سُنیں ! یہ کون آپکو بُلا رہا ہے ؟ کیا یہ کوئی دوست ہ

The listening lamb

ٿڳڦیُوحنا ؔ  کی  اِنجیل  ۱۰   باب  ۱   سے  ۱۸   آیات

کیا  آپ نے  کبھی  کِسی  کو  آپکا  نام  لے  کر  بُلاتے  ہُوۓ  سُنا  ہے  ،  لیکن  آپکو  یہ  معلوُم  نہ  ہو  پایا  ہو  کہ  یہ  آواز  کہاں  سے  آ  رہی  ہے  ؟   یا  یہ  کہ  آس  پاس  کے  شور  و  غُل  کی  وجہ  سے  آپ  بعمُشکل ہی  یہ  آواز  سُن  پا  رہے  ہوں  ۔

سُنیں ، کوئی  آواز  آپکو  بُلا  رہی  ہے ۔  ہاں  آپ  !    آپ  کون  ہیں  ؟  آپکا  نام  کیا  ہے  ؟   آپ  کہاں  سے  آۓ  ہیں  ؟  آپ  کہاں  رہتے  ہیں  ؟  آپ  کہاں  جا  رہے  ہیں  ؟

آپ  اپنے  گاؤں  کا  نام  تو  جانتے  ہیں  ۔   شائد  آپ  اپنے  گاؤں  ،  شہر  یا  قصبہ  کے  عِلاوہ  کہیں  زیادہ  دُور  کبھی  گئے   ہی  نہیں  ۔  لیکِن  آپ  جانتے  ہیں  کہ  آپکا  گاؤں  ایک  بڑے  مُلک  کا  ایک  حِصہ  ہے   اور  یہ  مُلک  دیگر  مُمالِک  کی  طرح  دُنیا  کا  حِصہ  ہے  ۔

بائبل  مُقدّس

تقریباً  چھ  ہزار  سال  قبل  دُنیا  بنی  ۔  دُنیا  خُدا  کی  تخلیق  ہے  ۔  خُدا  کی  کِتا ب  بائبل  ہمیں  بتاتی  ہے  کہ  اُس  نے  دُنیا  کیسے  بنائی  اور  کیسے  اُس  نے  پہلے  آدمی  اور  عورت   کو  تخلیق  کیا  ۔  خُدا  نے  اِنسان  کو  اپنی  شبہیہ  میں  تخلیق  کیا  ۔  تب  سے  اِنسان  پیدا  ہوتے  رہے  ہیں  اور  تب  سے  اِنسان  مرتے   بھی  رہے  ہیں  ۔   لاکھوں   بلکہ   کرروڑوں   پیدا   ہوُۓ  اور  اِس  جہانِ  فانی  سے  کُوچ کر  گۓ  ۔

آپ  بھی  اپنے  ماں  باپ  کے  ہاں  پیدا  ہُوۓ۔  لیکِن  درحقیقت  یہ   خُدا   ہے  جِس  نے  آپ  کو  تخلیق  کِیا  ۔  اُسی  نے  سب  کُچھ  بنایا  ۔  کیا  آپ  نے  کبھی  سوچا  ہے  کہ   خالِق  نے  کِس  قدر  حیرت  انگیز  طریقہ  سے  اُس  نے  آپ کو  اور  ہر  شے  کو  بنایا   ہے  ۔

آپکے  ماں  باپ  نے  آپکو  ایک  نام  دِیا  ۔  خُدا  آپکا  نام  جانتا  ہے  ۔  وُہ  ہر  نام  جانتا  ہے  خواہ  وہ  کِسی  بھی  زبان  کا  ہو  ۔  وُہ  ہر  چیز  کا  عِلم  رکھتا  ہے  ۔  چُونکہ  اُس  نے  ہمیں  تخلیق  کیا  ہے  وُہ  ہمارے  بارے  سب  کُچھ  جانتا  ہے  ۔  وُہ  ہم  سے  مُحبّت  رکھتا  ہے  کیونکہ  وُہی  ہمارا  مالِک  ہے  ۔  وُہ  ہمارا  آسمانی  باپ  ہے  اور  وُہ  ہمارے  دُنیاوی  ماں  باپ  سے  کہیں  زیادہ  ہماری  فِکر  کرتا  ہے  ۔

