھرانہ گھر پیارا گھر

غرضی  کا  مظاہرہ  کریں  گے  تو   پھِر  باہمی  خُوشیوں  کی  بُنیاد  کہاں  رہے  گی  ؟ 

خُداوند  میں  بیاہ  کرنا 

  ــ’’  خُداوند  میں  ‘‘  بیاہ  کرنے  سے  مُراد  صِرف  یہ  نہیں  کہ  شادی  کرنے  والے  مرد  اور  عورت  مسیحی  ہیں  بلکہ  یہ  کہ  خُدا  اُنکو  ایک  دُوسرے  کو  قریب  لاۓ  گا  ۔  جزباتیٔت  ،  جسمانی  خوُبصورُتی   اور  جنوُنی  عِشق  سب  ایک  اچھی  شادی  کے  لیۓ  بُری  وجوُہات  اور  مُحرکات  ہیں  ۔  جب  یہ

 سب  چیزیں  کِسی  شخص  کے  لِۓ  کِسی  دوسرے    کی  طرف  راغِب  ہونے  کی  بنیاد  بنتی  ہیں  تو  شادی  کے  بعد   اِختلافات   اور  مایوُسیوں  کا  باعث  بن  جاتی  ہیں ۔  جب  ہم  اپنے  جیوّن  ساتھی  کے  اِنتخاب  میں  خُدا  سے  راہنُمائی  مانگتے  ہیں  تو  اُسکی  اِلٰہی  حِکمت  دیکھ  لیتی  ہے  کہ  کون  ہمارے  لِۓ  نہ  صِرف  موجوُدہ  وقت   میں  بلکہ   مُستقبِل  میں  آنے  والے  سالوں   کے  لِۓ   بہترین  ساتھی  بن  سکتا  یا   بن  سکتی  ہے  ۔  خُدا  مُختلِف  پسند  و  نا پسند  اور  مُختلِف  مز۱ج  رکھنے  والے  جوڑوں  کو  مِلا  دیتا  ہے  جو  ایک  بہتر  خاندانی  اکائی  بن  سکتے  ہیں  ۔  ’’  پس  وُہ  دو  نہیں   بلکہ  ایک  جِسم  ہیں  ۔‘‘   (مرقس  کی  اِنجیل  ۱۰   باب  ۸   آئت )

شادی  زِندگی  بھر  کا  بندھن  ہے  نہ  کہ  محض  ایک  سماجی  معاہدہ  ۔  یسُوع ؔ  نے  یہ  واضح  حُکم  دِیا  ۔   ’’  پس  وُہ  دو  نہیں  بلکہ  ایک  جِسم  ہیں  ۔  اِس  لِۓ  جِسے  خُدا  نے  جوڑا  ہے  اُسے  آدمی  جُدا  نہ  کرے  ۔  ‘‘  (  متی  ۱۹   باب  ۶   آئت  )

ایک  خُدائی  اِنتظام

گھرانہ   اپنے  اندر  ایک  چھوٹا  سا  گروہ  یا  سماج  سمیٹے  ہُوۓ  ہوتا  ہے  ،  اور  ہر  سماجی  اِکائی  کی  طرح   اِس  میں  بھی  ضروُری  ہے  کہ  گھرانے  کے  ہر  فرد  کو  اُسکی  مخصوُص  ذِمیداری  سونپی  جاۓ  ۔    خُدا  نے  بائبل  مُقدس  میں  اِس    نظام  کا  ایک  خاکہ  دِیا  ہے  ۔  یہ  اِختیار  کا   ایک ڈھانچہ  اور  خاکہ  ہے  جِس  پر  اگر  عمل  کیا  جاۓ  تو  یہ گھرانے   میں  خُوشیاں  لانے  کا  باعث  بنے  گا  ۔  اِس  میں  سب  سے  بڑی  زمہ داری  شوہر  پر  آتی  ہے  ،  اُسکے بعد  بیوی  پر  او  ر اُسکے  بعد  بچوں  پر  ۔  یہ  خُد ا  کا  نطام  ہے  ۔  (  مذید  مُطالعہ  کے  لِۓ  دیکھیں   ،  پہلا  کرنتھیوں  ۱۱ باب  کی ۳   آئت  اور   اِفسیِوں  ۵   باب   ۲۲   سے  ۲۴   آئت  ) 

