موت کے بعد

اِس  وقت  آپ  زِندہ  ہے  ۔  آپ  سانس  لے  سکتے  ہیں  ۔  آپ  چل  پھِر  سکتے  ہیں  ۔  ہو  سکتا ہے  آپ  بڑی  آسائش  کی  زِندگی  بسر  کر  رہے  ہوں  یا  آپ  مشکلات  سے  بھری  زِندگی  جی  رہے  ہیں  ۔  سوُرج  طلوُع  ہوتا  ہے  اور  غروُب  ہوتا  ہے  ۔  دُنیا  میں  کہیں  کوئی  بچًہ  پیدا   ہو  رہا  ہے  اور  کہیں  کوئی  اِس  دُنیا  سے  رُخصت  ہو  کر  موت  کی  وادی  میں  جا  رہا  ہے  ۔  

زِندگی   کا   تمام  نظام  معموُلی  و  عارضی  ہے 

لیکِن 

مرنے  کے  بعد  آپ  کہاں  جائیں  گے  ؟

آپ  مذہبی  ہیں  یا  آپ  کِسی  بھی  مذہب  کو  نہیں  مانتے  آپکے  لِۓ  اِس  اہم  ترین   سوال  کا  جواب  جاننا  ضروُری  ہے  ۔   کیونکہ  اپنی  مُختصر  سی   دُنیاوی  زِندگی  گُزارنے  کے  بعد  اِنسان  اپنی  ابدی  منزل  کی  طرف  چلا  جاتا ہے  ۔  (  واعظ  ۱۲       ۵    ) 

لیکِن  کہاں  ؟  

وہ  قبرستان  جہاں  آپکو  سپُردِخاک  کِیا  جاۓ  گا   ،  وُہ   آپکی  روُح  کو  قبر  میں  قید  نہیں  رکھ  سکتی  ہے  ۔  اگر چہ آپ  کے  بدن  کو  چِتا  پر  جلا  دِیا  جاۓ  تو  بھی  آپکی  روُح  آگ  کے   شعلوں  میں   بھسم  نہیں  ہو  سکے  گی  ۔  اگر  آپ  سمندر  کی  گہرائی  میں  ڈوُب  کر  ہلاک   ہوں  تو  بھی  آپکی  روُح  فنا  نہیں  ہوگی  ۔ 

 

آپکی  روُح  کبھی  مر  نہیں  سکتی 

آسمان  اور  زمین  کے  خُدا  نے  فرمایا  ،   ’’  تمام  روُحیں  میری  ہیں  ‘‘ 

ُآخرت  میں  کہیں  دوُر   آسمان  پر  آپکی  روُح  جو  آپکا  حقیقی  وجوُد  ہے  آپکے  اٰن  تمام  اعمال  کا  سامنا  کرے  گی  جو  آپ  نے  اپنی  زمینی  حیات  کے  دوران  کِۓ  ۔  یعنی  سب  اعمال  ،  خواہ  اچھے  یا  بُرے  ۔  حوالہ  دیکھِیۓ   عبرانیوں  ۹   باب  ۲۷    آئت  ۔     

مُمکِن  ہے  آپ  بڑے  خلُوصِ  دِل سے  عبادت  کر  رہے  ہوں  ۔

شائد  آپ  اپنے  بُرے  اعمال  پر  نادم  و  شرمِندہ  ہوں  ۔ 

یہ  بھی  مُمکِن  ہے  کہ  آپ  نے  کِسی  سے  ناجائز  طریقہ سے  حاصِل  کی  ہوُئی  دولت  بھی  واپس  کر  دی  ہو  ۔ 

 

یقیناً  یہ  سب   بھی  بہت  ضروُری  ہے  ۔ 

لیکِن

کِسی  بھی  طور  آپ  اپنے  گُناہوں  کا  کفارہ  نہیں  دے  سکتے  ۔    

آسمان  کا  خُدا  جو  کہ  سارے  جہاں  کا  سچًا  اور  عادِل  مُنصف  ہے  ،  آپکی  زِندگی  کی  ہر  چیز  اور  ہر  گُناہ  سے  با خبر  ہے  ۔  اُس  سے  کوئی  چیز  چھُپی  نہیں  ۔  آپ  اپنے  گُناہوں  کے  ساتھ  آئندہ  جہاں  کی  جلالی  اور  پُر  مسًرت  زِندگی  میں  داخِل  نہیں  ہو  سکتے  ۔  لیکن  یہ  آسمانی  خُدا  مُحبت  کا  خُدا  ہے  ۔  اُس  نے  آپکی   زِندگی  اور  روُح   کے  لِۓ  نجات  کا  راستہ   تیار  کِیا  ہے  ۔  آپکا  جہنم  کی  ابدی  آگ  میں  ڈالے  جانا  لازم  نہیں  ۔  حُدا نے  یسوُعؔ  کو  دُنیا  میں  اِس  لِۓ  بھیجا  تاکہ  آپکی  روُح  کو  بچایا  جاۓ  ۔   کلوًری  کے  مقام  پر  اُس  نے  اذیت  ناک  حالات  میں  اپنی  جان  دی  ۔   ہمارے  گُناہوں  کے  کفارہ  کے  لِۓ   خُدا  نے  آسمان  پر  سے  بنی  نو  اِنسان  کے  لِۓ  بہترین  تحفہ  عطا  کِیا  ۔   ’’  حالانکہ  وُہ  ہماری  خطاؤں  کے  سبب  سے  گھائل  کِیا  گیا  اور   ہماری  بد  کِرداری  کے  باعث  کُچلا  گیا  ۔  ہماری  سلامتی  کے  لِۓ  اُس  پر  سیاست  ہوُئی  ،  تاکہ  اُس  کے  مار  کھانے  سے  ہم  شفا  پائیں  ۔ ‘‘   (  یُسعیاہ  ؔ ۵۳      ۵   )  یسوُعؔ  مسیح  کی  نِسبت  یہ  الفاظ  اُنکے   دُنیا  میں  آنے  سے  کئی  سال  قبل  کہے  گۓ  تھے  ۔   

 