خُد

خُدا  ازل  سے  ہے  ۔  وُہ  ابد  تک  رہے  گا  ۔  جب  اُس  نے  اپنا  سانس  ہم  میں  پھونکا  تو  ہم  بھی  ہمیشہ  کے  لِے  ٔجینے  کے  اہل  ہو  گے ٔ ۔  نہیں  ،  ہمارے  جِسم  نہیں  ،  کیُونکہ  وُہ  تو  بِلآخِر  مر  ہی جائیں  گے  ،  بلکہ  یہ  ہماری  روُح  ہے  جو  ہمیشہ  تک  جیتی  رہے  گی  ۔   

کیا  آپ  سچّے  خُدا  کو  جانتے  ہیں  ۔  شائد  آپ  پُوچھیں  کہ  وُہ  کون  ہے  ؟  وُہ   کہاں  ہے  ؟  
کیا  آپ  حقیقتاً  جاننا  چاہتے  ہیں ؟  ہاں  ،  یقینناً  آپ  جاننا   چاہیں  گے  ۔ کہیں  دِل  کی  گہرائی  میں  آپ  ضرور  اُسے  جاننا  چاہتے  ہیں  ۔  

آپ  نے  تو   خُدا  کو  کبھی  نہیں  دیکھا  ،  یا   دیکھا  ہے  ؟  یقینناً  نہیں  ۔  لیکِن  اِس  کا  مطلِب  یہ  نہیں  کہ  اُس  کا کہیں  وجوُد  ہی  نہیں۔ 

صِرف  ایک  ہی  خُدا  ہے  ۔  کِسی  اور  خُدا  کی  گُنجائش  ہی  نہیں  ،  کیُونکہ  وُہی  خُداٗ  واحِد  ہے  جو  زمین  و  آسمان  پر  ہر  سوُ  موجود  ہے  ۔  وُہ  ایک  ہی  وقت  ہر  جگہ  موجوُد  ہے  ۔  

خُدا  کا  گھر  آسمان  پر  ہے  جو   اوُپر  بُلندِیوں   پر  ایک  نہائت  ہی  خوُبصوُرت  مقام  ہے  ۔  لیکِن  وہ  اُن  لوگوں  کے  دِلوں  میں  بھی  رہتا  ہے  جو  اُسکی  آواز کے  شِنوا  ہوتے  ہیں  ۔  

’’  مَیں  خُدا  کے  بارے  کیسے  سیِکھ  سکتا  ہوُں  ؟  ‘‘   کیا  آپکے  دِل  میں  کبھی   یہ  سوال  آیا   ہے  ؟   خُدا  کے  پاس  اِس  سوال  کا  جواب  دینے  کا  ایک  نہائت  ہی  اعلیٰ  منصُوبہ  ہے  ۔  خُدا نے  آسمان  سے  اپنے  اَکلوتے  بیٹے  یسُوع ؔ  کو  دُنیا  میں  بھیجا  تاکہ  وہ  ہم  پر  ظاہر  کر  سکے  کہ  وہ   در حقیقت  کون  ہے  اور  اُسکی کیا  فِطرت  ہے  ؟  دراصل  خُدا  اور  یسُوع  ؔ ایک  ہی  ہیں  ۔  ایک  مُعجزہ  کی  بدولت  خُدا  کا  بیٹا  ایک  ننھے  بچہّ کی  طرح  پیدا  ہُوا  اور  آدمی  کی  مانند  بڑا   ہُوا  ۔  اِس  کے  بعد  یسُوع نے  ؔ  تِین برس  تک  لوگوں  کو  اپنے  خُدا  باپ  کی  مُحبّت  کے  بارے  تعلیم  دی  ۔  اُس  نے  سِکھایا  کہ  خُدا  پاک ہے  اور  وُہ  اپنے  سامنے   گُناہ   کو  برداشت  نہیں  کر  سکتا  ۔   