 جب  خُدا  کوئی   اصُول  یا  ظابطہ   مُقّرر  کرتا   ہے  تو  وُہ  مُقدس  بن  جاتا  ہے  ۔   اُس  اصوُل   کی  خِلاف ورزی  یقیناناً  رنج  و  افسوس  کا  باعث  بنتی  ہے  ۔  اِسکے  برعکس جو  اُسکے  اصوُلوں  پر  عمل  کرتے  ہیں  وُہ  اُنکو  خُوشی  ،  فضل  اور  دینداری  کی   برکتوں  سے  مالامال  کرتا  ہے  ۔  شادی  کے  موقع  پر  شوہر  اور  بیوی  دونوں  اپنی  اپنی  ذِمہ داری  اور  فرائض  کا  بیِڑا  اُٹھاتے  ہیں  ۔  دونوں  کی  اپنے  اپنے   شعُبوں   میں  اپنی  اپنی  مخصُوص  صلاحیِتوں  کی  ضرورت  ہوتی  ہے  اور  اِسی  طرح  سے  گھر  کا  نظم و  نسق  چلتا  ہے  ۔  لیکِن کسی  ایک  کو  راہنُمائی  کرنی  ہوتی  ہے  ،  اور  خُدا  نے  یہ  منصب  مرد  کو  سونپا  ہے  ۔   ’’   کیوُنکہ  شوہر  بیوی  کا سر  ہے  جیسے  کہ  مسیح  کلیسیا کا  سر  ہے   اور  وُہ  خُود  بدن  کا  بچانے  والا  ہے  ۔  ‘‘  (اِفسیوں  ۵   باب   ۲۳   آئت  )   ایسی  مُحّبت  دوُسرے  کو  خُود  سے  پہلے  رکھنے  کے  جزبہ  سے  ہی  مُمکِن  ہے  ۔  یہ  وُہ   احساس  ہے  جِسکی  بدولت   ایک  شوہر   اپنی  بیوی  کو  ’’ اپنے  بدن  کی  مانند  ‘‘   (اِفسیوں  ۵   باب  ۲۸   آئت  )  جان  کر   اُس کے ساتھ  پیار  سے  پیش  آتا  ہے  ۔  ایک  پیار  کرنے  والا  شوہر  اپنی  بیوی  کو  خُود  سے  کمتر  نہیں  سمجھتا  بلکہ   وُہ   اُس  پر  ہر  طرح  سے  بھروسہ  کر تا  ہے  اور  اُسکے  ساتھ  صلاح  و  مشورے 

کو  اہمیت  دیتا  ہے  ۔  اِس  طرح سے  اپنی  مُحّبت  میں  وُہ  اُسے  اپنا  سچّا  جیون  ساتھی  بنانے  کا  ثبُوت  دیتا  ہے  ۔ 