کیا  آپ  اِس  بات  کا  یقین  کریں  گے  کی  یسوُعؔ   آپ  سے  پیار  کرتا  ہے  ؟  کیا  آپ   اُس  سے  دُعا  کر  کے   اپنے  گُناہوں  کا  اِقرار  کریں  گے  ۔  کیا  آپ  زِندہ  خُدا  کے  بیٹے  کے  سامنے  توبہ  کر  کے   اُس  پر  ایمان  لائیں  گے  ۔  خُود  کو  مکمل  طور  سے  اُسکی   اطاعت   میں  لانے  پر  آپ  اپنی  زِندگی  میں   سکوُن  و   اِطمینان  پائیں  گے  اور  موت  کے  بعد  بھی  وُہ  آپکو  ابدی  حیات  کا  تحفہ  دے  گا  ۔  تب  ہی  آپ  اُس  ابدی  گھر   کا  یقین  کر  سکتے  ہیں  جو  آپکی  روُح  کے  لِۓ  خُوشی ،  آرام  اور  دائمی  سکوُن  کا  باعث  ہو  گا  ۔  لیکن  وُہ  جو  یسوُعؔ  کی  نجات  بخش  مُحبت  کو  رد  کرتے  ہیں  اُنکے  لِۓ   جہنم  کا  گڑھا  اور  کبھی  نہ  بھُجنے  و الی  ا ٓگ   اِنتظار  کر  رہی  ہے  ۔  موت  کے  بعد  واپسی  کا  کوئی  راستہ  نہیں  ۔  ’’  پھِر  وُہ  بائیں  طرف  والوں  سے  کہے  گا  اے  معلوُنو  میرے  سامنے  سے  اُس   ہمیشہ  کی  آگ  میں  چلے  جاؤ  جو  ابلیس ؔ  اور  اُسکے  فرِشتوں  کے  لِۓ  تیار  کی  گئی  ہے  ۔  (  متی ؔ  ۲۵      ۴۱   )   ’’  اور  اِس  نکمے  نوکر  کو  باہِر  اندھیرے  میں  ڈال  دو  ۔  وہاں  رونا   اور   دانت  پیسنا   ہو  گا  ۔  (  متی ؔ  ۲۵      ۳۰   )

 

بائبل مُقدس  میں  ہمیں   خُدا   دُنیا   پر  آنے  والی  عدالت  کے  بارے  خبردار  کرتا  ہے  ۔  کلامِ  پاک  ہمیں  اِس  فیصلہ  کُن  دِن  سے  پہلے  آنے  والے  واضح  نِشانات  اور  حالات  کی  پیش  گوئیاں  بتاتا ہے  ۔    

 

اِن  پیش  گوئیوں  میں  مسیح ؔ  کے  آنے  سے  پہلے   قوموں  کے  درمیان   جنگوں  ،  او ر  جنگوں  کی  افواہیں  ،   گمبھیِر    پریشانیاں   اور  بدحالی  کا  بیان  کِیا  گیا  ہے  ۔   قومیں  آپس  میں  لڑائیوں  اور  باہمی  جھگڑوں  میں  اِس  قدر  اُلجھ  جائیں  گی  کہ  وُہ  اپنے  اِختلافات  پر  غالب  نہیں  آ  پا ئیں  گی  ۔  اِس  کے  ساتھ  ساتھ  لوگ  اِن  نِشانیوں  اور  آگاہیوں  کی  پرواہ  نہ  کرتے  ہوُۓ  خُدا  کی  بجاۓ  اپنی  اپنی  آسائشوں  میں  مگن  رہنے  کو  ترجیح   دیں  گے  ۔ 

کیا  ہم  آج  یہ  ساری  باتیں  پوری  ہوتے  ہوۓ  نہیں  دیکھ  رہے  ؟  حوالے  دیکھیۓ    متیؔ ۲۴       ۶   ،  ۷     اور    ۲    تیِمُتھیس  ۳       ۴    ۔ 

آئیے  ہم  یاد  رکھیں  کہ  ہمارا  عظیم  مُنصف  نہ  تو  ہماری  دولت  ،  نہ  ہی  غُربت  ،  شُہرت  یا  ادنیٰ  حیثیت  ، رنگ  یا  نسل  یا   عقیدے  سے  یا  ذات  یا  رُتبہ  سے  مُتاثر  ہو  گا  ۔  ایک  دِن  ہم  اپنے  عظیم  خالِق  کے  سامنے  اپنے  اعمال  کا  جواب  دینے  کے  لِۓ  کھڑے  ہونگے  ۔  پڑھیۓ  متی ؔ  ۲۵     ۳ ۲   ، ۳۳   ۔

 

آگے  آنے  والی  ابدیت  میں  نہ  کوئی  گھڑی  ،  نہ  کوئی  سالانہ  کیلینڈر  اور  نہ  سالوں  اور  صدیوں  کا  کوئی  حساب  کِتاب  باقی  رہے  گا  ۔  گُنہگاروں  اور  بدکاروں  کی  اذیت  کا  دُھواں  ابدالآبا د  اُٹھاتا  رہے  گا   جبکہ  خُدا  کے  برگُزیدہ  اُسکی  حضوُری  میں  ہمیشہ  کے  لِۓ  اُسکی  حمد و  ثنا  گائیں  گے  ۔  اپنے  لِۓ  آج  ہی  اِنتخاب  کر  لیں  ۔  ہو  سکتا  ہے  پِھر  بہت  دیر  ہو  جاۓ  ۔  ’’  دیکھو  اب  قبوُلیت  کا  وقت  ہے  ۔  دیکھو یہ  نجات  کا  دِن  ہے  ۔   ۲   کرنتھیوں  ۶   باب  ۲   آئت  ،  متیؔ  ۱۱      ۲۸      ۳۰   ۔ 

آپکی روُح کی جنگ

A shield and sword

فرانس  کے  بڑے  شہر  پیرس  میں  جنرل  نپولین  کی  یاد  میں  اُس  کا   ایک  عالی  شان   مُجسمہ  نصب  کِیا  گیا  ہے  ۔   اٹھارویں  صدی  کے  اختتام  اور  اُنیسویں  صدی  کے  آغاز  میں  وُہ  یورپ   میں  دہشت  اور  خوف  کی  علامت  بن  چُکا  تھا  ۔  اُسکی   مشہوُور ِ  زمانہ  فتوُحات  اِس  حد  تک  پُہنچ  گئیں  کہ  سِواۓ  اِنگلستان  کے  تقریباً  تمام  یورپ 

اُسکے  ماتحت ہو  چُکا تھا  ۔   یہ  بُلند  نظر  جنرل  ساری  دُنیا  کو  اپنے  زیرِ  اثر  لانے  کے  خواب  دیکھ  رہا  تھا  ۔ 