لیکِن  پھِر  خُدا   نے  ہمیں  ہمارے  گُناہوں  سے  بچانے  کا  راستہ  بنایا  ۔  اُس  نے  بدکار  لوگوں  کے  ہاتھوں  اپنے  بیٹے  کو  مصلُوب  ہونے  دیا  ۔   جِس  نے  ہماری  خاطر  اپنی  جان  قُربان  کر  دی  ،  گویا  اِس  قدر  وُہ  ہم  سے  مُحبت  رکھتا  ہے  اور  اِس  قدر  عظیم  اُسکی  مُحّبت  ہے  ۔  وُہ  پُوری  دُنیا  کے  گُناہوں  کے  کفّارہ  کی  قُربانی  بنا  ، یعنی  ہر  اُس  گُناہ  کی  قُربانی  جو  کبھی  آپ  نے  کیا  ہو  یا  کِسی  بھی  لڑکے  ، لڑکی  یا  کِسی  آدمی  یا  عورت نے  کیا  ہو  ۔        
 لیکِن  کیا  یسُوع  ؔ مسیح  صلیب پر  ہی  رہے  ؟  کیا  وُہ  اپنی  قبر  میں  ہی  رہے  ؟  نہیں ،  بلکہ  تیِن  دِنوں  کے  بعد  وُہ  ایک  فاتح  کی  طرح  قبر  میں  سے  باہر  آ  گۓ  ۔  اِ س  کے  بعد  وُہ  دوبارہ  واپس  آسمان  پر  چلے  گۓ  ۔  وہاں  وُہ  اِنتظار  کر  رہے  ہیں  اُس  وقت  کا  جب  خُدا  اِس  دُنیا  کا  خاتمہ  کر  دے  گا  ۔  تب  وُہ  سب  لوگوں  کے  سچّے  اور  عادِل  مُنصِف  ہونگے ۔   

کیا  آپ  کے  پاس  یُوحناؔ  رسُول  کی  اِنجیل  ہے  ؟  اِس  انجیل  کا  دس  باب  پڑہیۓ  ۔  یہاں  یُوحناؔ  رسُول   نے  وُہ  سب  بیان  کیا   ہے  جو  یسُوعؔ  مسیح  نے  لوگوں  سے  کہا  ۔  جو  اُنہوں  نے   اُس  وقت  لوگوں  سے  کہا   وُہ  آج  بھی  ہم  سب  کے  لِۓ  صادِق  ہے  ۔  یسُوعؔ  نے  کہا  کہ  مَیں  اچھا  چرواہا   ہے  جِس  نے  اپنی  بیھڑوں  کے  لِۓ  اپنی  جان  دے  دی  ۔   جو  اُسکی  بیھڑیں  ہیں  وُہ  اُسکی  آواز  کو  پہچانتی  ہیں  ۔  وُہ  اُنہں  اُنکا  نام  لے  کر  پُکارتا  ہے  اور  وُہ  اُسکی  آواز  سُن  کر  اُسکے  پیچھے  چلتی   ہیں  ۔   وُہ   کبھی  کِسی  غیر  کے  پیچھے  نہیں  چلیں  گی  ۔  

وُہ  اجنبی  ،  وُہ  دُوسری  آواز

وُہ  اجنبی  کون  ہے  ؟   وُہ  جِس  سے  ہمیں  دوُر  بھاگنا  ہے  ۔  ہاں ،  وُہ  تو  ایک  چور  ہے  !  اُسے  بیھڑوں  کی  قظعاً  فِکر  نہیں  ۔  وُہ  جھُوٹا  اور  فریبی  ہے  ۔  اُس  میں  ذرا  بھی  سچائی  نہیں  ، وُہ  ابلیس  ہے  ،  وُہ  ہمارا  ازلی  دُشمن  ہے  ،  وُہ  شیطان  ہی  تو  ہے  ۔ 