ــ اِسی  طرح  سے  ’’  اے  بیویو  !  تُم  بھی  اپنے  اپنے  شوہر وں کے  تابع  رہو  ۔ ‘‘   (  ا  پطرسؔ  ۳      ۱   )  جب  ایک  بیوی  گھر  میں  اپنے  شوہر  کی  قیادت  و  راہنُمائی  کو  قبُول  کرتی  ہے  ،  جیسے  شوہر  مسیح  کی  راہنُمائی  اور  قیادت  کو  تسلیم  کرتا  ہے  ،  تو  وُہ  خاندان  امن  و  سکوُن  اور  کا  گہوارہ  بن  جاتا  ہے  ۔  اِفسیوں  ۵      ۲۳    میں  لکھا  ہے  ،   ’’  بیویاں  بھی  ہر  بات  میں  اپنے  شوہرو ں  کے  طابع  رہیں  ۔  ‘‘  اِس  اصُول  سے  بغاوت  نے  آج  کے  خاندانوں  میں  بُہت  زیادہ  رنج  و  پریشانی  پیدا  کر  رکھی  ہے  ۔  اِس  اصُول  سے  روُگردانی  خاندانوں  میں  نہ  صِرف   لڑائی  جھگڑا  اور   تنازعات  کا  باعث  بنتی  ہے  بلکہ  شوہر  اور  بیوی  کے  دِلوں  میں  رُوحانی  کشمکش  اور خلفشار  بھی  پیدا  کرتی  ہے  ۔ 

بچّوں  کا  مقام 

اکژ  ہم  یہ  سمجھتے  ہیں  کہ  بچّے  معصُوم  اور  باِلکُل  سادہ  لوح  ہوتے  ہیں  ۔  تاہم  ،  ہر  اِنسان  فِطرتاً  گُنہگار  پیدا   ہُوا ہے  ۔  ایک  بچہ  بھی  جیسے  جیسے  بڑا  ہوتا  ہے  ،  اُسکی  خُود  غرضانہ  فِطرت  زیادہ  سے  زیادہ  نُمایاں  ہوتی  جاتی  ہے  ۔  وُہ  خُود  اپنے  لِۓ  اور  دُوسروں  لے  لِۓ  ناخُوشی  اور  پریشانی  کا  سبب  بنتا  جاۓ  گا  جب  تک   کہ  اُسکے  والدین   اُسکی  مُناسِب  نظم و  ضبط  کے  دائرے  میں  رہنے  کی    تربیت  نہیں  کریں  گے  ۔ 

بچوّں  کا  فرض  ہے  کہ  وُہ  اپنے  والدین   کے  فرمانبردار  رہیں  ۔  ’’  اے  فرزندو  !  خُداوند  میں  اپنے  ماں  باپ  کے  فرمابردار  رہو   ،  کیونکہ  یہ  واجب  ہے  ۔  (  اِفسیوں  ۶  باب  ۱   )  اِس  فرمابرداری  کا  کامِل  نمُونہ  ہمیں  یسُوعؔ  کی  بچپن  کی  زِندگی  میں  مِلتا  ہے  ۔  ’’  اور  وُہ  اُنکے  ساتھ  روانہ  ہو  کر  ناصرۃؔ  میں  آیا  اور  اُنکے  تابع  رہا  ۔  ‘‘  جب  ایک  گھرانے  میں  اطاعت  و  فرمابرداری  کا  اصُول  کارفرما  ہوگا  تو  والدین  اور  بچّے  خُوش و  خُرم  رہیں  گے  اور  خاندان  ایک  نہائت  ہی  خُوشگوار  ماحول  کا  آئنہ  دار  ہو  گا  ۔ 

جب  خُدا  کے  احکامات  کی  تعمیل  ہو گی  تو  والدین  بچّوں  کے  لِۓ  ،  بچّے  والدین  کے  لِۓ  اور   سارا   خاندان  خُدا  کے  لِۓ  اپنی  زِندگیاں  بسر  کرے  گا  ۔  ایسے  خاندان  ہمارے  سماج  اور  مُعاشرے  کے  لِۓ  برکت  کا  باعث  ہونگے   اور  ہماری  اقوام  کے  تہذیب  و  تمّدن کو   اعلیٰ  معیا ر  بخشیں  گے  ۔ 