پیرس ؔ  میں  ’’  محراب  الفتوُحات  ‘‘   نامی  ایک  یادگار  ہے  جِس  پر  اُن  تمام  جنگوں  اور  فتوُحات  کی  فہرست   درج ہے  جو  نپولین ؔ  نے  اپنی  زِندگی  میں  حاصِل  کیں  ۔   تاہم  اِس  فہرست  میں  سے  ایک  معرکے  کا   ذِکر  نہیں  اور  وُہ  ہے  جنگِ  واٹرلُوؔ  ۔  کیوں  ؟  اِس  لِۓ  کیونکہ  نپولین ؔ  یہ  جنگ  ہار  گیا  تھا  ۔    حالات  بدل  چُکے  تھے  ۔  اُسکے  تمام  منصوُبے  خاک  میں  مِل  گۓ  کیونکہ  وُہ  اپنی  زِندگی  کا  سب  سے  اہم  معرکہ  ہار  گیا  تھا  ۔  اِس  کے  بعد  اُسے  جلاوطن  کر  دِیا  گیا   اور  وُہ    ایک  نہائت  ہی  ناپسندیدہ  شخص  کی  طرح  مرا  ۔

 

نپولین ؔ  کو   ساری  دُنیا   فتح  کر  کے  بھی  کیا  حاصِل  ہوتا  اگر  آخِر  میں  واٹرلُو ؔ  پر  اُسے   اپنا  سب  کُچھ  ہارنا  ہی  تھا  ۔   اُسکی  شان  و  شوکت  ،  شُہرت   اور  مال  و  دولت  سب  گھڑی  بھر  میں  جاتے  رہے  ۔  یہ  عِبرتناک  شکست   اُسکے  ماضی  کی  تمام  فتوُحات  پر  بھاری  ثابت  ہوُئی  ۔  یہ  معرکہ  ہارنے  کی  وجہ  سے  وُہ  اپنا  کُچھ  سب  ہار  گیا  ۔ 

 

ہر  ذِمہ  دار  روُح   زندگی  میں  بڑے  بڑے  مُشکِل  اِمتحانوں  اور  مرحلوں  میں  سے  گُزرتی  ہے  ۔  اِن  اِمتحانوں  اور  مرحلوں  کے  نتائج  بڑے  ہی  گمبھیر  اور  بڑی  ہی  اہمیت  کے  حامِل  ہوتے  ہیں  ۔  واٹڑلُو  کی  شکست  نپولینؔ  کے  لِۓ  اِس  دُنیاوی  زِندگی  میں ہی  بڑی  ذِلت  و  رُسوائی  لانے  کا  سبب  بن  گئی  ۔  آپکی  روُح  کی  جنگ  کی  شکست  آپکے  لِۓ  ابدی  رنج  و  الم   اور  اذیت  کا  باعث  بن  سکتی  ہے  ۔   کیا  آپ  نے  کبھی  خُود  مرکزیت  کی  شکار  مسیحؔ  سے  الگ  زِندگی  کے  نتائج  پر  غور  کِیا  ہے  ؟ 

 

 

کیا  آپ  نے  کبھی  سوچا  ہے  کہ  کہیں  آپ  بھی  اپنی  زِندگی  کی  جنگ   تو  ہارنے  نہیں  جا رہے  ہیں  ؟  یعنی  زِندگی  اور  موت  کی  جنگ  ؟  آسمان  اور  دوزخ  کی  جنگ  ۔  خُودی   اِنکاری  اور  خُود  پرستی  کی  جنگ  ۔  آپکی  رُوح  اور  ابلیسؔ  کی  جنگ  ۔   یسوُعؔ  نے  فرمایا  ۔ 

 

ــ’’  اور  آدمی  اگر  ساری  دُنیا  کو  حاصِل  کرے  اور  اپنی  جان  کا  نُقصان  اُٹھاۓ  تو  اُسے  کیا  فائدہ  ہو  گا  ؟  (مرقس  ؔ  ۸   باب  ۳۶   آئت  ) 

 

اِس  فِطری  دُنیا  کا  بُہت  کم  یا  بُہت  زیادہ  مال  ہمارے  پاس  ہو  اور  ہم  اپنی  روُح  کو  کھو  دیں  تو  یہ کیسی  ہی  المناک   بات  ہو گی  ۔  ہماری  ابدی  تقدیر  کا  فیصلہ  ہو  جاۓ  گا  ۔  بُہت  سے  لوگوں  کو  اِس  بات  کا  احساس  نہیں  کہ  ہمیں  ایک  سخت  اور  کٹھن  روُحانی  جنگ  کا  سامنا  ہے  ۔  ابلیسؔ  اور  دُنیاوی  آسائشوں  نے  اُنکی  سمجھ  کو  موقُۡوف  کر  کے  رکھ  دیا  ہے   اور  وُہ   گُناہ  کے  خِلاف   اِس  جنگ  کی  سنگینی  سے  غافل  ہیں  ۔  بائبل  مُقدس  میں  لِکھا  ہے    ’’  اے  سونے  والے  جاگ  اور  مُردوں  میں  سے  جی  اُٹھ  ،  تو  مسیح ؔ  کا  نُور  تُجھ  پر  چمکے  گا  ۔  ‘‘   (  اِفسیوںؔ  ۵      ۱۴   )

  گُناہ  اور  ابلیس  ؔ   کے  بندھنوں  کو  اُتار  پھینکیں  ۔  ہمیں  اِس  جنگ  کو   ہر  قیمت  پر  جیتنا  ہے  ۔   ہم  فِطری  و  جسمانی   موت  سے  تو  بھاگ  نہیں  سکتے  لیکِن  ابدی  موت  سے  خُود  کو  بچا  سکتے  ہیں  ۔  ’’  پھِر  موت   اور  عالمِ  ارواح  آگ  کی  جھیل  میں  ڈالے  گۓ  ۔  ‘‘  (  مُکاشفہ  ۲۰      ۱۴   )  ’’  جہاں  اُنکا  کِیڑا  نہیں  مرتا  اور  آگ   نہیں  بُجھتی  ۔  ‘‘  (  مرقس  ؔ  ۹      ۴۴    )  اگر  آپ  اپنی  روُح  کی   نجات  کی  جنگ   ہار  جاتے  ہیں  تو  پھِر  سامنے  صِرف  ابدی  بربادی  اور  جہنم  کی  اذیت  ہے  ۔  

 