لیکِن  پہلے  وُہ  خُد ا  کا  دُشمن  ہے  ۔  کبھی  وُہ  خُدا  کے  حضُور  ایک  اچھّا  اور  نیک  فرِشتہ  تھا  ۔  لیکِن پھِر  وہ  مغروُر  اور  گھمنڈی  بن  گیا   اور  اُس 
نے  خُود  کو  خُدا کے  سامنے  سر بلند  کرنے  کی  ٹھان  لی ۔  وُہ  خُدا   کے  مدِ مُقابِل  اُس  کے  ساتھ  جنگ  کرنے  کے  لِۓ  تیا ر  ہو گیا َ  ۔   بُہت  سے فرِشتے  بھی  اُس  کے  ساتھ  مِل  گۓ  ۔   لیکن  فتح  خُدا  کی  ہُوئی  ،  کیونکہ  وُہ  قادرِمُطلِق  ہے   ۔  چُناچہ  خُدا  نے  ابلیِس  اور  اُسکے  ساتھی  فرِشتوں  کو  آسمان  سے  نکال  باہر  کیا  ۔  خُدا  سے  ابلیِس  کی  دُشمنی  کا   یہی   سبب  بنا  اور  تب  سے   وُہ  خُدا  سے  نفرت  کرنے  لگا  ۔    

چُونکہ  ابلیس  دوبارہ  کبھی  خُدا  کے  قریب  نہیں  جا  سکتا  ،  وُہ  خُدا  کی  مخلوُق  یعنی  اِنسانوں  کو  اپنے  غضب  کا  نِشانہ  بناتا  ہے ۔  چُونکہ  اُس  نے   گُناہ  کیا   وُہ  دوُسروں  کو  بھی  گُناہ  کرنے  پر  مائل  کرتا  ہے ۔  لیکن  گُناہ     دوبارہ   کبھی   ا ٓسمان    میں  داخِل  نہ  ہونے  پاۓ  گا  ۔  ہاں  ، البتہ  ایک  اور  جگہ  ہے  جو  خُدا  نے  شیطان  اور  اُسکے  فرِشتوں  کے  لِۓ  تیار  کر  رکھی  ہے  ۔  اور  وُہ  ہے  ،  جہنم  ۔  جہنم  جو کہ  ایک  نہائت  اذیت ناک  جگہ  ہے ۔  یہ  وُہ  آگ  ہے  جو  کبھی  نہ  بھُجے  گی  ۔  یہ  وہ   جگہ  ہے  جہاں  ابلیس  اور  اُسکے  پیروکار  ہمیشہ  کی  سزا  بھُگتیں  گے  ۔  یہ  وُہ  خوفناک  مقام  ہے  جہاں  خُدا  کو  ہمیں   بھیجنا  پڑے  گا  اگر  ہم  بھی  ابلیس  کی  آواز  سُنیں  گے  اور  اُسکے  پیچھے  چلیں  گے ۔  ابلیس  نہیں  چاہتا کہ  ہم  جہنم  کے  بارے  سوچیں  اور  نہ  ہی  وُہ  چاہتا ہے کہ  ہم  خُدا  کے  بارے  سوچٰیں  ۔   اِسی  لِۓ  وُہ  ہماری  توجہ  خُد ا  سے  ہٹانا  چاہتا  ہے ۔  اُس کی کوشِش ہے کہ ہم  خُدا کی نہیں  بلکہ  اُسکی  آواز  سُنیں  ۔ 

 کیا  آپ  نے   خوُد  اپنے  اندر   وُہ  دوُسری  آواز  سُنی  ہے  ،  کِسی  غیر  کی   آواز  ؟  کبھی  وُہ  ہمیں  یہ  یقین  دِلاتی  ہے  کہ   اُسکے  پاس  ہمیں  دینے  کے  لِۓ  بڑی  اچھی  چیزیں  ہیں  ۔  کبھی  وُہ  ہمیں  یہ  سوچنے  پر  مائل  کرتی  ہے  کہ     ’’  مَیں  دوُسروں  سے  بہتر  ہوُں  ،  مَیں  تو  بڑا  اہم  ہوُں  ،   مَیں  اور  مَیں  ہی  سب  سے  پہلے  ۔  مَیں  تو  اپنا  بدلہ  لے  کر  ہی  رہوُں  گا  ؛  مُجھے  اپنے  حقوُق  کے  لِۓ   لڑنا  ہے  ۔  چوری  کرنا  جائز  ہے  ،  بس  پکڑے  نہیں  جانا  چاہِۓ ۔  ہر  کوئی  جھوُٹ  بول   رہا  ،  مَیں  کیوں  نہ  بولوُں  ؟  دِل  میں  بُرے  خیال  لانا  بھی  کونسی  بڑی  بات  ہے  ۔  کِسی  کو  کیا  خبر  کہ  مَیں  کیا  سوچ  رہا  ہوُں  ۔  گندی  باتیں  ،  ہنسی  مُزاق  اور  دِل  بہلانے  کے  لِۓ  جائز  ہی  تو  ہیں  ۔‘‘   یہ  سب  آوازیں  شیطان  ہی  کی   ہیں  ۔  وُہ  جھُوٹا  ہے  اِسی  لِۓ  وُہ  ہمیں  بھی  جھُوٹا   بنانا  چاہتا  ہے  ۔  وُہ  چور  ہے  اِس  لِۓ  وُہ  ہمیں  بھی  چوری  چکاری  پر  مائل  کرتا  ہے  ۔  وُہ  قاتِل  ہے  اِس  لِۓ  وُہ  ہمیں  ایک  دوُسرے  سے  نفرت   کرنا  سِکھاتا  ہے  ۔ 