آج  کے  دور  میں  بُہت  سے  نوجوان  منّشیات  ،   نئے  نویلے  انداز  کے  لباس  اور  عجیب  و  غریب  قِسم   کی    غیر صحتمندانہ   تفریحات   کے  شوق  اور  جنُون  پالے  ہوُے  ہیں  ۔  وُہ  تیزی  سے  بدلتے   ہُوے  مُعاشرے  کی  رفتار    کے  سحر  میں  پُوری  طرح  سے  گرِفتار  ہو  چُکے  ہیں  ،  ایک  ایسا  مُعاشرہ  جو  سب  اچھی  قدروں  اور  اِخلاقیات  کو   ٹھُکراتا  جا  رہا  ہے  ۔  ایک  وقت  تھا  جب  اِنہوں  نے  ہی  ہمارے   معاشروں  کو  اچھائی  اور  دیانتداری  کا  ایک  میعار  دِیا  تھا   ۔  کیا  محفُوظ  اور  خُوشخال  خاندانوں  کا  فُقدان  ہی  ہماری  نوجوان  نسل  کی  بےچینی  اور  بے  سکُونی  کا   سبب  ہے  ۔  آپ  اِس  صُورتِ حال  کا  کیا  حل  نِکال  سکتے  ہیں  ۔  کیا  آپ  نے  کبھی  سوچا  ہے  کہ  آپکے  گھر  انے  اور  خاندان  کی  تعمیر  کا  دارومدار  آپ  پر  اور  خُدا  کے  ساتھ  آپکی   وفاداری  پر  قائم  ہے  ۔ 

مسیح  ہی  بُنیاد  ہے  

اگر  ہم  ایک  مظبوُط  اور  خُوشخال  خاندان  تعمیر  کرنا  چاہتے  ہیں  تو  یسُوعؔ  مسیح  کو  ہی  اِسکی  بُنیاد  بننا  ہو گا  ۔  پِھر  چاہے  بارِش  برسے  یا  اِس  کے ساتھ

طُوفان  ٹکرائیں  ،  یہ  قائم  و   دائم  رہے  گا  ۔  (  متی ؔ  ۷      ۲۴ )   اِس   سنگدِل  اور  بےرحم  دُنیا  میں  وُہ  ہمیں  ہمارے  گھرانوں  کو  کامیا ب  اور  خُوشخال  بنانے کے  لِۓ  صحیح  سِمت   ،   قُوّت  اور  ہِمت  عطا  کرے  گا  ۔  یسُوعؔ  گھر  اور  خاندان  کو  پیار  کرنے  والا  تھا  ۔     ’’  دیکھ  مَیں  دروازہ  پر  کھڑا  کھٹکھٹاتا  ہُوں  ‘‘  ( مُکاشفہ  ۳    ۲۰  )   پہلے  وُہ  ہمارے  دِلوں  کے  دروازے  پر  اور  پھِر  ہمارے  گھروں  کے  دروازوں  پر  دستک  دیتا  ہے  ۔  کیا  ہم  اُسے  اندر  آنے  دیں  گے  ؟ 

ایک  خُوشخال  خاندان  کا  آغاز  ہمارے  دِل  سے  ہوتا  ہے  ۔  جب  تک  ہمارے  دِلوں  میں  حقیقی  سکُون  نہیں  ، ہمارے  گھروں  میں  بھی  سکوُن  نہیں  ہو  سکتا  ۔   ہم  اپنے  روزمرہ  کے  معمُولات  کے  چِڑِچڑاپن  ،  غُصہ  اور  بیزاری  پر  قابُو  پا  سکتے  ہیں  اگر  ہم  خُدا  پر  اِیمان  اور  بھروسہ  رکھنا  شُروع  کر  دیں  ۔   ’’  جِس  کا  دِل  قائم  ہے  تُو  اُسے  سلامت  رکھے  گا  کیُونکہ  اُس  کا  توّکل   تُجھ  پر  ہے  ۔  (  یسُعیاہ ؔ  ۲۶     ۳  ) 