کیا  آپ  نے  کبھی  سوچا  ہے  کہ  آپ کے  اور  آپکی   موت  کے  درمیان  صِرف  ایک  قدم  کا   فاصلہ  ہے  ؟  کیا  آپ  وقت  کی  اِس  دہلیز  کو  پار  کر  کے  ابدیت  میں  داخِل  ہونے  کے  لِۓ  تیار  ہیں  ؟  وُہ  فتح  حاصِل  کرنے  کے  لِۓ  جو  ہمیں  ہمارے  آسمانی  گھر  تک  لے  جاۓ  گی  آپکو  مسیحؔ  کے  پاس  آنا  ہوگا  جو   ’’   گُنہگاروں  کو   نجات  دینے  کے  لِۓ  دُنیا  میں  آیا   ۔  ‘‘  خُدا  سب  آدمیوں  کو  ہر  جگہ  حُکم  دیتا  ہے  کہ  توبہ  کریں  ‘‘ َ  ۔  ( ۱عمال  ۱۷       ۳۰   )  ابھی  !  کل  نہیں  یا  پھِر  کِسی  اور   مُناسب  وقت  ۔  ’’  دیکھو   اب  قبوُلیت  کا

 

وقت   ہے  ۔  دیکھو  یہ  نجات  کا  دِن  ہے  ‘‘   (  ۲   کرنتھیوں  ۶      ۲    )  اگر  ابھی  تک  آپکے  دِل  میں  مسیح  ؔ نہیں  ،  اگر  آپکا  ماضی  آپکو  ملامت  کرتا  ہے  ،  اگر  آپ  نے  ابھی  تک  نئے  سِرے  سے  پیدا  ہونے  کا  تجربہ       حاصِل  نہیں  کِیا   (  یوُحناؔ  ۳      ۳    )   تو   بے  فِکر  ہو  کر   بیٹھے  نہ  رہیں  ،  توبہ  کریں  ،  جِس  حال   میں  بھی   ہیں  جیسے  بھی  ہیں  مسیحؔ  کے  پاس  آئیں  ۔   ابھی  جبکہ  وُہ  آپ  کے  دِل   کے  دروازے  پر  کھڑا  دستک  دے  رہا   ہے  ۔  اُس  نے  کہا  ،  ’’  اگر  کوئی  میری  آواز  سُن  کر  دروازہ  کھولے  گا  تو   مَیں  اُس  کے  پاس  اندر  جا  کر 

اُس  کے  ساتھ   کھانا  کھاؤں  گا  اور  وُہ  میرے  ساتھ  ‘‘   (  مُکا شفہ  ۳      ۲۰   )  آپ  پوُچھیں  گے  ،  ’’  کیا  کوئی  گُنہگار  واقعی  بچایا  جا  سکتا  ہے  ؟  ‘‘   ہاں  !  اِیمان  رکھتے  ہوُۓ  اپنے  پوُرے  دِل  کے  ساتھ  اُس  کے  پاس  آئیں  اور  اُسے  اپنا  شخصی  نجات  دہیندہ  کے  طور  پر  قبُول  کریں  ؛  اپنے  گُناہوں   سے  توبہ  کریں   اور  پاک  روُح  کی  آواز   کے  شِنوا  ہوں  ۔  تبھی  آپ  اپنی  روُح  کی  جنگ  جیت  سکیں  گے  ۔  یوُں  آپ  نہ  صِرف  اِس  زِندگی  میں  اِطمینان  اور  خوُشی  حاصِل  کریں  گے  بلکہ  اپنے  نجات  دہِندہ  کے  ساتھ  ابدی  حیات  کی  خُوشیوں   اور   اُس کے  جلال  میں  شامِل  ہوں  گے  ۔  

 

ہزاروں  سال  پہلے  حِزقی  ایل ؔ  نبی  نے  فرمایا    ’’  لیکِن  اگر شریر  اپنے  تمام  گُناہوں  سے  جو  اُس   نے  کِۓ  ہیں  باز  آۓ  اور  میرے  سب  آئین  پر  چل  کر  جو  جائز  اور  روا  ہیں  کر  تو  وُہ  یقیناً  زِندہ  رہے  گا  ۔  وُہ  نہ  مرے  گا  ۔  ‘‘   (  حِزقی  ایل   ۱۸      ۲۱   ) 

 

اگر  آپ  صِرف   اِس  گُنہگا ر  دُنیا  کی  لُزتیں  حاصِل  کرنا  چاہتے  ہیں  تو  واٹر  لوُؔ  میں   نپولینؔ   کی   شکست  کی  طرح  آپ  بھی  آخِر  میں  اپنی  روُح  کی  شکست  سے  دوچار  ہوں  گے  ۔   بغیر   نجات  دہِندہ  کے  آپ  اُس  ڈوُبتے  ہوُے  شخص  کی  طرح  ہیں  جِس  کا  کوئی  یار  و  مدد گار  نہیں  اور  جو   یقیناً  برباد ی  کی  راہ  پر  گامزن  ہے      ۔  کیا  ہی  بدنصیبی  کی  بات  ہوگی  کہ  کوئی  شخص  آخِر  میں  ہمیشہ  کی  زِندگی  کی  جنگ  ہار  جاۓ  اور  دوذخ  کا  سزاوار  ٹھہرے  ۔    پس  بغیر   مذید   دیر  کِے ٔ   مسیحؔ  کا  ہاتھ  تھام  لیں  جو  کہ  آپکی  زِندگی   کا  سب  سے  بڑا   ضامن  ہے  ۔  وُہی  آپ  کو  ہر  طرح  سے  محفوُظ  رکھے  گا  ۔  (  عبرانیوں  ۷    باب  ۲۵   آئت )  ۔  تصًور کریں  ،   آسمان  پر  ابدیت  !   پِھرآپ  بھی   آخری  معرکے  کے  بارے  پولوُس ؔ  رسوُل  کی  طرح  کہہ  سکیں  گے   ’’  خُدا  کا  شُکر  ہے  جو  ہمارے  خُداوند  یسوُع ؔ  مسیح  کے  وسیلہ  سے  ہم کو  فتح  بخستا  ہے  ۔‘‘ 

 

اے  روُح   !  تیرے  پاس  فتح  یا  شکست  کا  اِنتخاب  ہے  ،  آسمان  کا  یا   جہنم  کا  ،  زِندہ   خُدا  کا  یا  ابلیس ؔ  کا  ؛  ہمیشہ  کی  خُوشیوں  بھری  جلالی  حیات  یا  پِھر  کبھی  نہ  ختم  ہونے  والے  دُکھ  اور  اذیتیں  ۔      ’’  میںَ  نے   زِندگی  اور  موت  کو  اور   برکت  اور  لعنت  کو  تیرے  آگے  رکھا   ہے  پس   توُ  زِندگی  کو   اِختیار  کر   کہ  تُو  بھی  جیتا  رہے  اور  تیری  اولاد   بھی  ۔  (  اِستشنا   ۳۰    باب  ۱۹   آئت  )  مسیحؔ  کا  اِنتخاب  کریں  ،  آج  ہی  ۔               