جب  آپ  یہ  آواز  سُنتے  ہیں  تو  کیسا  محسُوس  کرتے  ہیں  ؟  کیا  یہ  آواز   آپکو  اندر  ہی  اندر  ۱چھی  نہیں  لگتی  ؟  نہیں  ،  بلکہ  یہ  اندر   ہی  اندر  آپکو   نا  خوُش  اور  بد دِل  کر دیتی  ہے ۔  کِیونکہ  یہ  آپ  کو  اپنی   اصل   شخصیّت  چھُپانے  پر  مجبوُر  کرتی  ہے  ۔   یہی  شیطان  کی خصلت  ہے  ۔  وُہ  سب  کُچھ   چوری  چھُپے  اندھیرے  میں  کرنا  چاہتا  ہے  ۔  

یسُوعؔ  ،  چرواہے  کی  آواز

کیا  آپ  یسُوع ؔ  کو  جانتے  ہیں  ،  یسُوع ؔ  جو  کہ  اچھا  چرواہا  ہے  ؟  کیا  آپ  اُسکی  بھیڑ  بننا  چاہتے  ہیں  ؟  کیا  آپ  اُسکی  آواز   سے  آشنا  ہونا   چا  ہتے  ہیں ؟  ہاں  کیوں  نہیں  ؟    آپ  اُسکی  آواز   سے  آشنا   ہو   سکتے  ہیں ؟  لیکِن  پہلے  آپکو  اُس  دوُسری  آواز   کو  سُننا  ترک  کرنا  ہو گا  ۔  

اب  جب  آپ  خاموش  ہونگے  ،  آپ  یسُوعؔ کی  حلیمی  بھری  یہ  آواز  سُنیں  گے  کہ  اپنی  پوُری  زِندگی  میری  نذر  کر  دو ۔  آپ  اُسے   یہ  کہتے  ہوُۓ  سُنیں  گے  کہ  اپنے  گُناہوں  پر  نادِم  ہوں  اور  اُن  سے  توبہ  کریں  ۔ 

شائد  کبھی  تنہائی  میں  آپ نے  سوچا  ہو  ،   ’’  مَیں  اپنے  تمام  مسائل  اور  سارے  بوجھوں  کا کیا  کروُں  ؟  کاش  مَیں  بھی  ایک  اچھّا  اور  نیک  اِنسان  بن  سکوُں  ۔   کاش  مَیرے  ایسے   حالات  ہوں  کہ  مَیں  کبھی  بھوُک  اور  بیماری  کا  شِکار  نہ   ہوُں  ۔  مرنے  کے  بعد  میرے  ساتھ  کیا  ہوگا  ؟   ہو  سکتا  ہے  ایسے  ہی  کئی   اور  خیالات  آپکے  دِل  میں   آتے  ہوں  ۔   یہی  باتیں  اور  یہی  خیال  دراصل  یسُوعؔ کی  آواز  ہیں  جو  آپکو  بُلا  رہی  ہے  ۔  

