مسائل سے بھری دُنِیا میں ذہنی سکوُُن

Peace

  ؟  ‘‘  یہ  گھمبِیر  آہ  و  نالہ  ہم  زمانوں  سے  سُنتے  آ  رہے  ہیں  ۔   اور  یقیناً  آپ  کے  دِل  کی  آہ  و  پُکار  بھی  یہی  ہو گی  ۔ 

لوگ  تھکے  ماندے  اور  پریشان  حال  ہیں ۔  بِلا شُبہ  اِنہیں  صحیح  سِمت  ،  مشورے  ،  تحفُظ  ،  راہنُمائی  اور  اعتماد  کی  ضروُرت  ہے  ۔  ہم  سبھی  ذہنی  سکُون  کے  متلاشی  ہیں  اور  ہمیں  اِس  کی  ضروُرت  بھی  ہے  ۔ 

ذہنی  سکوُن  ،  ہاں   ،  یہ  کیا  ہی  بیش قیمت  خزانہ  ہے  !  کیا  یہ  خزانہ  ایسی  دُنیا  میں  مُیّسر  ہو  سکتا  ہے  جو  اِس  قدر  جنگ  و  جدل  ، نا  اُمیدی  ،  ابتری  اور  مُصیبتوں  میں  گھِری  ہوُئی ہے  ؟    

 

یہ  عظِیم  جُستجوُ  اب  بھی  جاری  ہے  !  بُہت  سے  لوگ  حصُولِ  دولت  اور  شُہرت  میں  سکُون  تلاش  کر  رہے  ہیں  ۔  دِیگر  اِسے  آسا ئشوں  ،  طاقت  ،  اِختیار  ،  تعلیِم  و  عِلم  یا  پھِر  اِنسانی  رِشتوں  اور  شادی  بیاہ  سے  حاصِل  کرنے  میں  کوشاں  ہیں  ۔  لوگ  چاہتے  ہیں  کہ  اُن  کے  دماغ  عِلم  سے  اور  اُن  کے  بینک  اکاوُنٹ  پیسوں  سے  بھر  جائیں  مگر  اُن  کی  روُحیں  خالی  کی  خالی  ہی  رہتی  ہیں  ۔  بُہت  سے  اور   لوگ  زِندگی  کے  حقائق  سے  چھُپنے  کے  لِیۓ  شراب  اور   منشیِات کا  سہارا  لیتے  ہیں ۔  لیکِن  وُہ  بھی  جِس  سکُون  کی  تلاش   میں  ہیں  وُہ  اُنہیں  مِلتا  نہیں  ۔  وُہ  پھِر  بھی  خُود  میں  خالی  خالی  اور  تنہائی  کا  شِکار  بنے  طرح  طرح  کی  مُصیِبتوں میں  گھِرے  رہتے  ہیں ۔  

  ٓاِنسان  افراتفری میں  

جب  خُدا  نے   اِنسان  کو  خلق   کِیا  تو  اُسے  کامِل  سکوُن  ،  مُسرت  اور  خوُشی  سے  لُطف  اندوز  ہونے  کے  لِۓ  ایک  خوُبصوُرت  باغ  میں  رکھا  ۔  لیکِن  جب   آدم ؔ  اور  حوّاؔ  نے  گُنا ہ  کر  لِیا  تو  وُہ  فوراً   احساسِ  جُرم  میں  مُبتلا  ہو 

  ہو  گئے  ۔  جہاں  پہلے  وُہ  خُدا  کی  حضُوری   کے  مُنتظر رہتے  تھے  ،  اَب  اُنہوں  نے  خُود  کو  شرم  سے  چِھپا  لِیا  ۔  وُہ  جِس  سکوُن  اور  خُوشی  سے  پہلے  سرشار  تھے  ،  اَب  اُس  کی  جگہ  احساسِ  جُرم  اور  خوف نے لے  لی ۔  اِنسان  کا  گُناہ  ہی  افراتفری  سے  بھری  ہُوئی  دُنیا  اور  اِنتشا ر  زدہ   ذہن  کا  آغاز  تھا  ۔