کیا آپ مُعافی پا چُکے ہیں؟

کیا   آپ  مُعافی  پا  چُکے  ہیں  ؟   آپکا  ابدی  مُستقبِل  اِسی   نہائت  ہی  اہم  اور  سنجِیدہ  سوال  کے  جواب  پر  مُنحصِر  ہے  ۔  بائبل  ہمیں  بتاتی  ہے  کہ  ’’  کوئی  راسباز  نہیں  ،  ایک  بھی  نہیں  ۔ ‘‘  (  رُومیوں  ۳      ۱۰   )  اِسی  باب  کی  ۲۳    آئت  میں  یوُں  لِکھا  ہے    ’’  اِس  لِۓ  کہ  سب  نے  گُناہ  کِیا  اور  خُدا  کے  جلال  سے  محروُم  ہیں  ۔‘‘

اگر  ہم  گُناہ  کے  نتائج  بھُگتنے  سے  بچنا  چاہتے  ہیں  تو  ہمیں  خُدا  کی  مخلصی  اور  مُعافی  کے  متلاشی  و  طلبگار  ہونا  ہوگا  ۔  ’’  کِیونکہ  ضروُر  ہے  کہ  مسیحؔ  کے  تختِ  عدالت  کے  سامنے  جا  کر  ہم  سب  کا  حال  ظاہِر کِیا  جاۓ  تاکہ  ہر  شخص  اپنے  کاموں  کا  بدلہ  پاۓ  جو  اُس  نے  بدن  کے  وسیلِہ  سے  کِۓ  ہوں  ۔  خواہ  بھلے  ہوں  یا  بُرے   ۔ ‘‘  (  ۲    کرنتھیِوں  ۵      ۱۰    ) 

ہم  ابدیت  کا  سامنا  کر رہے  ہیں   اور  یہی   حقیقت  اِس   بات  کو  اور  بھی  زیادہ  اہم  اور  ضرُوری  بنا  دیتی  ہے  کہ  ہم  جانیں  کہ  کیا  ہم  معافی  اور  مخلصی  پا  چُکے  ہیں  ؟  اگر  مُعافی  پا  چُکے  تو  ہم  آسمان  کی بادشاہت  میں  داخِل  ہو سکیں  گے  لیکِن  اگر  نہیں  تو  ہم  ابلِیسؔ  اور  اُسکے  ساتھی  فرِشتوں  کے  ہمراہ  جہنم  کے  سزاوار  ٹھہراۓ  جا  ئیں  گے  ۔   ’’  جب  اِبنِ  آدم  اپنے   جلال  میں  آۓ  گا  اور  سب  فرِشتے  اُس  کے  ساتھ  آئیں  گے  تب  وُہ  اپنے  جلال  کے  تخت  پر   بیٹھے  گا  ۔  اور  سب  قومیں  اُسکے  سامنے  جمع  کی  جائیں  گی  اور  وُہ  ایک  کو  دوُسرے  سے  جُدا  کرے  گا   جیسے  چرواہا  بھیڑوں  کو  بکریوں  سے  جُدا  کرتا  ہے  ۔  اور  بھیڑوں  کو  اپنے  دہنے  اور بکریوں  کو  بائیں  کھڑا  کرے  گا  ۔  اُس  وقت  بادشاہ  اپنے  دہنی  طرف  والوں  سے  کہے  گا  آؤ  میرے  باپ   کے  مُبارک  لوگو    جو  بادشاہی  بِنایِ  عالم  سے  تُمہارے  لِۓ  تیار  کی  گئی  ہے  اُسے  میراث  میں  لو  ۔  ‘‘  (  متیؔ  کی  اِنجیل  ۲۵   باب    ۳۱    سے  ۳۴   آیات  )    پھِر  وُہ  بائیں  طرف  والوں  سے  کہے  گا   اَے  معلُونو  میرے  سامنے  سے  اُس  ہمیشہ  کی آگ  میں  چلے  جاؤ  جو  ابلیِسؔ  اور  اُس کے  فرِشتوں  کے  لِۓ  تیا ر  کی  گئی  ہے  ۔  ‘‘  (  ۴۱   آئت  )  

 

مسیح ؔ  کے  خوُن  سے  مُعافی 

 

تو  پھِر  ہم  اپنی  روُحوں  کو  کیسے  بچا  سکتے  ہیں  ؟  ہم  خوُد  تو  اپنے  آپ  کو  نہیں  بچا  سکتے   لیکِن  اگر  ہم  خُدا  کے   مُہیا  کردہ  منصُوبہ  کو   قبوُل  کر  لیں   تو  یہ  مُمکِن  ہے  ۔ 

 

ہم  اِس  منصوُبہ  کو  بہتر  طور  پر  سمجھ  سکتے  ہیں  جب  ہم  غور   کرتے  ہیں  کہ  کِس  طرح  خُدا  نے  اِسے   مسیحؔ  کے  دُنیا  میں  آنے  سے  پہلے   بنی  اِسرائیل  پر  ظاہِر  کِیا  ۔   خُدا  نے  اُنہیں  کُچھ  خاص  جانوروں  کی  قُربانِیاں  دینے  کا  حُکم  دِیا  ۔  جو  برّے  قُربان  کِۓ  جاتے  وُہ  دراصل  خُدا  کے  کامِل  اور  بے  عیب  برہّ  خُداوند  یسوُع المسیح  کی  قربانی  کی  طرف  اِشارہ   کرتے  تھے  جِس  کی  بدولت  تمام  بنی  نوع  اِنسان   کو  گُناہوں  کی  مخلصی  اور  مُعافی  مِلنی  تھی  ۔  خُون  کا  بہایا  جانا  درحقیقت  لوگوں  کو  گُناہ  کے  بھیانک  نتائج   کی  آگاہی  بھی  دیتا  ۔  اِفسیوں  ۱   باب  ۷ آئت  بتاتی  ہے     ’’  ہم  کو  اُس  کے  خُون  کے  وسیلہ  سے  مخلصی  یعنی  قصوُروں  کی  مُعافی   اُس  کے  اُس  فضل  کی  دولت  کے  مُوافِق  حاصِل  ہے  ۔  ‘‘ 