ایک  نیک  اور  دیندار  خاندان  اکھٹے  مِل  کر  اپنے  دِلوں  کے  لِۓ  ،  اپنے  گھروں  کے  لِۓ  اور  اپنے  آس  پاس   رہنے  والوں  کی  ضروُرتوں  کے  لِۓ  دُعا  کرتا  ہے   ۔  دُعا  ایک  خاندان  کو  یکجا   رکھتی  ہے  ۔  ایک  مشہوُر  کہاوت  ہے  ،  ’’  وُہ  خاندان  جو  اِکھٹے  دُعا  کرتا  ہے  ،  وُہ   ہمیشہ  مُتحد  رہتا  ہے  ۔ ‘‘  

اپنی  زِندگی  اور  اپنے  گھرانے  کے  لِۓ  خُدا  کے  منصوُبے  کو  قبُول  کریں  ۔  اپنے  دِل  کا  دروازہ   یسُوع ؔ  کے  لِۓ  یسُوع ؔ  کھول  دیں  ۔   ’’  اگر  آج  تُم  اُس  کی  آواز   سُنو  ،  تو   اپنے  دِلوں  کو  سخت  نہ  کرو  ‘‘  (  عبرانیوں  ۳       ۷   ،  ۸   )  خُدا  آپکے  دِل کو  اور  آپکے  گھر  کو  برکت  دینے  کے  لِۓ  مُنتظر  ہے  ۔  اپنے  پوُرے  دِل  سے  اُسکی  طرف  متوجہ  ہوں  اور  اُسکے  ساتھ  وفادار  رہیں  ۔  ایک  دِن  وُہ  آپکے   لِۓ  اُس  آسمانی  گھر  کا   دروازہ   کھول  دے  گا   جہاں   دائمی  خُوشی  اور  کامِل  سکوُن  آپکا  اِستقبال  کرے   گا  ۔ 

خُدا کی طرِف سے تُحفہ  کرِِسمس کی کہانی

Jesus in a manger

وقت  اور  زمانوں  سے  پہلے  خُدا  موجوُد  تھا  ،  اور  اُس  کے  ساتھ  اُس  کا   بیٹا  اور  رُوح  القُدس  بھی  ازل  سے  موجوُد  تھے  ۔  اُنہوں  نے  دُنیا  اور  جو  کُچھ  اِس  میں  ہے  ،  تخلیق  کیا  ۔  اپنی  مُحّبت  میں  خُدا  نے  اِنسان  کو  اپنی  صوُرت  و  شبہیۃ  پر  خلق  کیا  اور   اُسے  ایک  خُو بصُورت  باغ  میں  رکھا  ۔  اِنسان  نے  خُدا  کی  بتائی  ہُوئی  ہدایات  کی  نافرمانی  کی  ۔  یہ  نافرمانی   دراصل  گُناہ  تھا  جِس  نے  اِنسان  کو  خُدا  سے  الگ  کر  دِیا  ۔  اُس  نے  اُن  سے  کہا  کہ  اب  اُنہیں  اپنے  گُناہوں  کے  لِۓ  بے  عیب  اور  کامِل  نَو  عُمر  جانوروں   کی  قُر بانی  دینا  ہو  گی  ۔  یہ  قُربانیاں  اُنکے  گُناہوں  کی  قیِمت  تو  نہ  تھیں  اور نہ  ہی  گُناہوں  کا  کفّارہ  تھیں  لیکِن  یہ  اُس  حتمی  قُربانی  کی  طرِف  اِشارہ کرتی  تھیں  جو  آنے  والے  وقت  میں  خُدا  خُود   مُہیّا  کرنے  والا  تھا  ۔ 

ایک  دِن  خُدا  اپنے  بیٹے   یسُوع  کو  اِس  زمین  پر   بھیجنے  والا  تھا  جو  کہ  ساری   دُنِیا  کے  گُناہوں  کی   کُّلی  اور  حتمی  اور  قُربانی  ہونے  والا  تھا  ۔