بے  شک  ہماری  رُوح  خُدا  کے  لِۓ  ترستی  ہے  لیکِن  ہماری  گُنہگار  فِطرت   اُس  کی  راہوں  سے  بغاوّت  کر  دیتی  ہے  ۔  یہ  باطنی کشمکش  ہمارے  اندر  تناؤ  اور  ابتری  پیدا  کر  دیتی  ہے  ۔ جب  ہم  آدمؔ  اور  حوّاؔ  کی  طرح  اپنی  خواہشات  اور   اپنے  اِرادوں  میں  خُود  مرکزئیت  کا  شِکار   ہو  جاتے  ہیں  تو  ہم  بے  چینی   اور  خوف  میں  مُبتلا  ہو  جاتے  ہیں  ۔  جِتنی  زِیادہ  ہم  اپنے  آپ  پر  توجہ  دیتے  ہیں  ،  اُتنا  ہی  زیادہ  ہم  پریشان  ہوتے  چلے  جاتے   ہیں  ۔  زِندگی  کی  غیر  یقِینیاں  اور  مسلسل  بدلتی   ہُوئی  یہ   گلتی  سڑھتی  دُنیا  ہمارے  احساسِ  تحفُظ  کو  ہِلا  دیتی  ہیں  اور  ہمارے   سکوُن کو  تہ  و  بالا  کر  دیتی  ہے  ۔ 

یسوُعؔ  مسِیح ،  امن  و  اِطمِینان  کا  شہزادہ 

جب  تک  زِندگی  کے  تمام  پہلُو  اُس  ذات  اقدس  کے  ساتھ  مطابقت  میں  نہیں  لاۓ  جاتے  جِس نے  ہمیں  بنایا  ہے  ،  اور  جو  ہمیں  سمجھتا ہے  ،   ہمیں  کوئی  سکُون  نہیں  حاصِل  ہو  سکتا  ۔  کِیونکہ  ایسا   صِرف  مسِیح  کو  مکمل  طور  پر  سپُردگی  سے  ہی  مُمکِن  ہے  ۔  دہ  نہ  صِرف  دُنیا  کا  مالِک  ہے  بلکہ  وُہ  ہماری  زِندگی  کو  شُروع  سے  لے  کر  آخِر   تک  جانتا  بھی  ہے  ۔    وُہ  اِس  دُنیا  میں  آیا  تاکہ  اُنکو  جو  اندھیرے  اور  موت  کے  سایہ  میں  بیٹھے  ہیں     اُنہیں  روشنی  بخشے  اور  ہمارے  قدموں  کو  سلامتی  کی  راہ  پر  ڈالے  (  لوُقا  ۱   باب  کی  ۷۹   آئت  )  کے  مُطابِق  جب  وُہ  دُنیا  میں  آیا  تو   وُہ  ہمارے  مُتعلق  ہی  سوچ رہا  تھا  ۔ 

یسُوعؔ  تاریکی  کے  بدلے   نُور   ،  جنگ  و  جدل  کی  جگہ  امن  ، غم  کی  جگہ  خوُشی  ،  نا اُمیدی  کی  جگہ  اُمِید  اور  موت  کی  جگہ  زِندگی  بخشتا  ہے  ۔  یوحنا  ۱۴      ۲۷   میں  وہ  فرماتا   ہے    ’’  مَیں  تُمہیں  اِطمینان  دِیے  جاتا  ہُوں  ،  جِس  طرح   دُنیا  دیتی  ہے  ،  مَیں   تُمہیں  اُس  طرح  نہیں  دیتا  ۔  تُہارا  دِل  نہ   گھبراۓ اور  نہ   ڈرے  ۔  

توبہ  ذہنی  سکُون  دِلاتی  ہے  ۔

جب  آپ  خُود  کو  گُناہ  کے  بھاری  بوجھ  تلے  دبا  محسُوس  کرتے  ہیں  تو  اِس  کا  عِلاج  یہ  ہے  ۔  ’’  پَس  توبہ  کرو  اور  رجُوع   لاؤ   تاکہ  تُمہارے  گُناہ  مِٹاے ٔ  جائیں 

 (  اعمال  ۳      ۱۹  )    یسُوعؔ  آپ  کو  یہ  معنی  خیز  اور  زِندگی  بدل  دینے   والا  تجربہ   حاصِل  کرنے  کی  دعوت  دیتا  ہے  ۔  وُہ  فرماتا   ہے     ’’  اے  محنت  اُٹھانے  والو   اور  بوجھ  سے  دبے  ہُوۓ  لوگو  ،  سب  میرے  پاس   آؤ  ، 