’’  کیوُنکہ  تُم  جانتے  ہو  تُمہارا   نکما   چال  چلن  جو  باپ  دادا  سے  چلا   آتا  تھا  اُس  سے  تُمہاری  خلاصی  فانی  چیزوں  یعنی  سونے  چاندی  کے  ذریعہ  سے  نہیں  ہوُئی  ۔  بلکہ  ایک  بے  عیب  اور بے  داغ  برّے  یعنی  مسیح ؔ  کے  بیش  قیمت  خوُن  سے  ۔  (  ا  پطرس  ۱      ۱۸   تا  ۱۹   )  ہماری  مخلصی  اور  مُعافی  یسوُع  ؔ  کی  موت  اور  اُس  کے  خُون  بہانے  سے   حاصِل  ہوتی  ہے  ۔  (  عبرانیوں  ۹      ۲۲   )  اِس  بات  کو  ذہن  میں  رکھیں  کہ  ہمارے 

 

گُناہوں  کے  سبب  سے  ہم  ابد ی  موت  کے  سزاوار  ہوتے  ۔  لیکِن  اپنی  مُحّبت  اور  رحم  کی   بدولت  جو  وُہ  ہمارے  لِۓ  رکھتا   ہے  ،  یسُوع  ہماری 

خاطِر  مُوا  تاکہ  ہمارے  گُناہ  مُعاف  ہوں  اور  ہماری  خطائیں  ڈھانپی  جائیں  ۔

 

مُعافی  کے  بغیر  صِرف  غُلامی  ہے    

 

  جب  ہم  مسیحؔ  کی  عطا  کردہ   رحم  سے  بھری  مُعافی  پا  لیتے  ہیں   تو  ہمیں  دِلی  اِطمینان  اور  سکوُن  حاصِل  ہو  جاتا  ہے  ۔   اِس  اِطمینان  اور  سکوُن کو  برقرار  رکھنے  کے  لِۓ  ہمیں  دوُسروں  کو  بھی  مُعاف  کرنے  کے  لِۓ  تیار  رہنا  چاہیۓ  ۔  متی  ۶   باب  کی  ۱۴   اور   ۱۵   آیات  میں  یسوُعؔ  ہمیں  بتاتا  ہے     ’’ اِس  لِۓ  کہ  اگر  تُم  آدمیوں  کے  قصوُر  مُعاف  کرو  گے  تو  تُمہارا  آسمانی  باپ  بھی  تُم کو  مُعاف  کرے  گا  ۔  اور  اگر  تُم  آدمیوں  کے  قصُور  مُعاف  نہ  کرو  گے  تو  تُمہار ا  باپ  بھی  تُمہارے  قصوُر  مُعاف  نہ  کرے  گا  ۔  ‘‘ 

 

یسوُعؔ  ہمیں  مُعاف  نہ  کرنے  کے  خوفناک  نتائج  سے  آگاہ  کرتا  ہے  ۔  ’’  پس  آسمان  کی  بادشاہی  اُس  بادشاہ  کی مانند  ہے  جِس  نے  اپنے   نوکر وں  سے  حِساب  لینا  چاہا  ۔  اور  جب  حِساب  لینے  لگا  تو  اُس کے  سامنے  ایک  قرضدار  حاضِر  کیا  گیا  جِس  پر  اُسکے   دس  ہزار  توڑے  آتے  تھے  ۔  مگر  چُونکہ  اُس  کے  پاس  ادا  کرنے  کو  کُچھ  نہ  تھا  اِس  لِۓ  اُسکے  مالِک  نے  حُکم  دِیا  کی  یہ  اور  اِس کی  بیوی  بچّے  اور  جو  کُچھ  اِس  کا  ہے  سب  بیچا  جاۓ  اور  قرض  وصوُل  کر  لِیا  جاۓ  ۔  پس  نوکر  نے  گِر  کر  اُسے  سجدہ  کِیا   اور  کہا  ،   اے  خُداوند  مُجھے  مُہلت  دے  ۔  میں  تیرا  سارا  قرض  ادا  کر وُں  گا  ۔  اُس  نوکر  کے  مالِک  نے  ترس  کھا کر  اُسے  چھوڑ  دِیا   اور  اُس  کا  قرض  بخش  دِیا  ۔  

جب  وُہ  نوکر  باہر  نِکلا  تو  اُس  کے  ہم  خِدمتوں  میں  سے  ایک  اُس  کو   مِلا  جِس پر  اُس  کے  سو  دِینار  آتے  تھے  ۔  اُس  نے  اُس  کو  پکڑ  کر  اُس  کا  گلا  گھونٹا  اور  کہا  جو  میرا  آتا  ہے  ادا  کر  دے  ۔  پس  اُس  کے  ہم  خِدمت  نے  اُسکے  سامنے  گِر  کر  اُسکی  مِنت  کی  اور  کہا  مُجھے  مُہلت  دے  ۔  میںَ  تُجھے  ادا کر  دُوں  گا  ۔  اُس   نے  نہ  مانا  بلکہ  جا  کر  اُسے  قیدخانہ  میں  ڈال  دِیا  کہ  جب  تک  قرض  ادا  نہ  کر  دے  قید  رہے  ۔  پس  اُس کے  ہم  خِدمت  یہ  حال   دیکھ  کر  بُہت  غمگین  ہوُۓ   اور  آکر  اپنے  مالِک  کو  سب  کُچھ   جو   ہُوا  تھا  سُنا  دِیا  ۔  اِس  پر  اُسکے  مالِک   نے  اُس  کو  پاس  بلُا کر   اُس  کہا  ،  اے  شریر  نوکر  میں  نے  وُہ  سارا   قرض  تُجھے  اِس  لِۓ  بخش   دِیا  کہ  تُو  نے  میری  مِنت  کی  تھی  ۔  کیا  تُجھے  لازم  نہ  تھا  کہ  جیسا  میں  نے  تُجھ  پر  رحم  کِیا  تُو  بھی  اپنے  ہم  خِدمت  پر  رحم  کرتا  ۔  اور   اُس  کے  مالِک  نے  خفا  ہو  کر  اُس  کو  جلادوں  کے  حوالہ  کِیا  کہ  جب  تک  تمام  قرض  ادا  نہ  کر  دے  قید  رہے  ۔ 