مریم  اور  فرِشت

The angel speaks to Mary

.... ڪا مکمل متن یا حوال خُدا کی طرِف سے تُحفہ  کرِِسمس کی کہانی

چار  ہزار  سال  بعد  ،   ناصرت  کے  قصبہ  میں  ایک  نوجوان  عورت  مریم ؔ  رہتی  تھی  ۔ 

اُس  کی  منگنی  یُوسفؔ  نامی  آدمی  سے  ہُو  چُکی  تھی  جِس  کے  ساتھ  اُس  کا  بیاہ  ہونا   تھا  ۔ ایک  دِن  ایک  فرِشتہ  مریم ؔ  پر  ظاہِر  ہُوا  اور  اُسے  بشارت  دی  کہ  وُہ  ایک  خاص  بچہّ  کو   جنم  دے  گی  ۔  اور  یہ  کہ  اُسے  اُس  کا  نام  یسُوعؔ  رکھنا  ہو  گا   ۔  اِس  بچّہ  کا  کوئی  دُنیاوی  باپ  نہیں  ہو  گا   بلکہ  وُہ  خُدا  کا  بیٹا  کہلاۓ  گا  ۔ 

یسُوع  کی  پیدائش 

The star shining over Bethlehem

  فرِشتہ  کی  بشارت  کے  بعد  ،  مریم ؔ  اور  یوُسفؔ   بڑا  لمبا  سفر  کر  کے  بیت الحم   گۓ  تاکہ  وہاں  اپنے  محصوُلات  ادا  کر  سکیں  ۔  جب  وہ    بیت الحم     پُہنچے  تو  شہر  میں  بڑی  بھِیڑ  تھی  ۔  اُنہیں  رات  اصطبل  میں  گُزارنا  پڑی  کیُونکہ  سراۓ  خانہ  میں  کوئی  جگہ  نہ  تھی  ۔  پس  یسُوع  ؔ مسیح   اصطبل   میں  ہی  پیدا  ہوُۓ  ۔  مریم ؔ  نے  ننھے  یسوُع ؔ  کو  کپڑے  میں  لپیٹ  کر  چرنی  میں  رکھ  دِیا  ۔

چرواہے

Angels bring glad tidings to the shepherds

 اُسی  رات  شہر  سے  باہِر  ایک  پہاڑی  پر   ، چرواہے  اپنی  بھیڑوں  کی  گلہ  بانی   کر  رہے  تھے  ۔   یکایک   ایک  فرِشتہ   اُن  پر   ظاہِر  ہُوا  اور   چرواہوں  کے   اِردگرِد  خُدا  کا  جلال  چمکا  ۔   فرِشتہ  نے  اُن  سے  کہا  ،  ’’  ڈرو  مت   ،  کیِونکہ  مَیں  تُمہیں  ایک  عظیم  بشارت  دیتا  ہوں  جو  تمام  لوگوں  کے  لِۓ   بڑی  خُوشی  کا  باعث  ہو  گی  ۔  ٰآج  رات  ایک  نجات  دہِندہ  پیدا  ہُوا  ہے  ۔  وُہ   خُداوند  یسُوع ؔ  مسیِح  ہے  ۔  تُم اِس  بچہّ  کو  کپڑے  میں  لِپٹا  ہُوا  ایک  چرنی  میں  پڑا  ہُوا  پاؤ  گے  ۔    پھِر  فرِشتوں  کا  ایک  گروہ  خُدا کے  نام  کو  جلال  دیتے  ہوُۓ  اور  اُسکی  تعریف  کرتے  یہ  کہتے  ظاہر  ہُوا  ،
  ’’  عالمِ  بالا  پر   خُدا  کی  تمجید  ہو  ،  اور  زمیِن  پر  اُن  آدمیوں  میں  جِن  سے  وُہ  راضی  ہے  صُلح  ‘‘۔
    جب  فرِشتے  چلے  گۓ  چرواہوں  نے  اپنی  بھیڑوں  کو  وہیں  چھوڑا  اور   جلدی  سے  بیت  الحم  کو  روانہ   ہوُۓ  ۔  وہاں  اُنہوں  نے  جیسا  فرِشتوں  نے کہا  تھا  ویسے  ہی  بچہّ  کو   پایا  ۔  