مَیں  تُم  کو  آرام  دُوں  گا  ۔  (  متی ؔ  کی  اِ نجیل  اا   باب  ۲۸    آئت  )  نیِز  پہلا  یُوحنا ؔ  ۱   باب  ۹   آئت  میں  اُس  نے  وعدہ  کِیا  ہے    ’’  اگر  ہم  اپنے  گُناہوں  کا  اِقرار  کریں  تو  وُہ  ہمارے  گُناہوں  کو  مُعاف  کرنے   اور ہمیں  ہماری  ساری  ناراستی  سے  پاک  کرنے  میں  سچّا  اور  عادِل  ہے  ۔ ‘‘  کیا  آپ  اِس  دعوت  کو  قبُول  کرنے  کے  لیۓ  تیار  ہیں  ؟ 

جب  آپ  یسُوعؔ  کے  پاس  آئیں  گے  تو  اپنے  گُناہوں  کی  مُعافی  اور  حقیقی  آزادی  پائیں  گے  ۔  نفرت  اور   بُغض  کی  بجاۓ   آپ  کا  دِل  مُحبّت  سے  بھر  جاۓ  گا  ۔  جب  یسُوع ؔ  آپ  کے  دِل  میں  ہو  گا  آپ  اپنے  دُشمنوں  سے  بھی  پیار  کرنے  لگیں  گے  ۔  یہ  سب  مسِیح ؔ کے  نجات بخش  خُون  کی  بدولت  ہی  مُمکِن  ہے  ۔ 

دائمی  سکوُن 

 مسیحی  ہوتے  ہُوے ٔ  خُدا  پر  اِیمان  اور  اُس  کے  تحفُظ  پر  بھروسہ  ہی  خوف  اور  پریشانی  کا  مؤثر  تریاق  ہے  ۔  خُدا  پر  بھروسہ  رکھنا  ، جو  ازل  تا   ابد  لا تبدل  ہے  ،  کِس  قدر  اِطمینان  بخش  ہے  ۔  وُہ  ہم  سے  مُحّبت  رکھتا  ہے  اور  ہماری  حفاظت  و  نِگہبانی  کرتا   ہے  ۔  تو  پھِر  ہم  کیوں  ڈریں  یا  گھبرائیں  ؟  کیوُں  نہ  ہم  ویسا  کرنا  سیکھیں  جیسا  کہ  ہم  ۱   پطرس  ۵      ۷    میں  پڑھتے  ہیں      ’’  اور  اپنی  ساری  فِکر  اُسی  پر  ڈال  دو  کیونکہ  اُس  کو  تُمہاری  فِکر  ہے  ‘‘  ہمارے  پاس  یہ  خُوبصُورت  وعدہ  بھی  ہے   

’’  جِس  کا  دِ ل  کا قائم  ہے  تُو  اُسے  سلامت  رکھے  گا  ،  کِیوُنکہ  اُس  کا  توّکل  تُجھ  پر  ہے  ۔   یُسعیا ہؔ  ۲۶      ۳ 

آپکے  دِل  میں  یسُوع ؔ  کی  موجُودگی  نے  آپکی  سکُون  کی  تلاش  ختم  کر  دی  ہے  ۔  وُہ  آپکو  ایسا  سکُون   بخشے  گا  جو  آپکو  صِرف  اُس  پر  بھروسہ 

کرنے  سے  ہی  مِل  سکتا  ہے  ۔  اِس  شخصی  تجربہ  کے  بعد   آپ  بھی  کہہ  سکیں  گے    مَیں  نے  ایسا  سکوُن  پا  لیِا  ہے  جیسا  مُجھے  پہلے  کبھی  حاصِل  نہ  تھا  ۔  اب میں  ایک  ایسے  مقام  پر  ہُوں  جہاں  چاہے  آندھِیا ں  چلیں  یا  طُوفان  آئیں   ،  مُجھے  کُچھ  فرق  نہیں  پڑنے  کا  کیونکہ  اب  مَیں  ہمیشہ  اپنے  مالِک  کے  ساتھ  کامِل  اِطمینان  میں  رہتا  ہُوں  ۔ 

افراتفری  سے  بھری  اِس  دُنیا   میں  آپ  کو  ذہنی  سکُون  مُیّسر  ہو  جاۓ  گا   ۔  اپنے  دِل  کا   دروازہ  مسیح ؔ  کے  لِۓ  کھول  دیں  ۔  ابھی  اور  اِسی  وقت  !   اور  وُہ  ایک  دِن  آپ  کے  لِۓ  آسمان  کے  دروازے  کھول  دے  گا  ،   جہاں  کامِل  سکُون  کی  دائمی  حُکمرانی  ہو  گی  ۔   خُدا  آپکو  برکت  دے  ۔ آمِین