کیا  آپ  کبھی  کبھی  افسُردہ  ہوتے  ہیں  لیکن  آپکو  یہ  بھی  معلوُم  نہیں  ہوتا  کہ  آپ   کِیوں  افسُردہ  ہیں  ؟   یا  پھِر  اکیلا  نہ  ہونے  کے  باوجوُد  خُود  کو  اکیلا  محسُوس کرتے  ہیں ۔  عین  مُمکِن  ہے  کہ  حقیقت  میں  آپ  اپنے  اندر  خُدا  کی  کمی  محسُوس  کر  رہے  ہوں  ،  وُہ  خُدا  جِس  نے  آپ  کو  پیدا  کیا  ہے  اور  آپ  سے  پیار  کرتا  ہے  ۔  وُہ  اچھا  چرواہا  ہے  جو  اپنی  کھوئی  ہوئی   بیھڑوں  کی  تلاش  میں  ہے  ۔  وُہ  مُسلسل  آپکو  آوازیں  دے  رہا  ہے  اور  آپکی  جُستجو  میں  ہے  ۔

جب  آپ  اِس  چرواہے  کی  آواز  سُنیں  ،  اُسے  جواب  دیں  ۔  اُسے  بتائیں  کہ  آپ  اپنے  گُناہوں  پر  شرمِندہ  ہیں  ۔  اُسے  بتائیں  کہ  آپ  کیسا  محسُوس  کر  رہے  ہیں  اور  اُسے  کہیں  کہ   وُہ  آپ  کو  نجات  بخشے  ،  یعنی  اُس  سے  دُعا  مانگیں  ۔  

کیا  آپ  نے  کبھی  آسمانی  خُدا  سے  دُعا  مانگی  ہے  ؟  نہیں  کی  تو  اب  ایسا   کر یں  ۔  وُہ  آپ  کے  دِل  کی  بات  کو  سُنے گا  اور  سمجھے  گا  ۔  جِس  سکوُن  اور  اِطمِینان  کی  آپکو  تلاش  ہے  ،  وُہ  آپکو  اُسی  سے  مِلے  گا  ۔   
   
کیا  آپ  نہیں  چاہیں   گے   کہ  آپ  بھی  اُسکی  ایک  معصوُم  سی  بیھڑ  کی  طرح  اُسکی  آواز  سُنیں  ؟   وُہ  تو  آپ  کا  دوست  بننا   چاہتا  ہے  ۔  اُسے  اپنی  زِندگی  میں  آنے  دیں ۔   وُہ  آپکے  سارے  گُناہوں  کا  بوجھ  ہٹا  دے  گا  ۔   تب  آپکو  حقیقی  خُوشی   حاصِل  ہو  گی  ۔  اُسکی  طرح  آپ  بھی  سب  سے  پیار  کرنے  لگیں  گے  اور  ہر  ایک  کے  ساتھ  مُحبّت  او ر  رحمدِلی  سے  پیش  آئیں  گے  ۔  

  اگرچہ  مسیحی  ہونے  کے  ناطے  لوگ  آپ  کا  مُزاق  اُڑائیں  گے  لیکِن  آپکو  اِس  بات  کا  یقین  ہونا  چاہِۓ  کہ  یسوُع ؔ  آپکی  حِفاظت  کرے  گا  ۔  اور  اگرچہ  وُہ  اجنبی  آواز  ، وُہ  ابلیس  کی  آواز  آپکو  دوبارہ  آزمائش  میں  ڈالنے  کی  کوشِش  کرے   گی  ،  آپکو  اِس  بات  کا  یقین  ہونا  چایِۓ  کہ یسُوعؔ   آپکو  غالِب  آنے  میں  مدد  دے  گا  ۔   
جب  آپ  اِس  چرواہے  کی  مُحّبت  بھری  باہوں  میں  محفُوظ  ہونگے  تو  آخِر  میں  وُہ  آپکو  اُس  خُوبصُورت  ،  عجیب  و  غریب   اور  ابدی  خُوشیوں  سے  بھرے   آسمانی  گھر  میں لے  جاۓ  گا  جہاں  آپ  خُدا  کی  حضُوری  میں   ہمیشہ  ہمیشہ  کے  لِۓ  رہیں  گے  ۔