میرا  آسمانی  باپ  بھی  تُمہاے  ساتھ  اِسی  طرح  کرے  گا  اگر  تُم  میں  سے  ہر  ایک  اپنے  بھائی  کو  دِل  سے  مُعاف  نہ  کرے  ۔  ‘‘    (  متیؔ  کی  اِنجیل  ۱۸   باب  ۲۳   سے  ۳۵   آیات  ) 

 

کِسی  سے  نفر ت  کرنا  ،  کِسی  کو  ضرر  پُہنچاننے  کی  خواہش  رکھنا  یا  دِل  میں  کِسی  کے  خِلاف  بُغض  رکھنا  ہمارے  اندر  بُہت  سے  منفی   جذبات  پیدا  کرتا  ہے  ۔  جو   شخص  اپنے  اندر  ایسے  روّیوں  کو  پروان  چڑھنے  دیتا  ہے  اُسکی  زِندگی  میں  خُوشیوں  کی  بجاۓ  کڑواہٹ  بھر  جاتی  ہے  ۔  نتیِجتاً  نہ  صِرف   اُسکی  اپنی  صحت  مُتاثر  ہوُے  بغیر  نہیں  رہتی  بلکہ  اُسکے  دوُسروں  کے  ساتھ  سماجی  تعلُقات  بھی  بُری  طرح  مُتاثر  ہوتے  ہیں  ۔

 

جب  ہم  دُوسروں  کو  مُعاف  نہیں  کر  پاتے  تو  ہماری  رُوحیں  غُلامی  کی  ایسی  زنجیروں  میں  جکڑی  جاتی  ہیں  جو  ہمیں  غلط  طرح  کی  صُحبت  اِختیار  کرنے  پر  مجبوُر  کر  دیتی  ہے  یا   پِھر نشہ  آور  اشیا  کے  اِستعمال  کی  طرف  مائل  کر دیتی  ہے  ۔   اکثر  دِل  کی  یہ  کڑواہٹ  ہمیں  اپنے  اندر  ہی  قید  کر  کے  رکھ  دیتی  ہے  ۔  یہ  ہمارے  دِل  میں  دُکھ  ،  غُصہ  اور  لڑائی  جھگڑے  جیسے  منفی  جذبات  ڈال  دیتی  ہے  اور  خُوشی  ،   مُحّبت  اور  میل 

 

مِلاپ  جیسے  مُثبت  اور  نیک  جذبات  دِل  سے  نِکال  باہر  کرتی  ہے  ۔   دِل  کی  یہ  کڑواہٹ  غروُر  اور  تکبّر   کا  نتیجۃ  ہے  جو   ہمارے  اندر  تب  پیدا  ہوتا  ہے  جب  ہم  دوُسروں  کو  مُعاف   نہیں  کر  پاتے  اور  دِل  میں  بدلہ  لینے  کی  ٹھانے  رکھتے  ہیں  ۔  اگر  ہم  اپنے  اندر  کے  دبے  ہوُۓ 

 

منفی  جذبات  کو   دِل  سے  نہیں  نِکالیں  گے  تو  بلآخِر  یہ  ہمیں  پوُری  طرح  سے  اپنی  گرِفت  میں  لے  لیں  گے ۔  یوُں  ہم  نہ  صِرف  اِن  منفی  جذبات  کے  بلکہ  خُدا  کے  نزدیک  گُناہ  کے  بھی  اسیر  بن  جائیں  گے  ۔ 

 

غیر مشروُط  مُعافی  

 

یسوُع ؔ  نے  ہمیں  سِکھایا   کہ  دوُسروں  کو  مُعاف  کرنے  کا  صِرف  ایک  ہی  راستہ  ہے  جو  خُود  یسُوع ؔ  نے  ہمیں  مُعاف   کر  کے  دِکھایا  ۔    ہمیں  مُعافی  کو  جُرم   یا  زیِادتی  کی  حد  یا   اُسکے  شُمار  یا  ظُلم  و  زیادتی  کرنے  والے  شخص  کی  فِطرت   سے  مشروُط  نہیں  کرنا  چاہۓ۔  ہمیں  دوُسروں  کی  طرف  غیر  مشروُط  رحم  کا  ہاتھ  بڑھانا  چاہِۓ  اُسی  طرح  جیسے   خُدا  نے  ہماری  طرف  بڑھایا  ۔  جب  ہم   حلیِم  بن  کر   دوُسروں  کو  مُعاف   کرنے  کے  لِۓ  تیار   ہو  جاتے  ہیں  تو  خُدا  ہماری   راہنُمائی  کرتا  ہے  کہ  ہم   اپنی   بھی  خطاؤں  اور   گُناہوں   کی  مُعافی  کے  طلبگار    ہوں  ۔    خُدا  ہر  ایک  کو  جو  حلیمی  کی  روُح  کے  ساتھ  توبہ  کرتا  ہے  مُعاف  کرتا  اور  قبُول  کرتا  ہے  ۔ 

جب  ہم  رُوح  کی  راہنُمائی  میں  چلیں  گے  تو  ہم  سچائی  کو  جانیں  گے  اور  سچائی  ہی  ہمیں  آزادی  اور  رہائی  بخشے  گی  ۔  (  یوُحناؔ  ۸   باب  ۳۲   )  آئت  ۳۶    میں  یوُں  بیان  ہوتا  ہے    ’’  پس  اگر   بیٹا  تُمہیں  آزاد  کرے  گا  تو  تُم  واقعی  آزاد  ہو  گے  ۔  ‘‘

’’  اگر  آج  تُم  اُسکی  آواز  سُنو  تو  اپنے  دِلوں  کو  سخت  نہ  کرو  ۔ ‘‘  (  عبرانیوں  ۳       ۱۵   )   متیؔ  ۱۱      ۲۸    میں  یسُوع ؔ  نے  کہا   ’’   میرے  پاس  آؤ  ،  مَیں  تُم  کو  آرام  دوُں  گا  ۔  ‘‘  جب  ہم  اِس  تعلیم  پر  عمل  کریں  گے  تو  ہم  خُود  بھی  مُعافی  پائیں  گے   اور  دوُسروں  کو  بھی  مُعاف  کر  پائیں  گے  ۔ 

 

 خُدا  کے  پاس  آنا 

 