مجوُسی

The wise men bring their gifts

جب  خُداوند  یسوُع  پیدا  ہُوے ٔ  ،  ایک  اور  مُلک  سے  بڑے  دانا  مجوُسی  آۓ  ۔  اُنہوں  نے  دریافت  کِیا کہ  ’’  وُہ  بچّہ  جو  یہوُدِیوں  کا  بادشاہ  پیدا  ہُوا  ہے  ،  کہاں  ہے  ؟  ہم  نے  مشرِق میں  اُس  کا  سِتارہ  دیکھا  ہے  اور  ہم  اُس  کی  پرستش کرنے  آۓ  ہیں  ‘‘۔  جب  ہیردیس  بادشاہ  نے  یہ  سُنا  ،  وُہ  بڑا  ناخُوش  اور  پریشان  ہُوا  ۔  اُس  نے  کاہنوں  اور  شرع  کے  عالموں  کو   ایک  ساتھ     بُلایا  ۔  اُنہوں  نے  اُسے  بتایا  کہ  نبیوں  کے  کہنے  کے  مُطابِق  ،  بیت  الحم  میں  ایک  حاکِم  پیدا  ہو  گا  ۔  بادشاہ  ہیرودیس نے  اِن  دانا  مجُوسیِوں  کو  بیت الحم  بھیجا  تاکہ  وُہ  اِس  بادشاہ  کی  تلاش  کریں  ۔   جیسے  ہی  یہ  مجُوسی  یرُوشلم   سے  نِکلے  ،  سِتارے  نے  اُنکی  راہنُمائی  کی  اور  وُہ  اُس  گھر  پُہنچ  گۓ  جہاں  ننھا  یسُوع  تھا  ۔  وُہ   یسُوع  کے  آگے  گِرے  اور  اُسے  سجدہ  کیا  ۔  اُنہوں  نے  یسُوع  کو  سونے  ،  لُبان  اور  مُر  بطور  تحائف  پیش  کِے ٔ  ۔    
 خُدا  نے  اُنہیں  خواب  میں  یہ  ہدائت  دی  تھی  کہ  وُہ  واپس  بد کار  بادشاہ   ہیرودیس  کے  پاس  مت  جائیں  ،  چُنانچہ  وُہ  ایک  دُوسرے  راستے  سے  اپنے  اپنے  گھر   لوٹ  گئے  ۔

ُدا  نے  یہ  تُحفہ  (یسُوعؔ)  کِیوُں  عطا کیا  ؟


یسُوع ؔ    خُدا  کے   بیٹے  تھے  ۔  اُنہوں  نے  ساری  زِندگی  بغیر  کُوئی  گُناہ  کِۓ  گُزار ی ۔  وہ  ہر   طرح  سے  کامِل  تھے  ۔  تِیس  برس  کی  عُمر  میں  اُنہوں  نے  اپنے  باپ  ،  یعنی  خُدا  کے  بارے  تعلیم  دینا   شُروُع  کر  دی  ۔  اُنہوں  نے  بُہت  سے  مُعجزے  کِۓ  جیسے  کہ  اندھوں  کو  بِینائی  ،  بیماروں  کو  شِفا  دینا  اور  یہاں  تک  کہ  مُردوں  کو  زِندہ  کرنا  ۔   اور  سب  سے  بڑھ  کر  یہ  کہ  کیسے  آسمان  میں  ہمیشہ  کی  زِندگی  حاصِل  کی  جا  سکتی  ہے  ۔  پھِر  اُنہوں  نے   اپنی  زِندگی   سارے  جہان   کے  گُناہوں  کے  لِۓ   قُربانی  کے  طور  پر  دے  دی  ۔   
  
