گاسپل ٹریکٹ اور بائبل سوسائٹی

بائبل ٹریکٹ اور بائبل سوسائٹی کی طرف سے آپکا خیر مقدم ۔ بائبل ٹریکٹ اور بائبل سوسائٹی کا نصب العین ہے کہ دُنیا بھر میں مسیح میں ایمان کے ذریعہ فضل سے نجات کی خوُشخبری بانٹی جاۓ اور اِس طرح سے یسوُع کے حُکم کی تعمیل کی جاۓ ۔


آپ کے لِیۓ نجات دہِندہ

The prodigal son asking his father for his inheritance

کیا  آپ  اپنی  زِندگی  سے  خُوش  ہیں  ؟  گُنہگار  ہونے  کا  احساس  اور  خوف   یقیِناً  آپ  سے  آپکی  خُوشیِاں  چھِین  سکتا  ہے۔  آپ  سوچتے  ہو ں  گے  تو  پھِر  مَیں  کیسے  خُوش  رہ  سکتا   ہُوں  ؟

کیا آپ مُعافی پا چُکے ہیں؟

کیا   آپ  مُعافی  پا  چُکے  ہیں  ؟   آپکا  ابدی  مُستقبِل  اِسی   نہائت  ہی  اہم  اور  سنجِیدہ  سوال  کے  جواب  پر  مُنحصِر  ہے  ۔  بائبل  ہمیں  بتاتی  ہے  کہ  ’’  کوئی  راسباز  نہیں  ،  ایک  بھی  نہیں  ۔ ‘‘  (  رُومیوں  ۳      ۱۰   )  اِسی  باب  کی  ۲۳    آئت  میں  یوُں  لِکھا  ہے    ’’  اِس  لِۓ  کہ  سب  نے  گُناہ  کِیا  اور  خُدا  کے  جلال  سے  محروُم  ہیں  ۔‘‘

اگر  ہم  گُناہ  کے  نتائج  بھُگتنے  سے  بچنا  چاہتے  ہیں  تو  ہمیں  خُدا  کی  مخلصی  اور  مُعافی  کے  متلاشی  و  طلبگار  ہونا  ہوگا  ۔  ’’  کِیونکہ  ضروُر  ہے  کہ  مسیحؔ  کے  تختِ  عدالت  کے  سامنے  جا  کر  ہم  سب  کا  حال  ظاہِر کِیا  جاۓ  تاکہ  ہر  شخص  اپنے  کاموں  کا  بدلہ  پاۓ  جو  اُس  نے  بدن  کے  وسیلِہ  سے  کِۓ  ہوں  ۔  خواہ  بھلے  ہوں  یا  بُرے   ۔ ‘‘  (  ۲    کرنتھیِوں  ۵      ۱۰    ) 

موت کے بعد

اِس  وقت  آپ  زِندہ  ہے  ۔  آپ  سانس  لے  سکتے  ہیں  ۔  آپ  چل  پھِر  سکتے  ہیں  ۔  ہو  سکتا ہے  آپ  بڑی  آسائش  کی  زِندگی  بسر  کر  رہے  ہوں  یا  آپ  مشکلات  سے  بھری  زِندگی  جی  رہے  ہیں  ۔  سوُرج  طلوُع  ہوتا  ہے  اور  غروُب  ہوتا  ہے  ۔  دُنیا  میں  کہیں  کوئی  بچًہ  پیدا   ہو  رہا  ہے  اور  کہیں  کوئی  اِس  دُنیا  سے  رُخصت  ہو  کر  موت  کی  وادی  میں  جا  رہا  ہے  ۔  

زِندگی   کا   تمام  نظام  معموُلی  و  عارضی  ہے 

لیکِن 

مرنے  کے  بعد  آپ  کہاں  جائیں  گے  ؟

آپ  مذہبی  ہیں  یا  آپ  کِسی  بھی  مذہب  کو  نہیں  مانتے  آپکے  لِۓ  اِس  اہم  ترین   سوال  کا  جواب  جاننا  ضروُری  ہے  ۔   کیونکہ  اپنی  مُختصر  سی   دُنیاوی  زِندگی  گُزارنے  کے  بعد  اِنسان  اپنی  ابدی  منزل  کی  طرف  چلا  جاتا ہے  ۔  (  واعظ  ۱۲       ۵    )