اب  سوال  یہ  پیدا  ہوتا  ہے  کہ  ہم  خُدا  کے  پاس  کیسے  آ  سکتے  ہیں  ؟  اِس  کا  جواب  ہمیں  بائبل  مقُدس  میں  مِلتا  ہے  ۔    ’’  کوئی  میرے  پاس  نہیں  آ سکتا  جب  تک  باپ  جِس  نے  مُجھے  بھیجا  ہے  اُسے  کھینچ  نہ  لے  اور  میں  اُسے  آخری  دِن  پھِر  زِندہ  کروُں  گا  ۔‘‘  (  یوُحناؔ  ۶      ۴۴    )  اپنے  پاک  روُح  کے  ذریعہ  خُدا  ہمیں  یہ  احساس   دِلاتا  ہے  کہ  ہم  گُنہگار  ہیں  اور   ہمیں  ایک  نجات  دہِندہ  کی  ضروُرت  ہے  ۔  کھبی   کبھی  ہم  خُدا  کی  بُلاہٹ  کو  سمجھ  نہیں  پاتے  ۔  ہم  اپنے  اندر  ایک  خالی  پن  اور   احساسِ  تنہائی   اور  یہ   محسوُس  کرنا   شروع  کر  دیتے  ہیں  کہ  میرے  ساتھ  کُچھ  ٹھیک  نہیں  اور  یہ  یقین  کر  لیتے   ہیں  کہ  میں  تو  کھو  چُکا  ہوں  اور   پوری  طرح  سے  بھٹک  ہو  چُکا  ہوں  ۔ 

جب  ہم  اپنے  اندر  اِس  طرح  کی  بے  چینی  اور  کشمکش  محسوُس  کریں  تو  ہمیں  اپنے  دِل  کا  حال  خُدا  کے   سامنے  کھول  دینا  چاہۓ  تاکہ  وُہ  ہماری  راہنُمائی  کر سکے  ۔  ہماری  گُزری  ہوُئی  گُناہ  آلوُدہ   زِندگی  کی  وجہ  سے  ہمارا   دِل  بوجھل  ہو  جاتا  ہے   اور  ہم  ندامت  اور  شرمِندگی  کے  بوجھ  تلے  دب  جاتے  ہیں  ۔   خُدا  چاہتا  ہے  کہ    ہم  سچّے  دِل  سے  توبہ  کر کے  اپنی  زِندگیوں  کو  اُس  کی  مرضی  کے  ماتحت  کر  دیں  ۔  جب  خُدا  دیکھتا  ہے  کہ  ہم  نے  سچّائی  سے  اپنے   شکستہ  اور  نادم  د ِل  سے  توبہ  کی  ہے   اور  ہم  اپنی  زِندگی  میں  اُسکے  مرضی  پوُری  کرنے کے  لِۓ  تیار  ہیں  تو   وُہ   ہماری  ماضی  کی  گُناہ  آلوُدہ  زِندگی  کی  خطاؤں  کو  بخش  دیتا  ہے  اور  ہم  اپنی  زِ ندگی  میں  مُعافی  اور  اِطمینان  حاصِل  کرتے  ہیں  ۔  (  زبوُر   ۳۴       ۱۸   ؛  زبوُر  ۵۱      ۱۶   تا  ۱۷   )  یہ  ہمارے  لِۓ  کِس  قدر  خوُشی  کی  بات  ثابت  ہوتی  ہے  اور  ہم  چاہتے  ہیں  کہ  دوُسروں  کے 

 

ساتھ  بھی  اِس  تجربہ  کا  بیان کریں  کہ  کِس  طرح  خُدا وند  یسوُع ؔ  نے  ہمارے  دِل  کو  بدل  کر   رکھ   دِیا  ہے  ۔          

 یہ  تجربہ  محض  عقلی  اور  ذہنی  تبدیلی  کے  طور  پر  نہیں    بلکہ  یہ  روُح  القُدس  کا  کام  ہے  جو  ہمارے  دِل  کو   بد ل   کر  ہماری  زِندگی  کو  ایک 

نیا   روُپ  دے  دیتا  ہے  ۔    روُح  القُدس  کی  یہ  طاقت    خُدا  میں  ہمارے  اِیمان  کو  مضبوُط  کرتی  ہے  اور  اِسکی  بدولت  ہم  اپنی  مرضی  اور  انا  کو  پس  پُشت  ڈال  کر  دُوسروں  کو  معاف  کرنے  کے  قابِل  بنتے  ہیں  ۔  ۲   کرنتھیوں  ۵      ۱۷   میں  یوُں  لِکھا  ہے    ’’  اِس  لِۓ  اگر  کوُئی  مسیحؔ  میں  ہے  تو  وُہ  نیا  مخلوُق  ہے  ۔  پُرانی  چیزیں  جاتی  رہیں  ۔  دیکھو  وُہ   نئی  ہو  گئیں  ۔  ‘‘

 

بائبل  کا  سِکھایا   ہُوا  مُعافی  کا   راستہ  ایک  خُوبصوُرت  راستہ  ہے  ۔  مسیحؔ  کی  قُربانی  پر  ایمان  اور  اِسکے  ساتھ  خُدا  اور  اُسکی  مرضی  کی  مکمل  طور  پر  قبوُلیت   ،  پوُری  طرح  سے    ہمارے  دِلوں  سے  احساسِ  گُناہ  کو  ختم  کر  دیتی  ہے  ۔  ہمارے  سب  گُناہ  یسوُعؔ  المسیح  کے   پاک  خوُن  میں  ڈھانپے  جاتے  ہیں  ۔  خُدا  کی  عطا  کردہ  مُعافی  ہمارے  دِل  سے  دوُسروں  کی  طرف   سے  لگاے  ہوُ  ۓ  زخموں  اور  ہماری  اپنی  خطاؤں  کے  بوجھ  کو  دُور  کر  دیتی  ہے  ۔  خُدا  ہماری  خطاؤں  اور  کوتاہیوں  کی  تختی  کو  بالکل  صاف  کر  دیتا  ہے  ۔ وُہ  فرماتا  ہے  ’’  اور  اُنکے  گُناہوں  کو  پھِر  کبھی  یاد  نہ  کروں  گا  ۔ ‘‘  کیا  ہی  بھلا   اور  خُوبصُورت  ہے  آزادی  کا  یہ  تجربہ   جب  خُدا   ہمیں  مُعاف   کر  دیتا  ہے  اور  ہم  دوُسروں  کو  مُعاف  کرنے  کے  قابِل  بنتے  ہیں  ۔  آپ  بھی  یہ  تجربہ   اپنے  دِل  میں  اور  اپنی  زِندگی  میں  حاصِل  کر سکتے  ہیں  ۔  آج  ہی  خُدا  کے  پاس  آ ئیں  اور  معافی  و  مخلصی  پائیں