بائبل  مُقدّس  میں  یُوحناؔ کی  اِنجیل  ۳   باب  ۱۶   آئت  میں  لَکھا  ہے   ’’  کِیونکہ  خُدا  نے  دُنیا  سے  ایسی  مُحّبت  رکھی  کہ  اُس  نے  اپنا  اِکلوتا  بیٹا  بخش  دِیا  ،  تاکہ  جو  کوئی  اُس  پر  اِیمان  لاۓ  ہلاک  نہ  ہو  بلکہ  ہمیشہ  کی  زِندگی  پاۓ  ۔

Jesus on the cross

خُداوند  یسُوعؔ  دُنیا  میں  اِس  لِۓ   آۓ  تاکہ  وُہ  ہمارے  لِۓ  صلیب  پر  اپنی  جان  کی  عظیم  قُربانی  دیں  ۔    یسُوع   کی  جان  کی  اِس  قُربانی  کی  بدولت  تمام  دُنیا  کے  گُناہوں  کی  قِیمت  اور  کفارہ  ادا  ہو گیا  ہے  ۔    اب  ہمیں  اپنے  گُنا ہوں  کے  لِۓ  اور  قُربانِیا ں  چڑھانے  کی ضروُرت  نہیں  ۔   یہ  خُدا  کے  اُس   وعدہ  کی  تکمیل  تھی  جو    ہمارے  لِۓ  ایک  نجات  دہِندہ  بھیجنے  کے  لِۓ  کیا  گیا  تھا  ۔   

اگرچہ  خُداوند  یسُوعؔ  بدکار  لوگوں  کے  ہاتھوں  قتل  ہوُۓ  ،  موت  اُن  پر  کُچھ  غلبہ  نہ  رکھ  سکی  ۔  لہٰذا  تین  دِنوں  کے  بعد  وُہ  ایک  فاتح  کی  حیثیِّت  سے   قبر  سے  باہر  آ گۓ  ۔  زِندہ  ہونے  کے  بعد  کئی  دِنوں  تک  وُہ   بُہت  سے   لوگوں  کو  نظر  آتے  رہے  ۔  پھِر  ایک  دِن  اپنے  شاگِردوں  کو  برکت  دینے  کے  بعد  وُہ  آسمان  پر  اُٹھا  لِۓ  گۓ ۔  

جب  ہم  خُداوند  یسُوعؔ  پر  ایمان  لے  آتے  ہیں   اور  اپنی  زِندگی  اُس  کی  سپُردگی  میں  دے  دیتے  ہیں  ،  تو  اُس  کا    خُون   ہمیں  ہمارے  سب  گُناہوں  سے  پاک کر  دیتا  ہے  ۔  جب  ہم  نجات  کے  اِس  بیش  قیمت  تُحفے  کو  قبُول  کر لیتے  ہیں  تو  ہمارا  خُدا  کے  ساتھ  دوبارہ  میل  مِلاپ  ہو  جاتا  ہے  ۔  تب  خُداوند  یسُوعؔ   ہمارے  شخصی  نجات  دہِندہ  بن  جاتے  ہیں  اور  ہم  اُن  کے  فرزند  ہونے  کی  برکت  حاصِل  کر  لیتے  ہیں ۔    جلد  ایک   دِن  خُداوند  یسُوعؔ  واپس  آرہے  ہیں  اور  وُہ  تمام   سچّے  اِیمان  داروں  کو  اپنے  ساتھ  آسمان  پر  لے  جائیں  گے  ۔  وہاں  وُہ  ہمیشہ  خُدا  کے  ساتھ  سکُونت  کریں  گے  ۔